اردو | हिन्दी | English
371 Views
Indian

کمیشن کے ذریعہ وی وی پیٹ مشینیں خریدنے کا عمل شروع

evm
Written by Tariq Hasan

نئی دہلی، 23 اپریل (یو این آئی) الیکٹرانک ووٹنگ مشین (ای وی ایم) میں مبینہ گڑبڑی کے سوالات کے دوران الیکشن کمیشن نے ای وی ایم میں لگانے کیلئے ووٹنگ کے بعد پرچی دینے والی 16 لاکھ 15 ہزار ووٹر ویریفائبل پیپر آڈٹ ٹرائل (وی وی پی اے ٹی) مشینیں خریدنے کا عمل شروع کردیا ہے ۔کمیشن نے الیکٹرانکس کارپوریشن آف انڈیا لمیٹیڈ (ای سی آئی ایل) اور بھارت الیکٹرانکس لمیٹیڈ (بی ای ایل) کو الگ الگ تجاویز بھیجی ہیں اور ہر ایک کو آٹھ لاکھ ساڑھے سات ہزار وی وی پی اے ٹی مشینوں کی فراہمی حاصل کرنے کا ارادہ ظاہر کیا ہے ۔ اس خریداری کی لاگت تقریباً 3173.47 کروڑ روپئے ہوگی۔ کمیشن نے کہا ہے کہ یہ مشینیں اسے ستمبر 2018 تک دستیاب ہوجانی چاہئے تاکہ 2019 کے عام انتخابات کے پہلے یہ مشینیں ای وی ایم میں لگائی جاسکیں۔ستمبر 2018 تک دستیاب ہوجانی چاہئے تاکہ 2019 کے عام انتخابات کے پہلے یہ مشینیں ای وی ایم میں لگائی جاسکیں۔وی وی پی اے ٹی مشین یہ دونوں کمپنیاں ہی بناتی ہیں۔ انہیں کمیشن نے ایک تکنیکی ماہر گروپ کی سفارش پر بنایا گیا ہے ۔ الیکشن کمیشن ان مشینوں کی مینوفیکچرنگ اور وقت پر فراہمی کیلئے نگرانی رکھے گا۔چیف الیکشن کمشنر نسیم زیدی نے اس قدم کے بارے میں تفصیلی اطلاع دیتے ہوئے کہاکہ اس سے شفافیت میں اضافہ ہوگا اور ووٹروں کو یہ جاننے کا حق حاصل ہوگا کہ انہوں نے جس پارٹی یا شخص کو ووٹ دیا ہے ، اسے ملا ہے یانہیں۔ اس سے ووٹروں کا آزادانہ اور غیرجانبدارانہ الیکشن کے عمل کے تئیں بھروسہ میں اضافہ ہوگا۔سپریم کورٹ کے حکم اور کمیشن کی سفارش کے مطابق حکومت نے 19 اپریل کو 16 لاکھ 15 ہزار وی وی پی اے ٹی مشینوں کی خریداری کے لئے 3147.47 کروڑ روپئے منظور کئے تھے ۔

About the author

Tariq Hasan