اردو | हिन्दी | English
223 Views
Business

ویب سائٹس سے شدت پسندانہ مواد ہٹانے کیلئے خفیہ اقدامات

Website
Written by Taasir Newspaper

سان فرانسسکو/ واشنگٹن: ویڈیوز کے حوالے سے کام کرنے والی دنیا کی بڑی کمپنیوں نے اپنی ویب سائٹس سے شدت پسندی پر مبنی مواد ہٹانے کے لیے خاموشی سے اقدامات شروع کر دیئے۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق نے اس معاملے سے واقف 2 افراد کے حوالے سے اپنی رپورٹ میں لکھا ہے کہ گوگل کی ‘یوٹیوب’ اور سماجی رابطے کی ویب سائٹ ‘فیس بک’ ان کمپنیوں میں شامل ہیں جنہوں نے اپنی سائٹس سے دہشت گردی پر مبنی مواد کو روکنے کا خود کار طریقہ متعارف کرانے پر کام شروع کر دیا ہے۔ انٹرنیٹ کمپنیاں اپنی ویب سائٹس تک پروپیگنڈا ویڈیوز کی رسائی کو روکنے کے لیے سرگرم ہیں اور دنیا بھر کی حکومتوں کا بھی ان پر ایسا کرنے کے لیے دباؤ ہے کیوں کہ دہشت گردوں کے حملے اب شام سے نکل کر بیلجیئم اور امریکہ تک پہنچ چکے ہیں۔ اس سلسلے میں انٹرنیٹ کمپنیاں اس ٹیکنالوجی کو استعمال کرنے پر غور کر رہی ہیں جسے ابتدائی طور پر انٹرنیٹ پر کاپی رائٹ مواد کی شناخت اور اسے ہٹانے کے لیے تیار کیا گیا تھا۔ اس ٹیکنالوجی کے ذریعے ویب سائٹ پر موجود شدت پسندانہ مواد کی شناخت کرکے اسے فوری طور پر بلاک کیا جاسکے گا۔ انٹرنیٹ کمپنیوں کی جانب سے اس ٹیکنالوجی کے استعمال کی تصدیق نہیں ہوسکی تاہم ٹیکنالوجی سے واقف کئی افراد کا کہنا ہے کہ اس کی مدد سے پوسٹ ہونے والی ویڈیوز کو چیک کیا جاسکے گا کہ آیا اس میں موجود مواد تشدد پر اکسانے پر مبنی تو نہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ابھی تک یہ واضح نہیں کہ پروپیگنڈا ویڈیوز کو کس حد تک خود کار طریقے سے بلاک کیا جاسکے گا اور اس میں کتنی انسانی مدد درکار ہوگی اور یہ کیسے معلوم ہوگا کہ کوئی ویڈیو شدت پسندی پر مبنی ہے۔ تاہم وقت کے ساتھ ساتھ اس ٹیکنالوجی میں جدت آتی جائے گی کیوں کہ انٹرنیٹ کمپنیاں اس معاملے کو سنجیدگی سے لے رہی ہیں اور اس پر دیگر کمپنیوں سے مشاورت بھی جاری ہے۔

About the author

Taasir Newspaper