اردو | हिन्दी | English
308 Views
Science

فیس بک تھیل کو ڈائریکٹر بنانے کے فیصلے پر قائم

Facebook
Written by Taasir Newspaper

سماجی رابطوں کی مقبول ویب سائٹ فیس بک نے گوکر میڈیا کے خلاف سیکس ٹیپ کیس کے لیے مالی دینے والے ارب پتی شخصیت پیٹر تھیل کو اپنے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ فیس بک کی چیف آپریٹننگ آفیسر شیرل سینڈبرگ نے کوڈ کانفرنس میں شرکت کے دوران پیٹر تھیل کو بورڈ آف ڈائریکٹرز میں رکھنے کے فیصلے کی تصدیق کی۔شیرل کے مطابق پیٹرتھیل گوکر میڈیا کے تضحیک آمیز رویے کو چیلنج کرنا چاہتے ہیں۔تاہم تھیل پر تنقید کی جا رہی ہے کہ انھوں نے اپنی دولت کو میڈیا کو خاموش کرنے کے لیے استعمال کرنے کی کوشش کی۔فیس بک کے لیے ایک ایسے وقت ایک بڑا مسئلہ ہو سکتا ہے جب یہ انڈسٹری کے کئی حصوں کو اس بات پر مائل کر رہی ہے کہ وہ اس کے پلیٹ فام کو استعمال کریں۔انھوں نے کہا کہ’ہمارے بورڈ کے رکن خودمختار ہیں اور عوام میں جس رائے کا اظہار کرتے ہیں اس میں بھی خودمختار ہیں۔ ایسے مضبوط لوگ بورڈ کے اچھے رکن بن سکتے ہیں کیونکہ یہ مضبوط خیالات رکھتے ہیں اور یہ دوسرے لوگوں سے مختلف سوچنے سے خوفزدہ نہیں ہوتے اور اس کے ساتھ فیس بک کے لیے بھی خدمات سرانجام دیتے ہیں۔‘تاہم ایک ماہر نے سوال اٹھایا ہے کہ فیس بک کے ابتدائی بانیوں میں شامل تھیل کو رکھنے کا فیصلہ کیا طویل مدت تک قائم رہ سکتا ہے۔میڈیا کہ ایک ماہر سٹیو ہیولیٹ نے بی بی سی کو بتایا کہ’فیس بک نے بنیادی طور پر خود کو ایک ٹیکنالوجی کمپنی کے طورپر دیکھا ہے اور اب یہ ایک عوامی مسئلے سے نمٹنے جا رہی ہے جس میں ایک ناشر ہونے کے ناطے اس کی اخلاقیات اور ذمہ داری بھی ہیں۔ تصورکریں کہ یہ شخص بی بی سی یا ٹائمز کے بورڈ میں بیٹھا ہے جس میں واضح طور پر مفادات کا تضاد ہے، آپ ایک ارب پتی کو ایک پبلشر ادارے میں نہیں بیٹھا سکتے جو دوسرے لوگوں کے خلاف مواد شائع کرنے پر مقدمے کر رہا ہے۔‘انھوں نے مزید کہا کہاگر آپ فیس بک کو پبلشرکے طور پر دیکھیں تو اس فیصلے میں صاف صاف مسائل ہیں۔گوکر اور تھیل کے درمیان تنازع 2007 میں اس وقت شروع ہوا جب گوکر نے ایک مضمون شائع کیا جس کا عنوان تھا ’پیٹر تھیل ہم جنس پرست ہیں۔‘گذشتہ ہفتے ارب پتی پیٹرتھیل نے امریکی اخبار نیویارک کو بتایا تھا کہ اس واقعے کے بعد انھوں نے وکلا کی ایک ٹیم کو رقم دی تھی کہ گوکر کے مضامین میں شامل دیگر ’متاثرین‘ کو تلاش کریں اور ان کی مدد کریں کہ یہ کمپنی کے خلاف مقدمہ کر سکیں گے اور انھوں نے کہا ہے کہ یہ اقدام انسانی ہمدردی کے ناطے کیا۔2007 کے تنازع کے بعد سابق ریسلر ہوگن نے گوکر کے خلاف نجی زندگی میں مداخلت کرنے کے الزام میں کیس جس میں عدالت نے کمپنی نے ہوگن کو ایک کروڑ 40 لاکھ ڈالر زرتلافی ادا کرنے کا حکم دیا تھا۔

About the author

Taasir Newspaper