اردو | हिन्दी | English
150 Views
Politics

میری حکومت گرانے کی سازش ہورہی ہے : راوت

harish rawat
Written by Tariq Hasan

دہرادون، 5 ستمبر (یو این آئی) اتراکھنڈ کے وزیر اعلی ہریش راوت نے الزام لگایا ہے کہ ریاست میں صدر راج ہٹنے کے بعد بھی ان کی حکومت گرانے کی سازش جاری ہے اور مرکزی حکومت ان کے ہر کام میں رکاوٹ پیدا کر رہی ہے ۔مسٹر راوت نے یواین آئی سے بات چیت میں الزام لگایا کہ مرکز ان کے ہر کام میں روڑے اٹکا رہا ہے لیکن پھر بھی عوام کے مفادات کو ذہن میں رکھتے ہوئے وہ اسمبلی تحلیل کرنے کی بجائے عوام کی خدمت آخری لمحات تک کرتے رہیں گے ۔ انہوں نے کہا، ”ریاست میں صدر راج نافذ ہونے کے بعد پانچ ماہ تک حکومت کام نہیں کر پائی جس سے ترقی کی رفتار آگے نہیں بڑھ سکی۔ ہم آج بھی محفوظ علاقے میں نہیں ہیں۔ بی جے پی (بھارتیہ جنتا پارٹی) مسلسل حکومت گرانے کی سازش کر رہی ہے اور اب تو حالات یہ ہے کہ سب کچھ کھلے عام کیا جا رہا ہے ۔ ان کے مرکزی رہنما آج بھی جب یہ بیان دیتے ہیں کہ کانگریس کے کئی رکن اسمبلی ان کے رابطے میں ہیں جس سے ان کے ارادوں کے بارے میں پتہ چلتا ہے ۔ ہمیں ان تمام چیلنجوں کے درمیان ترقی کی رفتار کو پٹری پر لانا ہے جس میں ہم کافی کامیاب بھی ہوئے ہیں”۔ مسٹر راوت نے کہا، ”آج ہمارے سامنے کئی چیلنجز ہیں، صدر راج کے بعد ترقی کی جو کڑی ٹوٹ گئی تھی اب اسے ملانے کا چیلنج ہے ۔ جو رفتار رک گئی تھی اسے آگے بڑھانا ہے ۔ یہ ہمارے لئے آزمائش کا وقت ہے اس آزمائش کو ہمیں کامیاب ہونا ہے ۔ اتنا سب کچھ ہونے کے بعد بھی ہم نے کوشش کی کہ حکومت کو قدرتی طور پر چلایا جائے تاکہ کسی کو یہ احساس نہیں ہو کہ حکومت گرانے کی وجہ سے ریاست متاثر رہی ہے ۔ ہم دن رات محنت کر رہے ہیں تاکہ عوام کے ذہن میں کسی قسم کی کوئی بے یقینی کی صورت حال نہ رہے اور محکمہ جاتی کام بھی رفتار پکڑ سکے ”۔مسٹر راوت نے کہا کہ حکومت چلانا کوئی بجلی کے بٹن دبانے کی طرح نہیں ہے جسے دباتے ہی سب اجالا ہی اجالا ہو جائے ۔ حکومت کا آپریشن ایک نظام کے تحت ہی کیا جاتا ہے ، جسے ٹھیک رکھنا ہماری ذمہ داری ہیں۔ اتر پردیش کی تقسیم کے بعد 14 سال تک جن پالیسیوں پر سابقہ حکومتیں چلتی رہیں انہیں دو سال میں تبدیل کرنا ممکن نہیں ہے ۔مستقل دارالحکومت کا مسئلہ عوام پر چھوڑتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سال 2017 کے انتخابات کا مسئلہ ہریش راوت بمقابلہ بی جے پی ہونے والا ہیں۔ انہوں نے کہا، ”آپ صرف ہمارے ترقیاتی کاموں، رویے اور پانچ سال کی کامیابیوں کی بنیاد پر عوام ہمیں اکثریت دے گی۔