اردو | हिन्दी | English
153 Views
Politics

شراب بندی کی تحریک کسی کے روکنیسے نہیں رکے گی: وزیر اعلیٰ

نتیش-کمار
Written by Taasir Newspaper

جہاں سے بھی شراب بندی کے حق میں آواز اٹھے گی میں وہاں جاؤں گا:نتیش کمار

پٹنہ 18 اپریل(طارق حسن): وزیراعلیٰ نتیش کمار نے آج جنتا کے دربار میں وزیرا علیٰ پروگرام کے بعد اخبارنویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ شراب بندی کے حق میں جہاں سے بھی آواز اٹھے گی، میں اس میں جاؤں گا۔ انہوں نے کہا کہ اتر پردیش، جھارکھنڈ اور اڈیشہ سے شراب بندی کے حق میں ہونے والے کنونشن میں حصہ لینے کا بلاوا آیا ہے، ہم اس میں جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ شراب بندی ایسی سماجی تحریک ہے جو کسی کیروکنے سے نہیں رکے گی۔ بہار کے سرحدی علاقوں پر شراب کی دکان کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔ یہ کس طرح کا تعاون ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جب کوئی ریاست مکمل شراب بندی لاگو کرنے کی ہمت کرے تو دوسری ریاست کو اس میں تعاون کرنا چاہئے کیونکہ شراب اچھی چیز نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ شراب کے کاروبار کو بڑھاوا دینا اچھی بات نہیں ہے۔ ہم نے ایس ایس بی سے کہا ہے کہ سرحد پر آپ نگرانی کرتے ہیں ،بہار میں شراب بندی لاگو ہے بہار میں شراب نہیں آنے دیں۔ انہوں نے کہا کہ بہار میں شراب بہت ہی اچھی طرح سے لاگو ہورہی ہے۔ مجھے یقین ہے کہ لوگوں کی حمایت سے بہار میں مکمل شراب بندی کامیاب ہوگی۔ وزیرا علیٰ نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ سنگھ مکت بھارت کا نعرہ ایک سیاسی خیال ہے۔ ہم جس خیال کو صحیح نہیں مانتے ہیں اس کانظریاتی اور سیاسی طور سے کاؤنٹر کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ سنگھ مکت بھارت کیلئے کانگریس، وام دلوں اور دیگر پارٹیوں میں میکسمم پاسیبلیٹی یونٹی ہونی چاہئے۔ان کا نظریہ ملک کیلئے صحیح نہیں ہے اس لئے ہم ان کی مخالفت کرتے ہیں۔ وہ کمیونل اور کاسٹ لائن پر سماج کو بانٹنا چاہتے ہیں۔ افواہوں کے ذریعہ لوگوں کو گمراہ کرنا چاہتے ہیں۔ بھارت جیسے ملک میں عدم برداشت ہونی چاہئے۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ سنگھ مکت بھارت کے نعرہ کی تنقید کیا جانا ان کے ڈر کے مظہر ہیں۔ بہار میں مہاگٹھ بندھن کی تشکیل ہوئی اس کے وسیع نتیجے آئے۔ ان کے سارے دعوے پست ہوگئے۔وزیراعلیٰ نے پٹیدارو لوگوں کے ریزرویشن کے بارے میں کہا کہ پٹیدار لوگوں کی جدوجہد لمبے دور سے چل رہا ہے۔ (باقی صفحہ 7 پر)گجرات میں حکمر
اں جماعت ان کا ووٹ لے کر اقتدار میں آئی ہے۔ پٹیدار لوگ ان سے ناراض ہیں، ووٹ لینے والوں کو پٹیداروں کیلئے حل نکالنا ہوگا۔ شہریت کے موضوع پر انہوں نے کہا کہ جہاں تک شہریت کا سوال ہے ہر ملک میں رہنے والے لوگوں کی بنیاد پر فیصلہ ہوتا ہے۔ مذہب کی بنیاد پر طے نہیں ہوتا ہے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ جدیو ایم پی انیل ساہنی پر پارٹی کی طرف سے اختیاری طور پر جواب مانگا گیا ہے۔ اس سلسلے میں پارٹی فیصلہ کرے گی۔ راجیہ سبھا کے چیئرمین کم ملک کے نائب صدر جمہوریہ اطمینان ہوکر فرد جرم چلانے کی منظوری دی ہے۔ یہ طرز عمل کا سوال ہے ۔ راجیہ سبھا کو فیصلہ لینا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ جس پارٹی نے دو دو بار انہیں راجیہ سبھا میں بھیجا اسی پارٹی کو بدنام کررہے ہیں۔ اگر انہیں لگتا ہے کہ وہ بے قصور ہیں تو استعفیٰ دے کر اپنے کو کورٹ سے بے قصور ثابت کرتے تو ان کی عزت بڑھ جاتی ،پارٹی بھی عزت کرتی۔ وزیراعلیٰ نتیش کمار نے کہا کہ لاتور میں شدید قحط سالی ہے۔ ایک ایک بوند پانی کی محتاجی ہے۔ پانی کا غیر ضروری استعمال بالکل نہیں کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ آلودگی کو دور کرنے کیلئے دہلی میں چل رہی آؤد۔ ایوین اچھا استعمال ہے۔ مرکز میں حکمراں جماعت بے کار ہی اس کی مخالفت کررہی ہے۔ ان کی تو دوہری پالیسی ہے وہ دوسروں پر کچھ بولیں گے ، اپنے کچھ کریں گے۔ جب بھارت کے وزیر اعظم اچانک پاکستان سے تعلقات درست کرنے پاکستان گئے تھے تو ہم نے کہا تھا کہ وزیر اعظم کا یہ بہت اچھا قدم ہے۔ انہوں نے کہا کہ 5 جون کو ہم عوام کے بیچ عوامی شکایت سیل قانون رکھیں گے۔ 6 جون سے عوامی شکایت سیل قانون لاگو ہوگا۔ اخبار نویسوں کے ذریعہ پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں وزیر اعلیٰ نے کہا کہ نیدر لینڈ کے سفیر الفونسس اسٹولنگا کا کوئی خط نہیں ملا ہے اور نہ ہی ہمارے پروگرام میں آیا ہے۔ کل پی ٹی آئی کے خبر میں پڑھا ،آج کچھ اخباروں میں خبر آئی کہ پٹنہ کلکٹریٹ کا احاطہ نہ گرایا جائے ،یہ عمارت بہار کی راجدھانی میں نیندر لینڈ کی نشانیوں میں سے آخری نشانی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ دو ملکوں کے بیچ کا معاملہ ہے۔ وزارت خارجہ سے بھی کوئی خط نہیں آیا ہے۔ آج کے جنتا دربار میں وزیراعلیٰ ریاست کے مختلف حلقوں سے آئے ہوئے قریب 300 لوگوں کے جنرل ایڈمنسٹریشن، دیہی ورکس، پنچایتی راج، بجلی، سڑک تعمیر، عوامی صحت ، زرعی، کوآپریٹیو، مویشی اور ماہی وسائل، آبی وسائل، گنا صنعت، شہری ترقیات اور رہائش، خوراک اور صارفین تحفظ، ٹرانسپورٹ،ڈیزاسٹرمینجمنٹ، ماحولیات اور جنگلات، محنت وسائل، چھوٹی آبی وسائل، منصوبہ اور ترقیات، سیاحت اور عمارت تعمیرمحکمہ سے متعلق معاملوں کو سن کر وزیراعلیٰ نے فوری کارروائی کا حکم وزیر ،سکریٹری کودیا۔ آج کے جنتا دربار میں وزیراعلیٰ نتیش کمار کے علاوہ وزیر توانائی وجندر یادو، آبی وسائل کے وزیر راجیو رنجن سنگھ عرف للن سنگھ، دیہی ترقیات اور پارلیمانی امور کے وزیر شرون کمار،سائنسی صنعت وزیر جئے کمار سنگھ، کوآپریٹیو وزیر آلو کمار مہتا، وزیرٹرانسپورٹ چندریکا رائے، وزیر عوامی صحت کرشن نند پرساد ورما، وزیر شہری ترقیات مہیشور ہزاری، وزیر زراعت رام وچار رائے، وزیر گنا صنعت خورشید عرف فیروز احمد، وزیر خوراک اور صارفین تحفظ مدن سہنی، وزیر پنچایتی راج کپل دیو کامت، وزیرمحنت وسائل وجئے پرکاش، پرنسپل سکریٹری داخلہ عامر سبحانی، پرنسپل سکریٹری شہری ترقیات امرت لال مینا، پرنسپل سکریٹری ڈیزاسٹر مینجمنٹ ویاس جی، سکریٹری توانائی پرتے امرت، وزیر اعلیٰ کے سکریٹری چنچل کمار، وزیر اعلیٰ کے سکریٹری اتیش چندرا، وزیراعلیٰ کے سکریٹری منیش کمار، وزیراعلیٰ کے خصوصی کام عہدیدار گوپال سنگھ سمیت متعلقہ محکمہ کے افسران موجود تھے۔

About the author

Taasir Newspaper