دہشت گردی کے خلاف فتوے کو پاکستان تک محدود کیسے رکھا جا سکتا ہے: اشرف غنی

0
64

 کابل 19جنوری ( آئی این ایس انڈیا ) افغانستا ن کے صدر اشرف غنی نے پاکستانی علماءکی طرف سے خود ک±ش حملوں کو مذہبی طور پر حرام قرار دینے سے متعلق فتوے کو ہدف تنقید بنایا ہے۔جمعرات کے روز افغان دارالحکومت کابل میں ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے اشرف غنی نے سوال کیا کہ دہشت گردی کے خلاف فتوے کو پاکستان تک محدود کیسے رکھا جا سکتا ہے۔ ا±نہوں نے کہا، ”کیا اسلامی اصول دنیا کے تمام اسلامی ممالک پر نافذ نہیں ہوتے؟ کیا ا±نہیں صرف ایک ملک تک محدود رکھا جا سکتا ہے؟ انہوں نے اسلامی تعلیمات کو کسی ایک ملک تک محدود نہیں کیا جا سکتا کیونکہ یہ آفاقی ہیں۔ا±نہوں نے افغانستان میں طویل عرصے سے جاری عدم استحکام کیلئے پاکستان پر الزام کو دہراتے ہوئے کہا کہ پاکستان افغان طالبان اور ا±س کی عسکری تنظیم حقانی نیٹ ورک کی پشت پناہی کرتا ہے۔ لہذا اس فتوے پر عملدرآمد افغانستان کے حوالے سے کیا جانا چاہیے۔حال ہی میں حکومتِ پاکستان نے ”پاکستان کا پیغام“ کے عنوان سے ایک کتاب شائع کی ہے جس میں مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے 1800 پاکستانی علماءنے خود کش حملوں کو اسلامی اصولوں کے تحت حرام قرار دیا ہے۔ ا±نہوں نے غیر ریاستی گروپوں کی جانب سے جہاد کے نام پر ہونے والے تشدد پر بھی مکمل پابندی کا مطالبہ کیاہے۔پاکستان کے صدر ممنون حسین نے کتاب میں اپنے تاثرات بیان کرتے ہوئے لکھا ہے کہ یہ فتویٰ اسلامی ریاست میں استحکام کیلئے مضبوط بنیاد فراہم کرتا ہے۔ ا±نہوں نے مزید کہا کہ پاکستان میں لوگ اسلامی اصولوں کے مطابق انتہا پسندی کو روکنے کیلئے ایک قومی بیانیے کی تیاری کیلئے اس فتوے سے راہنمائی حاصل کر سکتے ہیں۔تاہم اشرف غنی نے کہا کہ افغان طالبان جیسے گروپوں کی حمایت کر کے پاکستان اپنے ہمسایہ اسلامی ملک کو غیر مستحکم کر رہا ہے۔ ا±دھر پاکستان کے وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کہا ہے کہ تمام مکاتب فکر کے علماءکی طرف سے متفقہ طور پر یہ فتویٰ جاری کرنے سے یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ ہم نے ہر قسم کی دہشت گردی کو مکمل طور پر مسترد کر دیا ہے۔ ا±نہوں نے کہا کہ اس فتوے سے دنیا بھر کے اسلامی ممالک کی حوصلہ افزائی ہو گی کہ وہ استحکام پیدا کریں اور مستقبل میں مثبت ترقی کی جانب پیش رفت کریں۔