اردو | हिन्दी | English
444 Views
Sports

اشون کے وکٹوں کا ’چھکا‘، ہندستان کی سیریز میں برابری

India's Ravichandran Ashwin, center without cap facing camera, celebrates with teammates the dismissal of Australia's Peter Handscomb during the fourth day of their second test cricket match in Bangalore, India, Tuesday, March 7, 2017. (AP Photo/Aijaz Rahi)
Written by Tariq Hasan

بنگلور، 7 مارچ (یو این آئی) آف اسپنر روی چندرن اشون (41 رن پر چھ وکٹ) کی قاتلانہ گیند بازی کی بدولت ہندوستان نے نشیب و فراز سے پر دوسرے کرکٹ ٹیسٹ کے چوتھے ہی دن منگل کو آسٹریلوی ٹیم کی دوسری اننگز کو جلد سمیٹتے ہوئے 75 رنز سے میچ اپنے نام کر لیا اور سیریز میں 1۔1 کی برابری حاصل کر لی۔ہندستان نے آسٹریلیا کو جیت کیلئے 188 رنز کا ہدف دیا تھا جس کے جواب میں مہمان ٹیم 35.4 اوور میں 112 رنز پر ہی ڈھیر ہو گئی۔اشون نے کمال کی گیند بازی کرکے آسٹریلوی بلے بازوں کو سستے میں نمٹایا اور 12.4 اوور میں 41 رن پر سب سے زیادہ چھ وکٹ نکال کر مہمان ٹیم کو چائے کے وقفہ کے کچھ دیر بعد ہی آ¶ٹ کر دیا۔ہندستان کی آسٹریلیا کے خلاف اپنے ٹیسٹ تاریخ کی یہ 25 ویں فتح ہے ۔اشون کے علاوہ فاسٹ بولر امیش یادو نے 30 رن پر دو وکٹ، ایشانت شرما نے 28 رن پر ایک وکٹ اور رویندر جڈیجہ نے تین رن پر ایک وکٹ نکالا۔یہ 25 واں موقع ہے جب اشون نے اننگز میں پانچ وکٹ کی کامیابی اپنے نام کی ہے ۔آف اسپنر نے پہلی اننگز میں دو وکٹ نکالے تھے اور میچ میں کل آٹھ وکٹ گراکر سب سے زیادہ کامیاب کھلاڑی ثابت ہوئے ۔ہندوستان نے چتیشور پجارا (92) اور اجنکیا رہانے (52) کی قیمتی نصف سنچریوں سے دوسری اننگز میں 97.1 اوورز میں 274 رنز بنائے جس کی بدولت ہی ہندستان آسٹریلیا کے سامنے 188 رنز کا ہدف رکھ سکا۔ہندستان کی اننگز لنچ تک ختم ہوئی تھی لیکن اس کے بعد ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے آسٹریلوی اننگز ڈیڑھ سیشن کے اندر 35.4 اوور میں 112 رن پر سمٹ گئی۔آسٹریلیا نے چائے کے وقفہ کے بعد محض 11 رن کے وقفے میں اپنے باقی چار وکٹ گنوا دیے ۔ٹیم انڈیا نے اس کے ساتھ ہی چار میچوں کی سیریز میں 1۔1 کی برابری کی اور ناقدین کے منہ بھی بند کر دیے ۔ہندستان نے پنے میں پہلا ٹیسٹ تین دن میں گنوایا تھا اور یہاں اس نے دوسرا ٹیسٹ چار دن کے اندر اندر نمٹا دیا۔تعریف کرنی ہوگی اشون کی جنہوں نے اپنی فارم حاصل کرتے ہوئے چھ وکٹ لے کر کنگار¶وں کو دبوچا۔اشون نے اپنے چھ وکٹ کے کارناموں کے ساتھ سابق تجربہ کار لیفٹ آرم اسپنر بشن سنگھ بیدی کو پیچھے چھوڑ دیا اور ہندستانی ٹیسٹ تاریخ میں پانچویں سب سے زیادہ کامیاب بولر بن گئے ۔ بیدی کے 266 وکٹ تھے جبکہ اشون کے 269 وکٹ ہو گئے ہیں۔میچ کا چوتھا دن ہر لحاظ سے سنسنی خیز رہا جس میں ڈ¸ آرایس کو لے کر خاصا تنازعہ ہوا اور آسٹریلیا کے کپتان اسٹیون اسمتھ ڈ¸ آرایس لینے کے چکر میں اپنے ڈریسنگ روم کی طرف اشارہ کرنے کو لے کر تنازعہ میں آ گئے ۔