اردو | हिन्दी | English
363 Views
Sports

سیریز جیت کے ساتھ ہی بھارت نمبر 1

team-india
Written by Tariq Hasan

کولکتہ، 03 اکتوبر (یو این آئی) آف اسپنر روی چندرن اشون، محمد سمیع اور رویندر جڈیجہ کے بااثر کارکردگی سے ہندوستان نے اپنا گھریلو 250 واں میچ جیت کرنیوزی لینڈ کے خلاف سیریز میں 2۔0 کی ناقابل تسخیر برتری حاصل کرلی اور اس کے ساتھ ہی وہ دنیا کی نمبر ایک ٹیسٹ ٹیم بن گیا۔ہندستان نے نیوزی لینڈ کے سامنے جیت کے لیے 376 رنز کا مشکل ہدف رکھا اور ایڈن گارڈن میں پیر کو چوتھے دن مہمان ٹیم کو 197 رنز پر نمٹا کر یہ ٹیسٹ 178 رنز کے بڑے فرق سے جیت لیا۔ہندوستان نے اس جیت کے ساتھ تین میچوں کی سیریز میں 2۔0 کی ناقابل تسخیر برتری حاصل کرلی۔کپتان وراٹ کوہلی کی قیادت میں نوجوان ہندوستانی ٹیم کی یہ مسلسل چوتھی سیریز جیت ہے ۔ اس کے ساتھ ہی ہندستان کی نیوزی لینڈ کے خلاف یہ مجموعی 11 ویں سیریز جیت ہے ۔وراٹ کی کپتانی میں ہندستان نے سری لنکا میں سیریز 2۔1 سے ، جنوبی افریقہ کے خلاف ہوم سیریز 3۔0 سے اور ویسٹ انڈیز میں سیریز 2۔0 سے جیت لی تھی۔آف اسپنر اشون نے 31 اوور میں 82 رن پر تین وکٹ، لیفٹ آرم اسپنر رویندر جڈیجہ نے 20 اوور میں 41 رن پر تین وکٹ، تیز گیند باز محمد سمیع نے 18.1 اوور میں 46 رن پر تین وکٹ اور بھونیشور کمار نے 12 اوور میں 28 رن پر ایک وکٹ لے کر نیوزی لینڈ کا چوتھے دن ہی بوریا بستر باندھ دیا۔ہندستان نے کانپور میں پہلا ٹیسٹ 197 رنز سے جیتا تھا اور کولکتہ میں دوسرا ٹیسٹ 178 رنز سے جیت لیا۔ہندستان نے کانپور کے گرین پارک میں اپنے ٹیسٹ تاریخ کا 500 واں ٹیسٹ اور کولکتہ کے ایڈن گارڈن میں اپنا گھریلو 250 واں میچ جیت لیا۔سمیع نے ٹرینٹ بولٹ کو آؤٹ کر جیت ہندستان کی جھولی میں اس وقت ڈال دی جب چوتھے دن کے اختتام میں 1.5 اوور باقی تھے ۔ ہندستانی کھلاڑیوں نے اس شاندار جیت اور ٹیسٹ رینکنگ میں نمبر ون بننے کا جشن ایک دوسرے کو مبارک باد دے کر منایا۔ڈریسنگ روم میں کوچ انل کمبلے نے بھی اسپورٹ اسٹاف کو مبارکباد دی۔کمبلے کے کوچ بننے کے بعد ہندستان چھ ٹسٹ میچوں میں چار میچ جیت چکا ہے ۔ہندستانی ٹیم نے ہر لحاظ سے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور نیوزی لینڈ کو پورے میچ میں واپسی کا کوئی موقع نہیں دیا۔ہندستان نے صبح اپنی اننگز آٹھ وکٹوں کے نقصان پر 227 رنز سے آگے بڑھائی اور اس کی دوسری اننگز 263 رنز پر ختم ہوئی۔وکٹ کیپر ردھمان ساہا پہلی اننگز کی طرح دوسری اننگز میں بھی ناٹ آؤٹ 58 رنز بنا کر پویلین لوٹے ۔