سیاست

نوٹ بندی سے لوگوں کی مشکلات میں اضافہ

Written by Dr.Mohammad Gauhar

وڑہ 19 نومبر(محمد نعیم) مودی حکومت کی 1000/500 کی نوٹ بندی سے جہاں لوگوں کی مشکلات میں اضافہ ہوتا چلا جا رہا ہے وہیں بینکوں کی قطاروں میں کوئی کمی واقع دیکھائی نہیں دے رہا ہے وہیں طےءشدہ شادی کی تاریخوں کو لے کر بےشمار لوگوں میں شدید بےچینی و ناراضگی پائی جاری ہے ، حالانکہ حکومت کی جانب سے یہ اعلان کیا گیا ہے کہ شادی کے موقعوں پر اپنے کھاتوں سے ڈھائی لاکھ روپےءتک بینکوں سے حاصل کر سکتے ہیں یا نقد بدلوا سکتے ہیں اس کے باوجود لوگ در بدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں۔ہوڑہ کے شب پور کاویز گھاٹ کی رہنے والی لڑکی پنکی راوت کی بارات 25 نومبر بروز بدھ کے دن آنے والی ہے۔اس کی ماں نے بتایا کہ بینک آف بروڈا میں ایک لاکھ روپے موجود ہیں اور کارپوریشن کوآپریٹیو بینک سے 90 ہزار کا قرض چیک بھی اس نے جمع کر رکھا ہے ساتھ ہی شادی سے متعلق تمام کاغذات بینک میں جمع کرنے کے باوجود بینک والے کہہ رہے ہیں کہ ان کے پاس ایسا کوئی سرکولیشن نہیں ملا ہے کہ وہ رویئے مہیا کراسکے۔ایسی ہی ہوڑہ کے کونا کی رہنے والی جھرنا باگ کی بھی داستان ہے جسکی شادی 21 نومبر بروز سوموار کو ہونے والی ہے اس کی ماں نے بتایا کہ سمجھ میں نہیں آتا کہ کیا کریں۔ہوڑہ کارپوریشن میں واقع بینک آف بروڈہ کے مینیجر اسیم کمار بنرجی سے پوچھے جانے پر کہ جب حکومت کی جانب سے 45 ہزار سے بدل کر 2ہزار رویئے مہیا کئے جارہے ہیں،کیا اس کا سرکولیشن انہیں ملا ہے تو انہوں نے ہمیں بتایا کہ یہ درحقیقت ڈیبیٹ سسٹم میں 2ہزار روپےئ آر بی آئی کی جانب سے اپ لوڈ کر دیا گیا ہے ، جس میں ہمارا کوئی دخل نہیں ہے۔لیکن جب ان سے پوچھا گیا کہ اگر آپ کے پاس ڈھائی لاکھ روپے دینے کی کوئی اطلاع نہیں ملی ہے تو پھر باہر گیٹ پر نوٹس چسپا کیوں نہیں کرتے تو اس سوال پر بلکل خاموش ہو گئے۔اس بعد صرف یہ کہا کہ جلد ہی اس کا کوئی حل نکل آئے گا۔حکومت کے اس فیصلے پر جب لوگوں سے پوچھا گیا تو کثیر تعداد میں لوگوں نے اسے تغلقی فرمان کہتے ہوئے حکومت کی اس فیصلے پر گہری تشویش کا اظہار کیا۔

About the author

Dr.Mohammad Gauhar

Chief Editor - Taasir