اسمتھ تیز گیند باز امیش یادو کی گیند پر ایل بی ڈبلیو قرار دیے گئے تھے لیکن وہ اپنے ڈریسنگ روم کی طرف دیکھنے لگے جس کے بعد امپائر نے آ کر انہیں روکا اور پویلین کی طرف جانے کا اشارہ کر دیا۔یہ سراسر قوانین کے خلاف تھا۔اسمتھ نے 28 رنز بنائے اور وہ چوتھے بلے باز کے طور پر 74 کے اسکور پر آ¶ٹ ہوئے ۔اسمتھ کا آ¶ٹ ہونا تھا کہ آسٹریلوی اننگز کے خاتمہ ہونے میں زیادہ وقت نہیں لگا۔آسٹریلوی ٹیم دو وکٹ پر 67 کے اسکور پر 112 رنز پر ڈھیر ہو گئی۔آسٹریلیا نے اپنے آخری آٹھ وکٹ 49 رن جوڑ کر گنوائے ۔اشون نے ڈیوڈ وارنر (17)، پیٹر ھیڈاسکمب (24)، مشیل مارش (13)، میتھیو ویڈ (صفر)، مشیل اسٹارک (ایک) اور ناتھن لیون (دو) کو آ¶ٹ کیا۔امیش نے اسمتھ (28) اور شان مارش (نو) کے وکٹ لئے ۔ایشانت شرما نے اوپنر میٹ رینشا (پانچ) کو آ¶ٹ کیا جبکہ لیفٹ آرم اسپنر رویندر جڈیجہ نے سٹیو او کیفے (دو) کا وکٹ لیا۔ہندوستان نے لنچ کے بعد کھیلنے اتری آسٹریلوی ٹیم کو ایک کے بعد ایک جھٹکے دیتے ہوئے چائے کے وقفہ تک اس کے چھ وکٹ 101 رن پر نکال دیے ۔آسٹریلوی اننگز کی اچھی شروعات نہیں ہوئی اور وارنر اور رینشا اوپننگ وکٹ کے لئے 22 رن ہی جوڑ سکے ۔وارنر نے 25 گیندوں میں ایک چھکا لگا کر 17 رنز جوڑے جبکہ رینشا پانچ رنز ہی بنا سکے ۔ایشانت نے رینشا کو ردھمان ساہا کے ہاتھوں کیچ کراکر ہندستان کو پہلی کامیابی دلائی۔اس کے بعد وارنر کو اشون نے ایل بی ڈبلیو کر کے ہندستان کی راہ کا سب سے بڑا کانٹا دور کر دیا۔ کپتان اسمتھ میدان پر اترنے کے ساتھ ہی دبا¶ میں نظر آئے ۔انہوں نے وکٹ پر کچھ وقت ضرور گزارا لیکن ہندوستانیوں کے ساتھ ان کی تکرار بنی رہی۔امیش نے شان مارش کو ایل بی ڈبلیو کیا۔بائیں ہاتھ کے بلے باز شان نے کوئی اسٹروک نہیں کھیلا لیکن تیزی سے اندر آتے ہوئے ان کے پیڈ سے جا ٹکرائی۔شان نے اسمتھ کے ساتھ کچھ تبادلہ خیال کیا اور کپتان نے انہیں جیسے ڈ¸ آرایس نہیں لینے کا مشورہ دیا۔شان پویلین واپس چل دیے ۔اس کے کچھ دیر بعد ہی یادو کی نیچی رہتی گیند اسٹمپ کے ٹھیک سامنے اسمتھ کے پیڈ سے ٹکرائی۔امپائر نے اپیل پر انگلی اٹھا دی لیکن اسمتھ ڈ¸ آرایس لینے کے چکر میں اپنے ڈریسنگ روم کی طرف دیکھنے لگے ۔تبھی پجارا تیزی سے آگے آکرا سمتھ کے سامنے کھڑے ہو گئے ۔امپائر نے بھی اسمتھ کو ایسا کرنے سے روکا۔کمنٹیٹرز نے اسمتھ کے اس رویہ کی سخت تنقید کی۔اسمتھ 48 گیندوں میں تین چوکوں کی مدد سے 28 رنز بنا کر پویلین واپس چل دیے ۔ ہندستان کو سب سے بڑی کامیابی مل گئی۔اشون نے مشیل مارش کو کرو ن نائر کے ہاتھوں کیچ کراکر 101 کے اسکور پر آسٹریلیا کا پانچواں وکٹ گرا دیا۔مشیل 16 گیندوں میں تین چوکے لگا کر 13 رنز ہی بنا سکے ۔آسٹریلیا اس سے قبل سنبھلتا کہ اشون نے مخالف ٹیم کے اسی اسکور پر ویڈ کو کھاتہ کھولنے بھی نہیں دیا اور ساہا کے ہاتھوں کیچ کراکر ہندستان کو چھٹا وکٹ دلا دیا۔