اتر پردیش

دنیا مومن کے لیے قید خانہ ہے اور کافروں کے لیے جنت :ریحان قاسمی

Profile photo of Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

دیو بند ،سہارنپور 21جنوری(حافظ محمد ذاکر )موجودہ ہندوستان کے حالات کے تناظر میں اگر یہ کہا جائے کہ مسلمانوں پر ظالم جابر حکمراں مسلط ہیں تو یہ بات بے جا نہیں ہے مسلم حقیقت ہے ،کیونکہ جسطرح کے ہمارے اعمال ویسے ہی آسمانی فیصلہ ،ہم مسلمانوں کو اپنے اعمال کا محاسبہ کرنا چاہئے ،کیونکہ ہماری کامیابی صرف اللہ کے حکم کو ماننے اور نبیﷺ کے طریقہ کو اپنا نے میں ہے ،آج دارالعلوم دیوبند کے ایک طالب علم سے اس سلسلہ ہوئی گفتگو دوران مولانا ریحان نے کہا ۔آج دنیا کس موڑسے گزر رہی ہے ہمیں کچھ بھی خبر تک نہیں ہے ،ہم مسلمان دنیا کی چکا چوند میں ایسے اندھے ہو گئے کہ ہم دنیا میں اپنا آنے کا مقصد ہی بھلا بیٹھے،جب ہم نے اپنے مقصد سے روگردانی کی توکچھ ظالم ہم مسلمان کو ہی دھشت گرد قرار دے رہے ہیں، جب کہ مسلمان امن پسند ہے،آخر ایسا کیوں ہورہا ہے ؟ہم سے وطن پرستی کا ثبوت مانگا جاتا ہے ،ہم مسلمانوں کے ساتھ ایسا ظلم و ستم کیوں ہو رہا ہے ،حلانکہ جب بھی اس ھندوستان کو خون کی ضرورت پڑی گردن ہماری ہی کٹی ،انہو نے کہا ان علماءکرام کے خون تمہیں یاد نہیں کہ جب چاندنی چوک سے لیکر خیبر تک کوئی درخت ایسا نہیں تھا، جس شجر پر ہمارے معزز علماءکرام کی گردن نہ لٹ کی ہو، لیکن آج ہمیں کو حکومت ہند بھی نشانہ پر رکھے ہوئے ہے ، لیکن کچھ افسوس نہیں ؟ اگر ہم اپنے ہی گرہبان میں چھانکے تو معلوم ہوتا ہے کہ ہم بھی کتنے بڑے اغلاط میں مبتلا ہیں ،مجھے کہ لینے دو مجھے آج کلام حق کرنے سے انکار نہ کرو ،مسلما نوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ،اے مسلمان تجھے کچھ خبر بھی ہے کہ تو اپنے نبی (خاتم الانبیاءسرکار دوعالم حضرت محمد مصطفی ﷺکے دین کو بھلا بیٹھا ہے، وہ طائف کا منظر یاد ہے تمہیں جسمیں ہمارے نبی پاک ﷺکے جسم اطہر کو خوں سے لہو لہان کر دیا گیا تھا، مسلمانوں زرا سوچو کہ اس خون کے متعلق تم کیسے آج بازاروں اس کی قیمت لگائے پھرتے ہو، تم دین کا مذاق اڑاتے پھرتے ہو تم جوا کھیلتے شراب پیتے ہو گا نا بجانا کرتے ہو غیر محرم عورتوں سے میل رکھتے ہو تمہیں شرم نہیں آتی ،یہ دین کا مذاق نہیں تو ارو کیا ہے کیا ہمارے نبی ﷺ یہی دین اسلام دیکر گئے ہیں؟، نہیں ہر گز نہیں تم اس چھوٹی سی دنیا کو پانے کیلئے اپنے نبی ﷺ کے دین کو نہ بھولو ورنہ تم نہ ادھر کے رہوگے اور نہ ادھر کے ،مولانا ریحان قاسمی نے کہا ۔نہ خدہی ملا نہ وصلا صنم :نہ ادھر کے رہے اور ادھر کے رہے ہمیہ دنیا مسلمانوں کے لئے صرف کھیتی کرنے کی جگہ ہے ہمارے نبی پاک ﷺکا فرمان ہے دنیا آخرت کی کھیتی ہے یعنی اس دنیا کے چہار دیواری کے اندر تم صرف خدا کا نام لیوا بن جاو کسی غیر کو نہ پکا رو ہر قدم پر خدا کو پکا رو خدا کی عبادت میں تم زیادہ سے زیادہ اپنے اوقات کو لگا دو پھر دیکھو تم پر کون ظلم کرتا ہے کر تا ہے ،ایک مقولہ میرے استاذ محترم کہا کر تے ہیں جس کو اللہ رکھے اس کو کون چکھے،یہ زندگی آج ہے کل نہیں کل نہٰ ہوگی ، ہمارے جسم اور زندگی میں صرف ایک چھوٹی سی ھو ا کا فرق جو سانس کے نام سے جانا جاتا ہے، وہ جس دن خدا کے حکم سے رکے گی تو رکی رہجائے گی، اسلئے ا بھی ہمارے پاس وقت ہے کہ ہم اپنی زندگی کو خدا کے لئے قربان کر دیں ،خدا کے ہر حکم کو بجا لائیں یہی پر بس نہیں بلکہ جب اللہ کے لئے ہمیں جان و مال لٹا نے کی ضرورت پڑے گی تو جا نو مال لٹا نے کو تیا رہیں گے ۔

About the author

Profile photo of Taasir Newspaper

Taasir Newspaper

Skip to toolbar