اردو | हिन्दी | English
148 Views
Politics

جی ایس ٹی بل کی بہار قانون سازیہ سے توثیق

nitish kumar
Written by Tariq Hasan

بہار جی ایس ٹی کو منظوری دینے والی پہلی غیر بی جے پی ریاست،ارون جیٹلی نے دی نتیش کو مبارکباد
پٹنہ، 16 اگست (یو این آئی) بہار پہلی غیر بی جے پی حکومت والی ریاست بن گئی جس نے اشیا اور خدمات ٹیکس (جی ایس ٹی) کو منظوری دے دی ہے ۔اسے منظور کرنے والی یہ آسام کے بعد دوسری ریاست ہے ۔جی ایس ٹی بل کی جب ریاستی قانون سازیہ کے ایوان زیریں نے توثیق کی تو سی پی آئی (ایم ایل) کے ممبر محبوب عالم نے واک آؤٹ کیا مگر ایوان بالا میں اسے اتفاق رائے سے منظور کیا گیا۔ بہار کمرشیل ٹیکس کے وزیر بجندر پرساد یادو نے دونوں ایوانوں میں بل پیش کیا۔ بہار کے وزیراعلی نتیش کمار نے بحث کا اختتام کرتے ہوئے اس کی حد طے کرنے کی مانگ پر ناراضگی ظاہر کی اور کہا کہ ان کی حکومت اس کے خلاف ہے اور اس نے اسی انداز میں اس کی توثیق کی ہے جس طرح پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں نے کی تھی۔جی ایس ٹی بل کو ملک میں ٹیکس کی سب سے بڑی اصلاح بتایا جارہا ہے ۔ صدر کی منظوری کے لئے بھیجنے سے قبل کم از کم 15 ریاستی اسمبلیوں کی توثیق ضروری ہے ۔دونوں ایوانوں سے جی ایس ٹی بل پاس ہونے کے بعد وزیراعلیٰ نتیش کمار نے نامہ نگاروں کے سوالوں کے جواب میں کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ جی ایس ٹی کے آنے سے ٹیکس نظام میں شفافیت آئے گی۔ ابھی مختلف قسم کے ٹیکس لگ رہے ہیں ان کی تعداد گھٹے گی اور ٹیکس کی شرح میں یکسانیت آئے گی۔ٹیکس کے نظام میں اصلاح سے ٹیکس کی وصولی میں بھی آسانی ہوگی۔انہوں نے کہا کہ نئے نظام سے بہار جیسی ریاستوں کے علاوہ ہر ریاست کو فائدہ ہوگا۔ اس کیلئے ابھی آگے بہت کچھ کیا جانا باقی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب جی ایس ٹی سے متعلق آئینی ترمیم نوٹی فائڈ ہوگا تو اس کے بعد بہت تیزی سے مرکزی حکومت کو پہل کرنی ہوگی۔ اس میں ریاستوں کے مفاد کو بھی دھیان میں رکھنا ہوگا اور جس طریقے سے نیا نظام آرہا ہے اس سے ایک طرح سے مشترکہ تجارت پورے ملک میں بڑھے گی۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت پہلے جو ٹیکس نہیں لیتی تھی وہ بھی لے پائے گی اور ریاست جو سروس ٹیکس نہیں لے پاتے تھے اب ریاست کو بھی اس کا اختیار مل جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ایسی صورت میں ٹیکس کی وصولی الگ الگ مقامات پر ایک ہی سسٹم سے اور ایک ہی انتظامیہ سے ہونا چاہئے۔ مرکزی وزیر مالیات ارون جیٹلی نے بہار میں جیٹلی بل پاس ہونے پر وزیر اعلیٰ کو فون پر مبارکباد پیش کی ہے۔ اس سلسلے میں نامہ نگاروں کے سوال کے جواب میں وزیر اعلیٰ نے کہا کہ مرکزی وزیر مالیات کا فون آیا تھا جب یہ اسمبلی سے پاس ہوا تھا ۔انہوں نے کہا کہ اب دونوں ایوان سے پاس ہوچکا ہے۔ کیونکہ ہم شروع سے ہی اس کی حمایت میں تھے۔

About the author

Tariq Hasan