اردو | हिन्दी | English
532 Views
Sports

دھونی اور ینگ ترک کی پہلی آزمائش آج

Mahendra-Singh-Dhoni
Written by Taasir Newspaper

ہرارے ، 10 جون (یو این آئی) ٹیم انڈیا کے تجربہ کار کپتان مہندر سنگھ دھونی اور اس دورے کے لیے ٹیم میں شامل نئے نوجوان چہروں کے لیے ہفتے کے روز سے زمبابوے کے خلاف شروع ہو رہی محدود اوورز کی کرکٹ سیریز ایک ٹیسٹ ہوگی جس میں ہر کھلاڑی خود کو ثابت کرنے کی کوشش کرے گا اور جیت کے ساتھ سیریز کا آغاز کرنا چاہے گا۔ہندستان اور زمبابوے کے درمیان پہلا بین الاقوامی ایک روزہ میچ ہفتہ کو ہرارے کرکٹ گراؤنڈ پر کھیلا جانا ہے جس کے لئے دونوں ہی ٹیمیں کمر کس چکی ہیں اور پوری طرح تیار نظر آ رہی ہیں۔اس دورے کے لیے ٹیم کے سینئر کھلاڑیوں وراٹ کوہلی، روہت شرما، شکھر دھون اور روی چندرن اشون کو آرام دیا گیا ہے اور ان کی جگہ غیر تجربہ کار کھلاڑیوں کو شامل کیا گیا ہے جس سے کپتان دھونی پر کچھ دباؤ ضرور ہو گا ۔زمبابوے کے اس دورے میں شامل صرف پانچ کھلاڑی ہی سال 2015 میں گزشتہ دورے میں ٹیم انڈیا کا حصہ رہے تھے ۔ہندستان نے تین میچوں کی اس ون ڈے سیریز میں 3۔0 سے جیت درج کی تھی۔دونوں ٹیموں کے درمیان دوسرا اور تیسرا ون ڈے 13 اور 15 جون کو اور تین ٹوئنٹی 20 میچ 18، 20 اور 22 جون کو ہرارے کرکٹ گراؤنڈ پر ہی کھیلے جائیں گے ۔کپتان دھونی پر اس لحاظ سے بھی خود کو ثابت کرنے کا موقع ملے گا کہ حال ہی میں آئی پی ایل 9 ٹوئنٹی 20 کرکٹ ٹورنامنٹ میں ان کی ٹیم رائزنگ پنے سپرجائنٹس کچھ کمال نہیں کرسکی تھی اور پلے آف تک پہنچنے میں بھی ناکام رہی تھی۔ٹورنامنٹ کے فائنل تک اپنی ٹیم رائل چیلنجرز بنگلور کوپہنچانے والے وراٹ کوہلی اس دورے میں ٹیم کے ساتھ نہیں ہیں۔ان کے علاوہ سپر اسٹار آف اسپنر روی چندرن اشون کو بھی آرام دیا گیا ہے ۔اس دورے میں سب سے تجربہ کار خود کپتان مہندر سنگھ دھونی ہیں جنہوں نے 275 ون ڈے اور 68 ٹوئنٹی 20 مقابلے کھیلے ہیں۔اس کے علاوہ ٹیم کے باقی ارکان نے کل 83 ون ڈے اور 28 ٹوئنٹی 20 میچ کھیلے ہیں۔ٹیم میں یجویندر چہل، فیض فضل، مندیپ سنگھ، کر ونانائر اور جینت یادو نے ایک بھی بین الاقوامی میچ نہیں کھیلا ہے ۔زمبابوے میں ہر کھلاڑی خود کو ثابت کرنے کی بھرپور کوشش کرے گا اور سو فیصد دینے کی کوشش میں لگے گا کیونکہ غیر تجربہ کار کھلاڑی اس دورے سے بین الاقوامی کرکٹ میں قدم رکھیں گے ۔اگر وہ شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرکے متاثر کرنے میں کامیاب ہوتے ہیں تو ان کے لئے آگے کا راستہ بھی آسان ہو جائے گا اور اس لئے ان پر خود کو ثابت کرنے کا بھی کچھ حد تک دباؤ ضرور رہے گا۔