گجرات کا بحران ختم،وزارت مالیات لے کر مانے پٹیل

0
53
AHMEDABAD, DEC 31 (UNI) Gujarat deputy chief minister Nitin Patel takling to media persons at his residence in Ahmedabad and than taking charge at his office in Gandhinagar on Sunday.UNI PHOTO-32U

احمد آباد، 31 دسمبر (یواین آئی) گجرات میں محکموں کے الاٹمنٹ پر ناراض نائب وزیر اعلی نتن پٹیل گزشتہ دو دنوں سے جاری ‘ہائی وولٹج’ سیاسی ڈرامہ کے بعد آج آخر کار مان گئے اور کہا کہ اعلی کمان نے ان کے احساسات کو سمجھا ہے جس کے سبب وہ آج سے ذمہ داری سنبھالیں گے ۔گذشتہ 26 دسمبر کو وزیر اعلی وجے روپان¸ کے ساتھ حلف لینے کے بعد 28 دسمبر کی رات ایک اور ہائی وولٹج ڈرامہ کے درمیان محکموں کی تقسیم میں ان سے خزانہ، شہری ترقیات اور شہری رہائش اور پٹرو کیمیکل محکمہ لے لیے جانے کے سبب انہوں نے دو دنوں تک عہدہ نہیں سنبھالتے ہوئے باغیانہ تیور اپنا رکھا تھا۔ وہ سرکاری گاڑی بھی استعمال نہیں کر رہے تھے اور راجدھانی گاندھی نگر کے بجائے احمد آبادمیں تھلتیج واقع اپنی رہائشگاہ میں رہ رہے تھے ۔مسٹر پٹیل نے آج صبح یہاں اپنی رہائش گاہ پر پریس کانفرنس میں کہا کہ بی جے پی صدر امت شاہ اور پارٹی کے سینئر لیڈر رام لال، وی ستیش سمیت دیگر لوگوں سے ان کی بات چیت ہوئی۔ وہ ناراض نہیں تھے بلکہ نائب وزیر اعلی اور حکومت میں نمبر دو ہونے کے سبب انہیں زیب دیں، ایسے محکمہ چاہتے تھے ۔یہ بات انہوں نے مسٹر شاہ اور دیگر رہنما¶ں کو بتائی اور قیادت نے ان کی احساس و جذبات کا لحاظ کیا ہے ۔ مسٹر شاہ نے انہیں فون کرکے عہدہ سنبھالنے کو کہا ہے ۔ وزیر اعلی وجے روپان¸ آج دوپہر دو بجے تک گورنر کو انہیں کچھ سیکشن مزید سونپنے کے لئے خط دیں گے ۔ انہیں یہ پتہ نہیں کہ یہ کون سا محکمہ ہوگا۔لیکن انہیں پارٹی قیادت پر مکمل اعتماد ہے ۔انہوں نے کہا کہ وہ بی جے پی سے قبل جن سنگھ کے وقت سے پارٹی سے جڑے ہوئے ہیں۔ وہ 40 سال سے پارٹی میں ہیں ، 25 سال سے وزیر ہیں اور اب دوسری بار نائب وزیر اعلی ہیں۔ لہذا قابل فخر قابل عہدہ چاہتے تھے ۔ وہ بی جے پی کے ہیں اور اس سے الگ ہونے کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا۔ کانگریس پارٹی اس اندرونی معاملے میں سیاسی بات دیکھ رہے تھے ۔ وہ چاہتے تھے کہ میں بی جے پی چھوڑ دوں اور حکومت گر جائے تاکہ ان کی حکومت بن سکے ۔لیکن میں بی جے پی کا آدمی ہوں اور سیاست میں اقتدار کے لئے نہیں نظریہ اور حب الوطنی کے جذبہ سے آیا ہوں۔ وہ پہلے بھی اور ہر بحران میں بی جے پی کے ساتھ رہے ہیں۔ انہوں نے گزشتہ دو دن میں ان سے ملنے والے ہزاروں لوگوں اور حامیوں کا بھی شکریہ ادا کیا۔ مسٹر پٹیل اس کے بعد راجدھانی گاندھی نگر کے لئے روانہ ہو گئے ۔ سمجھا جاتا ہے کہ وہ آج جلد ہی اپنا عہدہ سنبھال لیں گے ۔ ذرائع کے مطابق انہیں دوبارہ وزارت خزانہ یا ان کی خواہش کے مطابق ملائی دار اربن ڈیولپمنٹ ڈپارٹمنٹ دیا جا سکتا ہے ۔ شہر ی ترقیات کے سیکشن کا چارج وزیر اعلی نے اپنے پاس رکھا ہے ۔ وزیر خزانہ کے طور پر سوربھ پٹیل نے کل عہدہ سنبھالا تھا لیکن سمجھاجا رہا ہے کہ انہیں صرف توانائی محکمہ کا ہی انچارج رکھتے ہوئے خزانہ کا چارج واپس نتن پٹیل کو دیا جا سکتا ہے ۔ پچھلی بار کے 115 کے مقابلے میں کمزور اکثریت یعنی 99 سیٹوں کے ساتھ اقتدار میں آئی بی جے پی کے لئے مسٹر پٹیل کی ناراضگی کا دور ہونا بڑی راحت کی بات مانا جا رہا ہے ۔ اس کے ساتھ ہی نئے سال میں گجرات میں بی جے پی کسی بحران کی پوزیشن میں داخل نہیں ہوگی۔ کانگریس حامی’ پاس’ لیڈر ہاردک پٹیل نے انہیں 10 ممبران اسمبلی کے ساتھ بی جے پی چھوڑ کانگریس میں شامل ہونے کا مشورہ دیا تھا اگرچہ مسٹر پٹیل نے آج کہا کہ انہوں نے ہاردک یا کسی دوسرے کو ملنے کے لئے نہیں بلایا تھا۔