چائے کے وقفہ کے بعد تو اشون جیسے قہر بن کر آسٹریلیا پر ٹوٹ پڑے ۔اشون نے مشیل اسٹارک کو بولڈ کیا، او کیفے کو جڈیجہ نے بولڈ کر دیا، اشون نے ھیڈاسکمب کو ساہا کے ہاتھوں کیچ کرایا اور پھر لیون کو اپنی ہی گیند پر کیچ کر آسٹریلوی اننگز سمیٹ دی۔بنگلور کے ایم چنا سوامی اسٹیڈیم کی مشکل پچ پر دونوں اننگز میں 90 اور 51 رنز کی قیمتی اننگز کھیلنے والے اوپنر لوکیش راہل کو مین آف دی میچ کا ایوارڈ دیا گیا۔میچ کے بعد کپتان وراٹ نے کہا کہ ہم واپسی کرنا چاہتے تھے ۔ہم کسی اور کو نہیں بلکہ خود کو دکھانا چاہتے تھے کہ ہم کس مٹی کے بنے ہیں۔
اس جیت نے ہمارے اندر اعتماد کو دکھایا کہ ہم کسی بھی صورت میں جیت سکتے ہیں۔اس سے پہلے پجارا اور رہانے کی نامساعد حالات میں نصف سنچری اننگز سے ہندوستان نے دوسری اننگز میں 97.1 اوور میں 274 رنز بنائے ۔ہندستان نے چار وکٹ پر 213 رن سے آگے کھیلنا شروع کیا اور 61 رنز جوڑ کر اس باقی چھ بلے باز پویلین لوٹ گئے ۔ناٹ آ¶ٹ بلے بازوں پجارا نے 79 اور اجنکیا رہانے نے 40 رنز سے اپنی اننگز کو آگے بڑھایا اور دونوں نے پانچویں وکٹ کے لئے 46.2 اوور میں 118 رنز کی بہترین سنچری شراکت قائم کی۔لیکن اسٹارک نے رہانے کو ایل بی ڈبلیو کر اس شراکت کو توڑ دن کا پہلا وکٹ آسٹریلیا کو دلایا۔28 سالہ رہانے ہندستان کے 238 کے اسکور پر پانچویں بلے باز کے طور پر آ¶ٹ ہوئے ۔انہوں نے اپنی 11 ویں ٹیسٹ نصف سنچری بنا ئی۔ رہانے نے 134 گیندوں میں چار چوکے لگا کر 52 رنز بنائے ۔کرو ن نائر دوسری اننگز کے موقع کو بھنا نہیں سکے اور کھاتہ کھولے بغیر پویلین لوٹ گئے ۔نائر کو بھی ا سٹارک نے بولڈ کیا اور رہانے کے بعد اپنی اگلی ہی گیند پر ہندستان کا چھٹا وکٹ نکالا۔ساہا نے اگرچہ اسٹارک کو ہیٹ ٹرک لینے کا موقع نہیں دیا۔اس دبا¶ کے سامنے پجارا بھی زیادہ دیر پھر ٹک نہیں سکے اور اپنی سنچری سے آٹھ رنز فاصلے پر ہی وہ تیز گیند باز ہیزل وڈ کا شکار بن گئے ۔ہیزل وڈ نے پجارا کو گلی میں مشیل مارش کے ہاتھوں 92 کے اسکور پر کیچ کرا دیا۔پجارا نے 221 گیندوں کی اننگز میں سات چوکے لگائے ۔ہندستانی اننگز میں پجارا کے طور پر اپنا چوتھا وکٹ لینے والے ہیزل وڈ یہیں نہیں رکے اور انہوں نے پھر اشون کو اپنے اسی 85 ویں اوور میں چار رنز پر بولڈ کر اننگز میں پانچواں وکٹ حاصل کیا۔امیش وارنر کے ہاتھوں کیچ ہوگئے ۔ہیزل وڈ نے اسی کے ساتھ اپنا چھٹا وکٹ بھی مکمل کر لیا جو ان کی ٹیسٹ میں کیریئر کی بہترین کارکردگی بھی ہے ۔ایشانت شرما نے 28 گیندوں میں ایک چوکا لگا کر چھ رن بنائے اور او کیفے نے انہیں شان مارش کے ہاتھوں کیچ کرا کر ہندستانی اننگز کو سمیٹ دیا۔ساہا 37 گیندوں میں دو چوکے اور ایک چھکا لگا کر 20 رنز کے ساتھ ناٹ آ¶ٹ پویلین لوٹے ۔آسٹریلیا کی جانب سے ہیزل وڈ نے کیریئر کی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے 67 رنز پر چھ وکٹ،ا سٹارک نے 74 رن پر دو وکٹ اور او کیفے نے 36 رن پر دو وکٹ نکالے ۔

About the author

Tariq Hasan