اردو | हिन्दी | English
770 Views
Health

گرمی میں پیداہونے والی بیماریاں ا ور ان کاعلاج

Health.
Written by Taasir Newspaper

موسم گاما کاآغاز ہوچکا ہے جبکہ گرمیاں تنہانہیں آتیں بلکہ اپنے ساتھ کئی اقسام کی بیماریاں بھی لے کر آتی ہیں اور اکثر افراد ان بیماریوں کاشکار بن جاتے ہیں۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ گرمی میں پیداہونے والی ان بیماریوں سے بچاؤ یاان کا علاج کوئی زیادہ مشکل نہیں ہے۔ ضرورت صرف اس بات کی ہے کہ ہمیں اس حوالے سے درست معلومات کے حصول ہونی چاہیے اور اسی معلومات کے حصول کے لیے ہماری ویب کی ٹیم نے معروف ہربلسٹ ڈاکٹر بلقیس ڈاکٹر شیخ سے خصوصی ملاقات کی۔ ڈاکٹر بلقیس شیخ کے مطابق چند احتیاطی تدابیر اور آسان ٹوٹکوں کی مدد سے ہم باآسانی موسم گرما کی تکلیف دہ بیماریوں سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔ ڈاکٹر بلقیس گرمیوں کی بیماریوں ان سے بچاؤ اور علاج کے حوالے سے مزید کیابتاتی ہیں؟ آئیے جانتے ہیں۔ ڈاکٹر بلقیس کاکہنا کہ گرمیاں اپنے ساتھ کئی بیماریاں لے کر آتی ہیں جیسے کہ ہیٹ اسٹروک، کمزوری، چکرآنا، خارش اور دانے نکلنا وغیرہ۔ اس وقت سب سے بڑا خطرہ ہیٹ اسٹروک کا ہے اور اس بار بھی کراچی میں ہیٹ اسٹروک کا خطرہ موجود ہے۔
سب سے زیادہ ضروری یہ ہے کہ ہیٹ اسٹروک کے دوران آپ غیر ضروری طور پر گھر سے باہربالکل نہ جائیں بالخصوص دوپہر 12 بجے سے لے کر شام 4بجے کے دوران۔ اگر نکلنا بھی پڑے تو اپنے ساتھ پانی کی بوتل لازمی رکھیں کیونکہ ہیٹ اسٹروک سے بچاؤ کے لیے پانی ضروری ہے۔ اگر آپ شوگر کے مریض نہیں ہیں تو اپنے ساتھ نمکول رکھیں۔ ڈاکٹر بلقیس کہتی ہیں کہ ‘‘ ہر موسم کی بیماریوں سے بچاں کے لیے؟ اللہ تعالیٰ کی جانب سے اس موسم میں کچھ پھل بھی عطا کیے جاتے ہیں جیسے کہ کیری، کیری کا شربت نہ صرف لولگنے سے بچاتا ہے بلکہ لو لگ جانے کے بعد بھی آپ کو اس سے نجات دلاتا ہے۔
کیری کاشربت بنانے کے لیے سب سے پہلے کیری کو ملتانی مٹی سے اچھی طرح لیپ کرنے کے بعد اس حدتک گرم کریں کہ کیری کی جلدنہ پھٹے، ملتانی مٹی صاف کرکے کیری نچوڑ لیں اور اس کے رس کو ایک گلاس ٹھنڈے پانی میں شامل کریں اور اس پانی میں ایک بڑا چمچ چینی اور ایک چٹکی لاہوری نمک شامل کریں۔ یہ شربت پینے سے آپ لولگنے سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔
ایک اور چیز جس کے بارے میں بہت کم لوگ جانتے ہیں وہ ہے کہ خس کاشربت۔ خس کا شربت بہت بہترین چیز ہے اور یہ گرمی کا مارتا ہے۔ ویسے توخس کاشربت مارکیٹ میں دسیتاب ہے لیکن اگر آپ خود یہ شربت تیار کرنا چاہتے ہیں تو خس آپ کو پنساری کی دکان سے مل سکتی ہے۔ تاہم خس خریدنے کے بعد اسے دھوئیں ضرور اور اس کے بعد چھان لیں۔ خس کا شربت بنانے کے لیے سب سے پہلے 50گرام خس کواچھی طرح دھولیں، بھیگی ہوئی خشخاش دو بڑے چمچے، تازے گلاب کی پیتاں 2سے 3 کپ اور دھنیا کی ایک بڑی گڈی لے کر ان تما اشیا دو لیٹر پانی ابال لیں۔ جب پانی ڈیڑھ لیٹررہ جائے تو اس کاچھان لیں۔ پھر اس میں ایک کپ گڑڈال لیں اور ٹھنڈا ہونے پر ایک چٹکی سست لوبان شامل کرلیں۔ یہ شربت دن میں 2سے 3بار استعمال کرنا ہے۔ ڈاکٹر بلقیس کے مطابق‘‘ اکثر افراد کو گرمیوں میں چکر آنے، سرمیں درد اور لولگنے کی شکایت عام ہوتی ہے ایسے افراد کے لیے ضروری ہے کہ وہ صبح وشام تربوز کاشربت استعمال کریں۔ اس کے علاوہ تربوز بھی کھائیں لیکن یاد رکھیں کہ تربوز کھانے کے بعد پانی پینے سے گریزکریں۔
تربوز کے شربت میں کالانمک اور کالی مرچ ضرور استعمال کرین جبکہ تربوز ہمیشہ خالی پیٹ کھائیں۔ اس کے علاوہ خربوزہ بھی کھانا چاہیے اور اس کاشربت بھی پینا چاہیے۔ خربوزہ شام 4بجے کھائیں یعنی جس وقت آپ کا پیٹ نہ زیادہ بھراہوا اور نہ زیادہ خالی۔ خربوزہ کا شربت جب بھی بنائین اس میں پودینہ ، ادرک اور لہسن کاپیسٹ ضرور شامل کریں۔ ایک بات یادرکھیں کہ تربوز اور خربوزہ کے ساتھ کبھی بھی چاول نہ کھائیں۔ ڈاکٹر بلقیس مزید بتاتی ہیں کہ‘‘ کچھ لوگوں کو گرمیوں میں بہت زیاہ پسینہ آتا ہے۔ ایسے افراد کو جامن اور فالسے کا استعمال زیادہ کرناچاہئے۔ اس کے علاوہ بینگن کوکاٹ کر اس کو ہاتھوں پر ملنے سے بھی پسینہ کم آتا ہے جبکہ بینگن کا پانی بغلوں میں ملنے سے پسینہ اور اس کی بوکم آتی ہے۔ پسینے کی بووغیرہ رفع کرنے کے لیے آپ گھر پر ہی ایک اسپرے ( Deodorant) تیار کرسکتے ہیں۔ deodorant تیارکرنے کے لیے ناگ کیسر کاپاؤڈر، اسطوخودوس، دارچینی اور تیزپات دوچمچ لے کر عرق گلاب 2سے 3 کپ میں بھگودیں۔ اس کو اتنا پکائیں کہ صرف ایک کپ رہ جائے۔ اس میں 3 سے 4کرسٹل سست پودینہ کے ڈال دیں۔ آپ کا deodorant یا خوشبو تیار ہے۔ لو بلڈ پریشر کے مریضوں کو فالسے کااستعمال زیادہ کرنا چاہیے اور اگر بلڈپریشر بہت زیادہ کم ہوجائے تو ڈھیروں نمک پانی شامل کرکے مریض کے پاؤں اس پانی میں ڈبودیں۔ اس کے علاوہ مریض کی ہتھیلیوں پر بھی نمک رگڑیں۔ اس سے بھی بلڈپریشر نارمل ہوجاتا ہے۔ ڈاکٹر بلقیس کاکہنا تھا کہ ‘‘ اکثر افراد گرمیوں میں زیادہ الٹیاں آتی ہیں۔ ایسے افراد کو کیلاالٹا چھیل کر آدھا کھلائیں۔ اس سے الٹیاں آنابند ہوجائیں گی۔ اس کے علاوہ انڈے کی سفیدی ، ایک چاول کے دانے کے برابر میٹھا سوڈا، ایک چاول کے دانے کے برابر سفید زیرے کاپاؤڈر اور ایک چمچ چینی اچھی طرح اس میں گھول کر یہ جھاگ مریض کو 3سے 4 مرتبہ پلانے سے بھی الٹیاں رک جاتی ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper