اردو | हिन्दी | English
131 Views
Indian

ممبئی دھماکہ: ابو سلیم اور مصطفی ڈوسا سمیت6 مجرم قرار

abu salem
Written by Taasir Newspaper

ممبئی، 16 جون.(پی ایس آئی) 1993 کے ممبئی بم دھماکوں کے معاملے میں انڈر ورلڈ ڈان ابو سلیم سمیت سات ملزمان پر خصوصی ٹاڈا عدالت نے جمعہ کو فیصلہ سنایا. سلیم سمیت چھ ملزمان کو مجرم قرار دیا گیا، جبکہ ایک ملزم کو بری کر دیا گیا. اسپیشل جج گووند اے سنپ کی عدالت نے یہ فیصلہ سنایا. جن ملزمان کو مجرم قرار دیا گیا، وہ ہیں۔ابو سلیم، مصطفی ڈوسا، کریم اللہ شیخ، ریاض صدیقی، طاہر مرچنٹ اور فیروز خان. عبدالقیوم کو بری کر دیا گیا ہے. کورٹ نے اس کے تمام الزامات سے آزاد کر دیا ہے اور پرسنل بانڈ پر چھوڑنے کا حکم دیا ہے. کورٹ ابھی قصورواروں کی سزا پر فیصلہ کرے گی. کورٹ نے سماعت کی اگلی تاریخ 19 جون رکھی ہے. اس دن سزا پر بحث کے لئے تاریخ مقرر کی جائے گی.کورٹ نے مانا کہ ڈوسا، سلیم، طاہر مرچنٹ اور فیروز خان ان دھماکوں کے اہم سازشی تھے. تاہم، تمام ملزمان کو ملک کے خلاف جنگ چھیڑنے کے الزام سے آزاد کر دیا گیا. ابو سلیم کو بھی ٹاڈا کی کچھ دفعات میں بری کیا گیا ہے. ریاض صدیقی کو ٹاڈا اور دیگر دفعات میں مجرم قرار دیا گیا ہے. تاہم، عدالت نے مانا کہ اس کے خلاف پرسکیوشن سازش کا الزام ثابت کرنے میں ناکام رہا. ابو سلیم کو سازش، دہشت گرد سرگرمی سمیت کئی دفعات میں مجرم قرار دیا گیا ہے. سلیم پر الزام ہے کہ اس نے بم اسکینڈل کو انجام دینے کے لئے ہتھیاروں کا ذخیرہ ریسیو کرکے ٹھکانوں تک پہنچایا. ڈوسا پر قتل کیس، ایکسپلوسیو ایکٹ، مجرمانہ سازش، دہشت گرد سرگرمی کے معاملے ثابت ہوئے ہیں. ڈوسا کو داؤد کا قریبی سمجھا جاتا ہے. اس کا بھائی محمد ڈوسا فی الحال فرار چل رہا ہے. فیروز خان کو سازش، قتل کی دفعات کے علاوہ ایکسپلوسیو ایکٹ میں مجرم قرار دیا گیا ہے.دھماکوں کے معاملات میں عدالت نے ملزمان کی دوسری کھیپ پر یہ فیصلہ دیا. اس سے پہلے، دھماکوں کے کیس میں ابتدائی 123 ملزمان کے مقدمے کی سماعت 2006 میں ختم ہوئی تھی، جس میں 100 کو سزا سنائی گئی تھی. سزا پانے والوں میں اداکار سنجے دت بھی شامل تھے. ابو سلیم نے مانا تھا کہ اس نے سنجے دت کو ہتھیار دیئے تھے. 24 سال پہلے 12 مارچ 1993 کو ممبئی 12 سلسلہ وار دھماکوں سے دہل اٹھی تھی. اس میں 257 لوگ مارے گئے تھے، جبکہ 713 لوگ شدید طور پر زخمی ہوئے تھے. سی بی آئی کے مطابق، ممبئی دھماکے 6 دسمبر 1992 کو ہوئے بابری مسجد انہدام کے بعد ہوئے فسادات کا بدلہ لینے کے لئے کئے گئے تھے. سی بی آئی نے کورٹ کو یہ بھی بتایا کہ یہ دھماکے دنیا کا پہلا ایسا دہشت گردانہ حملہ تھا، جہاں دوسری عالمی جنگ کے بعد اتنے بڑے پیمانے پر آر ڈی ایکس استعمال کیا گیا. جمعہ کو عدالت نے جو فیصلہ سنوایا، اس معاملے کی 2011 میں سماعت شروع ہوئی تھی. مکمل سماعت اس سال مارچ میں ختم ہوئی تھی. دھماکوں کے معاملے میں یہ فیصلہ آخری ہے کیونکہ ابھی کوئی بھی ملزم حراست میں نہیں ہے. 33 ملزم فرار چل رہے ہیں، جن میں اہم سازشی داؤد ابراہیم، اس کا بھائی انیس ابراہیم، مصطفی ڈوسا کا بھائی محمد ڈوسا اور ٹائیگر میمن شامل ہیں. سلیم کو نومبر 2005 میں پرتگال سے بھارت حوالگی کیا گیا تھا. اس اعتراف کی بنیاد پر ہی صدیقی اور شیخ کی گرفتاری ہوئی تھی.

About the author

Taasir Newspaper