اردو | हिन्दी | English
195 Views
Politics

ای وی ایم گڑبڑی معاملے سے توجہ ہٹانے کا بہانہ : سسودیا

01fir07-2_660_090115075857
Written by Tariq Hasan

نئی دہلی، 4 اپریل (یو این آئی) دہلی کے نائب وزیر اعلی منیش سسودیا نے وزیر اعلی اروند کیجریوال کے خلاف وزیر خزانہ ارون جیٹلی کے مجرمانہ ہتک عزت کیس میں سپریم کورٹ کے وکیل رام جیٹھ ملانی کو فیس کی رقم ادا کرنے کے حکومت کے فیصلے کا دفاع کرتے ہوئے، اس مسئلے پر بی جے پی کی بیان بازی کو الیکٹرانک ووٹنگ مشین (ای وی ایم) میں گڑبڑی معاملے سے توجہ بٹانے کی کوشش قرار دیا۔مسٹر سسودیا نے آج متھرا روڈ پر واقع اپنی سرکاری رہائش گاہ پر عوام کی گاڑھی کمائی سے ذاتی مقدمہ پر موٹی رقم خرچ کرنے کے الزامات صفائی دیتے ہوئے کہا کہ یہ معاملہ بدعنوانی سے متعلق ہے اور بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی ) ای وی ایم گڑبڑی کے معاملے سے عوام کی توجہ ہٹانے کے لیے یہ مسئلہ اچھال رہی ہے۔ دہلی کے تینوں کارپوریشنوں کے لئے 23 اپریل کو ہونے والے انتخابات سے پہلے اس مسئلہ کو انتخابی مہم میں سیاسی پارٹیاں مسٹر کیجریوال کی حکومت کے خلاف بھی اپنا سکتی ہیں۔ مرکزی وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے دہلی کرکٹ اور ڈسٹرکٹ ایسوسی ایشن( ڈی ڈی سی اے) میں مالیاتی گھوٹالے سے متعلق الزامات پر مسٹر کیجریوال کے خلاف 10 کروڑ روپے کیمجرمانہ ہتک عزت کا مقدمہ دائر کیا ہے۔ یہ ان کی طرف سے مقدمہ مشہور وکیل رام جیٹھ ملانی لڑ رہے ہیں اور ان کی تقریبا ساڑھے تین کروڑ روپے کی فیس کی ادائیگی کا معاملہ سرخیوں میں ہے۔مسٹر سسودیا نے کہا کہ “یہ معاملہ کرکٹ کے کھیل میں بدعنوانی سے منسلک ہے۔ حکومت نے اس کے لیے انکوائری کمیٹی بٹھائی ہے جس میں متعدد بڑے لوگ پھنسے ہوئے ہیں۔ ان لوگوں نے بعد میں مقدمہ بھی کیا ہے۔ حکومت نے انکوائری کمیشن بٹھایا، اس لئے وزیر اعلی کے خلاف مقدمے پر جو خرچ آئے گا، اس کی ادائیگی حکومت کرے گی کیونکہ یہ مقدمہ مسٹر کیجریوال کا کوئی ذاتی معاملہ نہیں ہے”۔نائب وزیر اعلی نے میڈیا میں آنے والے الزامات کے وقت پر سوال کھڑا کرتے ہوئے کہا کہ یہ مقدمہ گزشتہ ڈیڑھ سال سے مسٹر جیٹھ ملانی لڑ رہے ہیں لیکن جب ای وی ایم مشینوں میں خرابی کا معاملہ سامنے آیا ہے، تو مرکز? حکومت کے پاس اس کا جواب نہیں ہے۔ اس لئے لوگوں کی توجہ ہٹانے کے لیے سب کچھ کیا جا رہا ہے۔مسٹر جیٹھ ملانی نے فیس کا معاملہ سامنے آنے پر کہا کہ اگر دہلی حکومت مقدمہ لڑنے کے لئے ان کی فیس ادا نہیں کرتی ہے تب بھی وہ مسٹر کیجریوال کا مقدمہ مفت میں لڑنے کے لئے تیار ہیں۔حکومت نے مسٹر جیٹھ ملانی کی فیس کی ادائیگی کا معاملہ لیفٹیننٹ گورنر انل بیجل کو منظوری کے لئے بھیجا۔ جس پر لیفٹیننٹ گورنر نے ایڈوکیٹ جنرل سے قانونی مشورہ طلب کیا ہے۔

About the author

Tariq Hasan