سامعین کے دل میں خاص جگہ بنائی سونو نگم نے

0
12

ممبئی 29 جولائی (یو این آئی) اسٹیج شو سے اپنے کیریئر کا آغاز کر کے کامیابی کی بلندیوں تک پہنچنے والے ہندی سنیما کے مشہور گلوکار سونو نگم اپنے نغموں سے آج بھی سامعین کے دلوں پر راج کر رہے ہیں ۔ سونو نگم کی پیدائش ہریانہ کے فرید آباد شہر میں 30 جولائی 1973 کو ہوئی۔ بچپن سے ہی سونو نگم کا رجحان موسیقی کی طرف تھا اور وہ بھی اپنے والدین کی طرح گلوکار بننا چاہتے تھے ۔ اس سمت میں آغاز کرتے ہوئے انہوں اپنے والد کے ساتھ محض تین سال کی عمر سے اسٹیج پروگراموں میں حصہ لینا شروع کر دیا۔ سونو نگم 19 سال کی عمر میں گلوکار بننے کا خواب لے کر اپنے والد کے ساتھ ممبئی آ گئے ۔ یھاں انہیں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ۔اپنی زندگی گزارنے کے لیے وہ اسٹیج پر محمد رفیع کے گائے گانو کے پروگرام پیش کیا کرتے تھے ۔
سال 1997 میں ہی سونو نگم کو شاہ رخ خان کی فلم ‘پردیس’ میں گانے کا موقع ملا ۔ ندیم شرون کی موسیقی میں انھوں نے ‘یہ دل، دیوانہ’ گیت گا کر نہ صرف اپنی کثیر جہتی صلاحیت کا تعارف دیا بلکہ نوجوانوں کے درمیان بہت مقبول بھی ہوئے ۔ سونو نگم اب تک دو بار فلم فیئر ایوارڈ سے نواز ے جا چکے ہیں۔ سب سے پہلے انہیں ۔2002 میں فلم ساتھیا کے ‘ساتھیا’ گانے کیلئے بہترین گلوکارہ فلم فیئر ایوارڈ دیا گیا۔ اس کے بعد 2003 میں فلم’ کل ہو نہ ہو’ کے گیت’ کل ہو نا ہو’ کے لئے بھی انہیں بہترین گلوکار کے فلم فیئر ایوارڈ کے ساتھ ہی قومی ایوارڈ بھی دیا گیا۔ عامر خان اور شاہ رخ خان جیسے نامور ہیرو کی آواز کہے جانے والے سونو نگم نے تین دہائیوں سے بھی زیادہ طویل کیریئر میں تقریبا ً320 فلموں کے لیے نغمے گائے ہیں۔ انہوں نے ہندی کے علاوہ اردو، انگریزی، تمل ،بنگلہ، پنجابی. مراٹھ¸ ،تیلگو، بھوج پور¸ ، کنڑ، اڈ[؟]یہ، اور نیپالی فلموں میں گانوں کو اپنی سریلی آواز سے سجایا ہے ۔ سونو نگم نے کئی فلموں میں اداکاری بھی کی ھے ۔ انھوں نے جانی دشمن، کا م چور ، استاد¸ استاد سے ، بے تاب ، ھم سے ہے زمانہ اور تقدیر جیسی فلموں میں چائلڈ اسٹار کے طور پر کام کیا ہے اور جانی دشمن ، لو ان نیپال اور کاش آپ ہمارے ہوتے جیسی فلموں میں بھی بطور اداکار کے طور پر کام کرکے ناظرین کو محظوظ کیا ہے ۔ سونو نگم سنگر کے علاوہ سماجی ترقی میں فعال کردار ادا کر رہے ہیں اور بہت سے فلاحی تنظیموں کے رکن بھی ہیں ۔ ان میں کینسر، جذام کے مریضوں اور اندھوں کی فلاح و بہبود کے لیے چلائی جانے والی تنظیم خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔ اس کے علاوہ سونو نگم نے کارگل جنگ اور زلزلے سے متاثرہ خاندانوں اور بچوں کی تخلیق نو کے لئے چلائی جانے والی تنظیم کرے آن میں بھی سرگرم کردار ادا کیا ہے ۔