اردو | हिन्दी | English
209 Views
Indian

تین طلاق معاملے پر سپریم کورٹ میں سماعت آج سے

teen
Written by Taasir Newspaper

نئی دہلی، 10مئی (ایجنسی)۔ ٹرپل طلاق، نکاح حلالہ اور ایک سے زیادہ شادیوں کے خلاف دائر درخواست پر آئینی بنچ 11 مئی سے اس اہم معاملے کی سماعت کرے گی. سپریم کورٹ کے چیف جسٹس جے. ایس. کھیہر، جسٹس کورین جوزف، جسٹس آر. ایف. نریمن، جسٹس یو. یو.للت اور جسٹس ایس. عبد ال نذیر کی آئینی بنچ کیس میں سماعت کرے گی. سپریم کورٹ نے گزشتہ سماعت میں تمام فریقین سے بھی رائے مانگی تھی اور کہا تھا کہ سپریم کورٹ 11 مئی کو سب سے پہلے ان سوالوں کو طے کرے گا جن مسائل پر اس معاملے کی سماعت ہونی ہے. سپریم کورٹ نے اگرچہ پہلے ہی صاف کر دیا ہے کہ وہ ٹرپل طلاق، نکاح حلالہ اور کئی شادیوں سے معاملے پر سماعت کرے گا، یعنی کامن سول کوڈ کا معاملہ سپریم کورٹ کی آئینی بنچ کے سامنے نہیں ہے.160مرکزی حکومت دے چکی ہے سوال۔ مرکزی حکومت نے اپنی طرف سے سوال دیے تھے. یہ سوال ہیں۔1. مذہبی آزادی کے حق کے تحت طلاق بدعت (ایک بار میں تین طلاق کہنا)، حلالہ اور کئی شادیوں کی اجازت دی جا سکتی ہے یا نہیں؟2. مساوات کا حق، وقار کے ساتھ جینے کا حق اور مذہبی آزادی کے حق میں ترجیح کس کو دی جائے؟3. کیا پرسنل لاء کو آئین کے آرٹیکل 13 کے تحت قانون تصور کیا جائے گا یا نہیں؟4. کیا طلاق بدعت، نکاح حلالہ اور کئی شادیاں ان بین الاقوامی قوانین کے تحت درست ہے جس پر بھارت نے بھی دستخط کئے ہیں؟بہرحال سپریم کورٹ کے سامنے تمام فریقین کی جانب سے تحریری دلیل پیش کی جا چکی ہے، ایسے میں سپریم کورٹ خود سوال طے کرے گا جن پر سماعت شروع ہوگی.اتراکھنڈ کے کاشی پور کی شاعرہ بانو نے گزشتہ سال سپریم کورٹ میں عرضی دائر کر ایک ساتھ تین طلاق کہنے اور نکاح حلالہ کے چلن کی آئینی حیثیت کو چیلنج کیا تھا. ساتھ ہی مسلمانوں کی کئی شادیوں رواج کو بھی چیلنج کیا تھا. شاعرہ بانو نے ڈسلوشن آف مسلم میریج ایکٹ کو بھی یہ کہتے ہوئے چیلنج کیا کہ مسلم خواتین کو دو شادی (دو شادیوں) سے بچانے میں یہ ناکام رہا ہے. ساعرہ نے اپنی درخواست میں مسلم پرسنل لاء کے تحت خواتین کے ساتھ جنسی امتیاز کے مسئلے، یکطرفہ طلاق اور آئین میں ضمانت کے باوجود پہلے شادی کے رہتے ہوئے مسلم شوہر کی طرف سے دوسری شادی کرنے کے معاملے پر سپریم کورٹ سے غور کرنے کو کہا ہے.سائرہ کی جانب سے داخل عرضی میں کہا گیا کہ اس طرح کا تین طلاق انکے آئینی بنیادی حق کی خلاف ورزی کرتا ہے اور آرٹیکل 14 اور 15 کی خلاف ورزی کرتا ہے. اس کے بعد کئی دیگر عرضی دائر کی گئیں. ایک اور کیس میں سپریم کورٹ کی ڈبل بنچ نے خود نوٹس لیا تھا اور چیف جسٹس سے درخواست کی تھی کہ وہ خصوصی بینچ تشکیل کریں تاکہ امتیازی سلوک کا شکار مسلم خواتین کے معاملے کو دیکھا جا سکے. سپریم کورٹ نے مرکزی حکومت کے اٹارنی جنرل اور نیشنل لیگل سروس اتھارٹی کو جواب داخل کرنے کو کہا تھا اور پوچھا تھا کہ کیا جو مسلم خواتین امتیازی سلوک کا شکار ہو رہی ہیں اسے ان کے اصل حق کی خلاف ورزی نہیں سمجھا جانا چاہئے۔

About the author

Taasir Newspaper