نہرا اپنے گھریلو میدان میں کریں گے کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان

0
13

نئی دہلی، 12 اکتوبر (یو این آئی) بائیں ہاتھ کے تیز گیند باز آشیش نہرا وہ اعزاز حاصل کرنے جا رہے ہیں جو وریندر سہواگ، راہل دراوڑ اور وی وی ایس لکشمن جیسے بڑے حاصل نہیں کر پائے ۔ دہلی کے 38 سالہ فاسٹ بولر اپنے گھریلو فیروزشاہ کوٹلہ میدان میں آنے والے یکم نومبر کو نیوزی لینڈ کے خلاف ٹوئنٹی 20 میچ کے بعد بین الاقوامی کرکٹ کو الوداع کہہ دیں گے ۔نہرا دنیا کے ان منتخب فعال کرکٹروں میں سے ایک ہیں جنہوں نے 1990 کی دہائی میں اپنا بین الاقوامی کیریئر شروع کیا تھا۔ اس کے ساتھ، وہ گھریلو کرکٹ اور انڈین پریمیئر لیگ کو الوداع بھی کہہ سکتے ہیں ۔ ہندوستانی پریمیئر لیگ نے 2016 میں نہرا کے بین الاقوامی کرکٹ میں واپس آنے میں ایک اہم کردار ادا کیا۔ نہرا کے لئے یکم نومبر کو ان کی زندگی کا سب سے یادگار لمحہ رہے گا جب وہ اپنے گھریلو میدان سے اپنے ٹیم کے ساتھیوں کے درمیان ریٹائرمنٹ لیں گے ۔میدان سے ساتھی کھلاڑیوں کے درمیان ریٹائرمنٹ لینے کی کامیابی سہواگ، دراوڑ اور لکشمن جیسے بڑے کرکٹر بھی حاصل نہیں کر پائے تھے ۔ نہرا نے کہاکہ یہ میرا اپنا فیصلہ ہے ۔دہلی میں کھیلا جانے والا پہلا میچ میرے کیریئر کا آخری بین الاقوامی میچ ہوگا۔ اپنے گھر میں ریٹائرمنٹ سے بڑا کچھ نہیں ہے ۔ 38 سالہ کھلاڑی نے یہ بھی واضح کیا ہے کہ وہ بین الاقوامی کرکٹ سے ریٹائر کے بعد آئی پی ایل میں نہیں کھیلیں گے ۔ انہوں نے کہاکہ اگر میں نے کچھ فیصلے کیے ہیں تو پھر اس کے بارے میں سوچنے کا کوئی سوال نہیں ہے ۔اگر میں ریٹائر ہوتا ہوں تو، آئی پی ایل نہیں کھیلوں گا۔نہرا نے کوچ روی شاستری اور کپتان وراٹ کوہلی کو اپنے فیصلے کے بارے میں بتادیا ہے ۔ نہرا نے 1999میں سری لنکا کے خلاف اپنی ٹیسٹ کیریئر کی شروعات کی۔2003 میں ورلڈ کپ فائنل میں نہرا نے بھی ہندستان کو پہچانے میں ایک اہم کردار ادا کیا تھا ۔ اس ورلڈ کپ میں انگلینڈ کے خلاف زبردست بولنگ کرتے ہوئے ان کے چھ وکٹ تھے ۔ بائیں بازو کے تیز رفتار گیندر نہرا نے اپنے کیریئر میں انجری کے ساتھ جدوجہد کی۔انہوں نے اس سال فروری میں انگلینڈ کے خلاف آخری بین الاقوامی میچ کھیلا ۔ اس وقت وہ آسٹریلیا کے خلاف ہندستان کے ٹوئنٹی 20 ٹیم میں شامل ہیں، تاہم وہ سیریز رانچی اور گوہاٹی میں کھیلے جانے والے پہلے دو میچوں میں کھیلنے کا موقع نہیں مل سکا۔ سیریز کے تیسرا اور آخری میچ جمعہ کو حیدرآباد میں نہرا کے اس اعلان کے بعد، ان کا 18 سالہ بین الاقوامی کیریئر مکمل ہو جائے گا۔ اپنے کیریئر کے دوران، نہرا 12 بار سرجری اور دیگر جھٹکوں سے گزرنا پڑا تھا، لیکن وہ ہر وقت ایک فاتح کے طور پر کھڑے رہے ا ہوا اور انھوں نے میدان میں واپسی کی۔ نہرا اکثر مذاق میں کہتے ہیں کہ زخم ان کے جسم پر نہیں بلکہ جسم ان کا زخموں کے درمیان پھنس کر رہ گیا ہے ۔ دہلی کے نہرا کا کیریئر کافی نشیب و فراز کا شکار رہا ہے ۔ انجری کی وجہ سے ، انہوں نے اپنی جگہ ٹیم میں کبھی نہیں رکھی۔1999 میں نہرا نے اپنا ٹیسٹ کا آغاز کیا تھا، اس وقت سے نہرا نے 17 ٹیسٹ، 120 ون ڈے اور 26 ٹی 20 میچ کھیلے ہیں۔ نہرا نے چھ ہندستانی کپتانوں کی قیادت میں کھیلا ہے ۔. انہوں نے محمد اظہر الدین، سوربھ گنگولی، راہل دراوڑ، انل کمبلے ، مہندر سنگھ دھونی اور وراٹ کوہلی کی ٹیم میں کھیلا ہے ۔انہوں نے ٹیسٹ میں 44 وکٹیں حاصل کی ہیں، ٹوئنٹی 20 میں 34 ون ڈے میں 157 وکٹیں حاصل کی ہیں۔