اردو | हिन्दी | English
118 Views
Indian

ہندو میریج ایکٹ کے تحت ون نائٹ اسٹیڈ شادی نہیں : بامبے ہائی کورٹ

shadi
Written by Taasir Newspaper

ممبئی،11جون(پی ایس آئی)ون نائٹ اسٹیڈ یا کسی عورت اور مرد کے درمیان بننے والا جسمانی تعلقات ہندو لاء کے تحت شادی کے دائرے میں نہیں آتا. یہ بات بامبے ہائی کورٹ نے حالیہ اپنے ایک اہم حکم میں کہی ہے. کورٹ نے ساتھ ہی کہا کہ ون نائٹ اسٹیڈ کے بعد اگر دونوں کی شادی نہیں ہوتی اور بچے کی پیدائش ہوتی ہے تو بچے کا باپ کی جائیداد میں کوئی حق نہیں ہوتا.جسٹس مردلا بھٹکر نے کہا، ‘عورت مرد کے سلسلے کو شادی کہے جانے کے لئے روایتی رسم و رواج یا پھر قانونی عمل کے تحت شادی کرنا ضروری ہوتا ہے. خواہش یا اتفاقی بنا جسمانی تعلقات شادی نہیں ہوتی.’کورٹ نے کہا کہ ہندو میریج ایکٹ کی سیکشن 16 اس طرح کے تعلق کو شادی کی منظوری نہیں دیتی، لیکن کورٹ نے ساتھ ہی کہا کہ معاشرے تبدیلی کے دور سے گزر رہا ہے. جج نے کہا، ‘کچھ ممالک میں سملینگک کے تعلق کو شادی مانی گئی ہے، وہیں لو ان ریلیشن اور ایسے تعلقات سے بچوں کی پیدائش نے مشکل مسئلے کو جنم دیا ہے. اس نے ساتھ ہی قانونی ماہرین کے لئے اسے شادی کے طور پر بیان کئے جانے کا چیلنج پیش کر دیا ہے.’ہندو میریج ایکٹ کے تحت بچے کے حقوق کے لئے شادی کو ثابت کرنا ضروری ہوتا ہے، یہاں تک کہ اگر وہ شادی بعد میں غیر قانونی قرار دے دی گئی ہو. کورٹ ایک شخص کے معاملے میں سماعت کر رہا تھا، جس کی دو بیویاں تھیں. جب یہ بات ثابت ہو گئی کہ شخص نے دوسری بار شادی کی تھی، عدالت نے اس کی دوسری شادی کو غیر قانونی قرار دے دیا. تاہم، اس کی دوسری بیوی سے پیدا ہونے والی بچی کو جائیداد میں اختیار دیا گیا.

About the author

Taasir Newspaper