آج کا شماره | اردو | हिन्दी | English
Indian

تین طلاق کامعاملہ آئینی بنچ کے سپرد

supreme-court_660_020913075242
Written by Tariq Hasan

نئی دہلی، 30 مارچ (یو این آئی)سپریم کورٹ نے مسلمانوں میں تین طلاق، نکاح حلالہ اور تعدد ازدواج کے طریقوں کی آئینی و قانونی حیثیت کے سوال کو آج آئینی بنچ کے سپرد کر دیا۔ چیف جسٹس جگدیش سنگھ کیہر کی صدارت والی بنچ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ اس معاملے کو پانچ رکنی آئینی بنچ کو سپرد کیا جاتا ہے ، جو موسم گرما کی چھٹیوں کے دوران 11 مئی سے روزمرہ کی بنیاد پر سماعت کرے گی۔ عدالت نے کہا کہ اس معاملے میں صرف قانونی پہلوؤں پر ہی سماعت ہوگی۔ تمام فریقوں کے ایک ایک لفظ پر عدالت غور کرے گی۔جسٹس کیہر نے کہا کہ عدالتیں قانون سے الگ نہیں جا سکتیں۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ یہ مسئلہ بہت سنگین ہے اور اس سے گریز نہیں کیا جا سکتا۔ عدالت تین طلاق کے تمام پہلوؤں پر غور کرے گی۔ آئینی بنچ مسلسل چار دنوں تک اس معاملے پر دونوں فریقوں کو سنے گی۔عدالت نے متعلقہ فریقوں کو چار ہفتے میں جواب داخل کرنے کی ہدایت بھی دی۔اس سے قبل آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ نے عدالت سے کہا تھا کہ مسلمانوں میں رائج تین طلاق، ‘نکاح حلالہ’ اور تعدد ازدواج کے طریقوں کو چیلنج کرنے والی عرضیاں قابل غور نہیں ہیں کیونکہ یہ مسائل عدلیہ کے دائرے میں نہیں آتے ۔11 مئی سے سپریم کورٹ کی گرمیوں کی تعطیل ہورہی ہے۔ اس لئے کئی سینئر وکیلوں نے تعطیل کے دوران یومیہ بنیاد پر سماعت کی مخالفت کی۔ لیکن عدالت نے وکیلوں کے اعتراضات مسترد کرتے ہوئے کہا کہ یہ انتہائی اہم معاملہ ہے اور ہم اسے حل کرنا چاہتے ہیں۔ تعطیل کے دوران اس سال تین آئینی بنچ سماعت کرے گی۔

About the author

Tariq Hasan