سال 2005 میں اپنے کیریئر کے ابتدائی مرحلے میں سوربھ گنگولی کی کپتانی میں ہرارے کے اسی میدان پر زمبابوے کے خلاف دھونی نے 56 رن اور ناٹ آؤٹ 67 رنز کی اننگز کھیلی تھی اور ثابت کر دیا تھا کہ وہ صلاحیت سے مالا مال ہیں۔دھونی نے 45 گیندوں میں دو چوکوں اور تابڑ توڑ چار چھکوں کی مدد سے 45 رنز جبکہ 63 گیندوں میں ایک چوکے اور تین چھکوں کے دم پر ناٹ آؤٹ 67 رنز بنائے تھے ۔دھونی اس کے بعد ہرارے میں کبھی نہیں کھیلے اور اس بار انہیں کپتان کے طور پر ذمہ داری دی گئی ہے ۔ہندستان کے سب سے زیادہ کامیاب کپتان 34 سالہ دھونی اس دورے پر ایک ریکارڈ اور درج کرسکتے ہیں۔دھونی کو نو ہزار رن پورے کرنے کے لئے 82 رنز کی ضرورت ہے ۔اگر وہ اس دورے میں 82 رنز بنا لیتے ہیں تو وہ ایسا کرنے والے پانچویں ہندستانی بلے باز بنیں گے ۔اس کے بعد چمپئنز ٹرافی قریب ایک سال کے بعد ہے اور یہ سیریز دونوں ممالک کے لیے اہم ہے ۔دوسری طرف زمبابوے کے کھلاڑیوں پر بھی خود کو ثابت کرنے کا کافی دباؤ ہوگا۔گھریلو ٹیم نے 18 کھلاڑیوں کو اس دورے کے لیے ٹیم میں جگہ دی ہے اور 12 کھلاڑی ایسے ہیں جو دونوں فارمیٹ میں ٹیم کا حصہ ہیں۔بین الاقوامی کرکٹ کے لحاظ سے ٹیم انتظامیہ نے اپنے کھلاڑیوں کو تیار کرنے کے مقصد سے بھی ایسا کیا ہوگا۔زمبابوے کے عبوری کپتان گریم کریمر اور کوچ مکھایا انتینی پر بھی کافی دباؤ ہوگا۔تاہم ہندستان کے سامنے اسے اپنا چیلنج پیش کرنے کے لیے کافی دم لگانا ہوگا۔میزبان زمبابوے نے اگرچہ سب سے بہتر کھلاڑیوں کو موقع دیا ہے اور اس سے خیال کیا جا رہا ہے کہ اس کی کوشش کسی بھی حال میں جیت درج کرنے کی ہوگی۔تاہم غیر تجربہ کار ہندستانی ٹیم کے سامنے اس کی مشکلیں آسان نہیں ہوں گی۔زمبابوے ایسی مکمل رکنی ٹیم ہے جو دنیائے ٹوئنٹی 20 کے سپر 10 کے لئے بھی کوالیفائی کرنے میں ناکام رہی تھی۔اس ون ڈے میں افغانستان سے نیچے مقام ملا جبکہ دونوں ممالک کے درمیان کھیلے گئے پانچ ٹوئنٹی 20 مقابلوں میں زمبابوے کو شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا اور اسی سے سمجھا جا رہا ہے کہ ہندستان کا پلڑا اس دورے میں بھاری رہے گا۔اس دورے کے لیے دونوں ممالک کی ٹیمیں یہ ہیں:ہندستانی ون ڈے اور ٹوئنٹی -20 ٹیم: ۔ مہندر سنگھ دھونی (کپتان)، لوکیش راہل، فیض فضل، منیش پانڈے ، کرونا نائر، امباٹي رائیڈو، رشی دھون، اکشر پٹیل، جینت یادو، دھول کلکرنی، جسپریت بمراھ، بریندر شرن ، مندیپ سنگھ، کیدار جادھو، جے دیو انادکٹ اور یجویندر چہل۔زمبابوے ون ڈے ٹیم: ۔ گریم کریمر (کپتان)، رچمنڈ متبمي (وکٹ کیپر)، توري مذربنی، چامو چبھابھا، پیٹر مور، ایلٹن چگمبرا، ووسي سباندا، توادا مپروا، سین ولیمز، سکندر رضا، نیولی مدجوا، ڈونالڈ ترپانو، تمسین مرما، ویلنگٹن مسکادزا، تیندي چسورو، ھیملٹن مسکادزا، تیندي چتارا اور کریگ ارون۔

About the author

Taasir Newspaper