مسٹر راوت نے کہا کہ ان کی توجہ کی ترقی، خود روزگار، بنیادی سہولیات سے ریاست کو لیس کرنا ہے ۔ اتحادی جماعتیں پروگریسو ڈیموکریٹک فرنٹ (پی ڈی ایف) سے اتحاد کے سوال کو انہوں نے پی ڈی ایف اور کانگریس ہائی کمان پر چھوڑ دیا ہے ۔ انہوں نے کانگریسی تنظیم اور حکومت کے درمیان اختلافات کی خبروں کو بے بنیاد بتایا۔ انہوں نے کہا کہ بدعنوانی پر جتنی مؤثر کارروائی ہونی چاہیے تھی، وہ نہیں ہو پائی. انہوں نے خیال کیا کہ بڑی مچھلیوں کو پکڑے بغیر بدعنوانی کو روکنا ممکن نہیں ہے ۔ تاہم انہوں نے کہا کہ ویجلینس محکمہ کو زیادہ اختیاردے کر انھوں نے افسران کو بدعنوانی کے خلاف سخت کارروائی کرنے کی کھلی چھوٹ دی ہے ۔ وزیر اعلی نے کہا کہ ان کے پاس کوئی جادو کی چھڑی نہیں ہے جو ان کے دور اقتدار سے پہلے کے چار برسوں کی کوتاہیوں اور ناکامیوں کو وہ راتوں رات ٹھیک کر دیں گے ۔ اپنی کامیابیوں کو گناتے ہوئے مسٹر راوت نے کہا کہ ریاست کے تمام پچھلے وزرائے اعلی کی توقع تین گنا زائد اعلانات کئے اور ان پر عمل کا فیصد 70 ہے ۔ جبکہ گزشتہ وزرائے کے محض 40 فیصد عمل درآمد ہو پایا۔ انہوں نے کہا کہ 2020 تک ریاست کا کوئی بھی گاؤں سڑک منقطع نہیں ہو گا۔ آفت کے بعد بھی اتراکھنڈ میں جی ڈی پی کی شرح بڑھانا کسی معنوں میں کم نہیں ہے ۔ کانگریسی حکومت کی پالیسیوں کا ہی نتیجہ ہے جس کی مالی اداروں کا تجزیہ کرنے والی ایسوچیم جیسے اداروں نے بھی ریاست کی تعریف کی ہے ۔مسٹر راوت نے کہا، “گذشتہ 18 مارچ کے واقعہ کے بعد ہم چاہتے تو حکومت تحلیل کرکے الیکشن کرا سکتے تھے لیکن اس سے اپوزیشن اپنے منصوبوں میں کامیاب ہو جاتا اور بجٹ کے منسوخ کرنے کی سازش کے بعد ریاست بجٹ مبرا ہو کر بھاری اقتصادی بحران میں آ سکتا تھا۔ لیکن ہم نے پارٹی اور اپنے مفادات کو نظرانداز کرتے ہوئے آئین کے مطابق راستہ اپنایا اور بجٹ دوبارہ منظور کرواکر بھاری مالی فقدان سے آزاد کرکے ریاست کو ترقی اور اقتصادی ترقی کے راستے پر لانے کی کوشش کی”۔انہوں نے کہا، ”2017 کے انتخابات میں بی جے پی کے پاس کوئی مسئلہ نہیں رہ گیا ہے ۔ انہیں ہر جگہ ہریش راوت دکھائی دے رہے ہیں اور جہاں دیکھو وہ میرے خلاف مقدمہ درج کرا رہے ہیں۔ اب انتخابات میں بھی انہوں نے دوسرے مسئلے اٹھانے کے بجائے اپنی پوری جنگ ہریش راوت بمقابلہ بی جے پی بنا دی ہے ۔ اب عوام کو طے کرنا ہے کہ کون غلط ہے اور کون صحیح آنے والے انتخابات میں اس کا فیصلہ ہائے جائے گا۔باغی ممبران اسمبلی کے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ بی جے پی آنے والے انتخابات میں کانگریس کے دس باغی ممبران اسمبلی کے بارے میں پچھتائے گی۔

About the author

Tariq Hasan