اردو | हिन्दी | English
341 Views
Sports

آج واپسی کیلئے اتریںگے گجرات کے لائنس

IPL-2016-Live-Gujarat-LionsGL-Vs-Sunrisers-HyderabadSRH-Score-Card-–-Toss-TV-Highlights-Info
Written by Tariq Hasan

حیدرآباد، 8 اپریل (یو این آئی) انڈین پریمیئر لیگ میں اپنا پہلا ہی مقابلہ یک طرفہ انداز میں 10 وکٹ سے گنوانے کے بعد گجرات لائنس کافی دبا¶ میں آ چکی ہے اور اتوار کو اپنے اگلے میچ میں میزبان اور گزشتہ چمپئن سنرائزرس حیدرآباد کے خلاف واپسی کی کوشش کرے گی۔ آئی پی ایل میں اپنا دوسرا ایڈیشن کھیل رہی سریش رینا کی کپتانی والی گجرات کو کولکاتا نائٹ رائڈرس کے ہاتھوں اپنے ہی گھریلو میدان راجکوٹ میں 10 وکٹ سے شکست جھیلنی پڑی تھی۔ اس شکست سے یقیناً اس کا حوصلہ کافی کمزور ہوا ہے جبکہ اس کے سامنے اب اگلا چیلنج گزشتہ چمپئن حیدرآباد کا ہے جس نے رائل چیلنجرز بنگلور سے لیگ کے 10 ویں ایڈیشن کا افتتاحی میچ 35 رن سے جیتا تھا۔ڈیوڈ وارنر کی کپتانی والی حیدرآباد کی ٹیم یہ میچ بھی اپنے گھریلو اپّل اسٹیڈیم میں کھیلنے اترے گی اور بے پناہ حمایت کے ساتھ اس کی پوری کوشش لے کو برقرار رکھنے کی ہو گی۔ فی الحال حیدرآباد ہر لحاظ سے گجرات کے لائنس کو پانی پلانے کی صورت میں دکھائی دے رہی ہے ۔ٹیم میں آسٹریلیا کے جارح بلے باز وارنر کے علاوہ بلے بازی آرڈر میں ٹیم انڈیا کے اوپنر شکھر دھون اور کمال کی فارم میں کھیل رہے آل را¶نڈر یوراج سنگھ اور موئسس ھینرکس جیسے کھلاڑی موجود ہیں۔ اس فارمیٹ میں کمال کے کھلاڑی یوراج اپنی بہترین فارم میں دکھائی دے رہے ہیں اور بنگلور کے خلاف انہوں نے محض 27 گیندوں میں 62 رن کی طوفانی اننگز کھیلی تھی جو آئی پی ایل میں ان کی سب سے تیز نصف سنچری بھی رہی۔حیدرآباد کو نفسیاتی طور پر بھی گجرات کے خلاف اس میچ میں فائدہ مل سکتا ہے ۔ میزبان ٹیم نے گزشتہ میچ میں 200 سے زیادہ کا اسکور بنایا تھا تو اس کے گیند بازوں نے بھی اپنی بہترین کارکردگی سے اس اسکور کا دفاع کیا اور مخالف ٹیم کے بلے بازوں کو بڑے اسکور سے روکے رکھا۔گزشتہ چمپئن ٹیم کے پاس تجربہ کار فاسٹ بولر اشیش نہرا، نوجوان تیز گیند باز بھونیشور کمار ہیں تو پہلی بار آئی پی ایل میں کھیل رہے افغانستان کے اسپنر راشد خان بھی ہیں۔
گزشتہ میچ میں تینوں ہی گیند بازوں نے دو دو وکٹ حاصل کئے تھے ۔ 37 سالہ نہرا جیسے کھلاڑی کی موجودگی ٹیم کی نہ صرف گیند بازی کے شعبے کو مضبوطی فراہم کرتی ہے بلکہ وہ ٹیم میں اب ایک مینٹر کی طرح بھی ہیں جو باقی کھلاڑیوں کی رہنمائی کرتے ہیں۔وہیں دوسری طرف کے کے آر کے خلاف گجرات نے جس طرح 183 رن کا مشکل اسکور بنانے کے بعد بھی میچ گنوا دیا اس سے ظاہر ہے کہ اس کا گیند بازی کا شعبہ کتنا کمزور ہے ۔ کولکاتا کے خلاف گجرات کے تمام گیند کوئی خاص کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کرسکے اور وہ کافی مہنگے ثابت ہوئے ۔ میڈیم فاسٹ بولر دھوول کلکرنی نے محض 2.5 اوور میں 42 رنز لٹا دیئے تو شیویل کوشک نے 40 رن دیئے ۔ وہیں تجربہ کار کیریبیائی کھلاڑی ڈیون اسمتھ ایک اوور میں 23 رن لٹا بیٹھے اور کے کے آر نے 14.5 اوور میں ہی بغیر کسی بھی وکٹ کو گنوائے میچ جیت لیا۔ گجرات کے لئے اپنی پچھلی غلطیوں میں اصلاح کرنے کی کافی ضرورت ہے جس میں اس کے گیند بازوں کے لیے بنیادی طور پر کھیل کی سطح کو بہتر بنانا ہوگا۔ اگرچہ ٹیم کا بلے بازی آرڈر بہت اچھا ہے جس میں آئی پی ایل کے سب سے لگاتار کھیلنے والے کامیاب کھلاڑی اور کپتان رینا نے ایک بار پھر اپنی اہمیت ثابت کی اور ناٹ آ¶ٹ 68 رن بنائے ۔لیکن ہندوستانی ٹیم سے باہر چل رہے رینا کو اپنی قیادت کی صلاحیت کو ثابت کرنا ہوگا۔ ان کے علاوہ برینڈن میک کولم اور گھریلو کرکٹ میں بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے وکٹ کیپر دنیش کارتک، آرون فنچ، ڈیون اسمتھ جیسے زبردست بلے باز اس کے لیے میچ فاتح ثابت ہو سکتے ہیں۔

About the author

Tariq Hasan