اردو | हिन्दी | English
216 Views
Indian

4 دن سے دہک رہا ہے دارجلنگ

GORKHA
Written by Taasir Newspaper

نئی دہلی، 15جون (سید شمیم احمد)۔ جس دارجلنگ کی شناخت ان کی خوبصورت پہاڑیوں اور سہانے موسم کے لئے ہوتی ہے وہ گزشتہ 4 دنوں سے دہک رہا ہے. اس کی وجہ ہے علیحدہ ریاست کا مطالبہ. گورکھا لینڈ کے نام سے علیحدہ ریاست بنانے کا مطالبہ قریب 110 سال پرانی ہے جو بیچ بیچ میں کئی بار تشدد احتجاج کی شکل لے چکی ہے. اس تحریک کو تازہ چنگاری ملی ہے دارجلنگ کے اسکولوں میں بنگالی زبان سکھانے کے ممتا حکومت کے اعلان سے. اس اعلان کے بعد گورکھا جن مکتی مورچہ نے علیحدہ ریاست کا مطالبہ پھر تیز کر دی. آج پولیس نے گورکھا جن مکتی مورچہ (جی جے ایم) کے سربراہ بمل گرونگ کے کئی ٹھکانوں پر چھاپہ مارا اور بھاری مقدار میں ہتھیار اور کیش برآمد کیا. جی جے ایم نے اس کی مخالفت میں دارجلنگ میں بے میعادی بند کا اعلان کر دیا ہے. وہیں وزارت داخلہ کے ذرائع سے ملی خبروں کے مطابق مرکزی حکومت 19 جون کو اس معاملے میں ریاستی حکومت اور جی جے ایم کے ساتھ ملاقات پر غور کر رہی ہے.مرکزی حکومت نے مغربی بنگال کے دارجلنگ ضلع میں تشدد روکنے اور ریاست میں امن کی بحالی کے لیے نیم فوجی دستے کے 400 اضافی جوان بھیجے ہیں. اس کے ساتھ ہی مرکزی حکومت کی جانب سے مغربی بنگال میں مقامی انتظامیہ کو قانون کی معمول کی حالت بحال کرنے کے لیے بھیجے گئے جوانوں کی تعداد 1400 ہو گئی ہے. وزارت داخلہ کے ایک افسر نے بتایا کہ ریاستی حکومت کی درخواست پر 400 جوانوں کی اضافی ٹکڑی دارجلنگ کے لیے روانہ کی گئی ہے. اس سے پہلے تقریبا 1000 جوان بھیجے جا چکے ہیں. ان میں 200 خاتون فوجی بھی شامل ہیں۔ دارجلنگ کے ایس پی اکھلیش چترویدی کے کہا، “صبح خبر تھی کہ یہاں پر بہت سارے لوگوں کو جمع کیا ہے جی جے ایم نے ایک اسکول کے قریب گیراج میں، گاؤں کے قریب ایک جگہ میں اور پارٹی دفتر میں، تو ہم لوگوں نے اس کی بنیاد پر آج سرخ کرنے کا پلان بنایا تھا، ہم نے 3 جگہوں پر ریڈ کی ہے. ” چھاپوں کے دوران پولیس کو بمل گرونگ کے ٹھکانوں سے بھاری مقدار میں ہتھیار اور کیش ملا. اس میں دھماکہ خیز مواد کے علاوہ، دھاردار ہتھیار بڑی تعداد میں تیر اور خاص طرح کا دھنش ملا. بندوق جیسے نظر آنے والے اس دھنش کو کراس بو کہا جاتا ہے. جی جے ایم کا دعوی ہے کہ یہ ہتھیار تیر اندازی مقابلہ کے لئے جٹائے گئے تھے۔

About the author

Taasir Newspaper