انہوں نے پہلی اننگز میں ناٹ آؤٹ 54 رنز بنائے تھے ۔ساہا نے 120 گیندوں میں چھ چوکے لگائے ۔بھونیشور کمار نے 51 گیندوں میں دو چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 23 رنز بنائے ۔نیوزی لینڈ کی جانب سے ٹرینٹ بولٹ، میٹ ہنری اور مشیل سیٹنر نے تین تین وکٹ لئے ۔مشکل ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے نیوزی لینڈ نے اگرچہ اچھی شروعات کی اور ایک وقت اس کا اسکور ایک وکٹ پر 104 رنز تھا۔لیکن اس کے بعد اشون، سمیع اور جڈیجہ نے کیوی اننگز کو جھنجھوڑ دیا۔نیوزی لینڈ کی جانب سے اوپنر ٹام لاتھم نے 148 گیندوں پر آٹھ چوکوں کی مدد سے سب سے زیادہ 74 رنز بنائے ۔لیوک رونچی نے 32، مارٹن گپٹل نے 24 اور ہنری نکولس نے 24 رنز بنائے ۔اشون نے لاتھم، گپٹل اور کپتان راس ٹیلر (چار) کے وکٹ لئے ۔جڈیجہ نے نکولس ، رونچی اور میٹ ہنری (18) کو آؤٹ کیا۔سمیع نے سیٹنر (نو)، بی جے واٹلنگ (ایک) اور ٹرینٹ بولٹ (چار) کے وکٹ لئے ۔بھونیشور نے جتن پٹیل (دو) کو آؤٹ کیا۔لاتھم اور گپٹل نے پہلے وکٹ کے لئے 55 رن جوڑے ۔اشون نے گپٹل کو ایل بی ڈبلیو کر کے ہندستان کو پہلی کامیابی دلائی۔لاتھم نے پھر نکولس کے ساتھ دوسرے وکٹ کے لئے 49 رن کی ساجھے داری کی۔نکولس کو جڈیجہ نے اجنکیا رہانے کے ہاتھوں کیچ کرایا۔کپتان ٹیلر کو اشون نے ایل بی ڈبلیو کیا اور پھر لاتھم کی اننگز کا اختتام وکٹ کیپر ساہا کے ہاتھوں کرا دیا۔لاتھم نے 148 گیندوں میں 74 رن میں آٹھ چوکے لگائے ۔نیوزی لینڈ نے لنچ تک 55 رن جوڑ کر کوئی وکٹ نہیں گنوایا تھا لیکن چائے کے وقفہ تک اس کے تین وکٹ گر گئے ۔ چائے کے وقفہ کے وقت نیوزی لینڈ کا اسکور تین وکٹ پر 135 رنز تھا۔آخری سیشن میں نیوزی لینڈ کی ٹیم نے سات وکٹ گنوائے ۔لاتھم کا وکٹ 141 کے اسکور پر گرا۔سمیع نے مسلسل دو اوورز میں سیٹنر اور واٹلنگ کے وکٹ جھٹک لئے ۔جڈیجہ نے رونچی کو بولڈ کر نیوزی لینڈ کو آخری جدوجہد کوبھی ختم کر دیا۔ ہندستان نے جیت کے لیے آخری وکٹ کی تلاش میں دن کے باقی تین اوور رہتے دوسری نئی گیند لی۔روشنی کم ہوتی جا رہی تھی اور امپائر روشنی کے لئے لائیٹ میٹر دیکھ رہے تھے ۔ایسا لگ رہا تھا کہ کہیں میچ پانچویں دن کی صبح تک نہ کھنچ جائے ۔دن کے دو اوور باقی تھے ۔سمیع کیوی اننگز کا 82 واں اوور ڈالنے آئے اور ان کی پہلی گیند باؤنسر تھی جس پر بولٹ نے مرلی وجے کو کیچ تھما دیا۔نیوزی لینڈ کی یہ وکٹ گرنا تھا کہ ہندستانی خیمہ جشن میں ڈوب گیا۔

About the author

Tariq Hasan