فلسطینی مزاحمت کاروں کی ’سزائے موت‘ کے اسرائیلی قانون پر غور

0
12

ش مقبوضہ بیت المقدس 3جنوری ( آئی این ایس انڈیا )اسرائیل کے عبرانی ذرائع ابلا غ کے مطابق کنیسٹ(پارلیمنٹ) آج بدھ کو ’قانون تعزیرات‘ میں ترمیم کی تجویز پرغور کررہی ہے۔ اس قانون کے تحت اسرائیلی ریاست کے خلاف مزاحمت کارروائیوں میں حصہ لینے کی پاد اش میں قید فلسطینیوں کو سزائے موت دی جاسکے گی۔یہ قانون ایک ایسے وقت میں زیربحث ہے جب حال ہی میں اسرائیلی وزیر دفاع لائبرمین نے فلسطینی مزاحمت کار 19 سالہ عمر العبد کو تین یہودی آباد کاروں کو چاقو کے وار سے ہلاک کر نے کے الزام میں پھانسی دینے کا مطالبہ کیا تھا۔ اسرائیلی فوج نے حملہ آور عمر العبد کو حراست میں لے لیا تھا۔ اس کے خلاف مقدمہ کی کارروائی جاری ہے موجودہ پالیسی کے تحت اسے کئی بار عمر قید کی سزا کا امکان ہے۔ تاہم صہیونی وزیر دفاع اور شدت پسند یہودی لیڈر ا?وی گیڈور لائبر مین نے العبد کو سزائے موت دینے کا مطالبہ کیا ہے۔خیال رہے کہ اسرائیلی وزیر دفاع کی طرف سے یہ مطالبہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب کل بدھ کو اسرائیلی پارلیمنٹ نے لائبرمین کی جماعت ’اسرائیل بیتنا‘ کی طرف سے پیش کیے گئے ایک مسودہ قانون پر بحث شروع کی ہے جس میں یہودی آبادکاروں اور فوجیوں کے قتل کے الزام میں گرفتار فلسطینی مزاحمت کاروں کو سزائے موت دینے پر غور کیا جا رہا ہے