سہواگ نے مجھے منتخب کر کے آئی پی ایل کو بچا لیا:گیل

0
838

موہالی، 20 اپریل (یو این آئی ) آئی پی ایل 11 کے پہلے سنچری میکر بنے کنگز الیون پنجاب کے کیریبین کھلاڑی کرس گیل نے کہا ہے کہ ٹیم کے ڈائریکٹر وریندر سہواگ نے آخری وقت پر انہیں خرید کر ٹورنامنٹ کو بچا لیا ہے ۔فروری میں ہوئی کھلاڑیوں کی نیلامی میں دو مواقع پر گیل بغیر بکے رہے تھے لیکن آخری وقت میں سہواگ نے انہیں خرید کرپنجاب میں شامل کر لیا۔ گیل نے پنجاب کے آخری دو میچوں میں ٹیم کے لئے 63 اور ناٹ آ¶ٹ 104 رنز کی طوفانی اننگز کھیلی اور مین آف دی میچ بنے ۔ حیدرآباد کے خلاف گزشتہ میچ میں کیریبین بلے باز نے ٹورنامنٹ کی 21 ویں سنچری لگائی جس میں 11 چھکے شامل تھے ۔ گیل فی الحال سب سے زیادہ ٹوئنٹی 20 رنز کے معاملے میں سب سے اوپر ہیں۔ان کی یہ آئی پی ایل میں کل چھٹی اور 11 ویں ورژن کی پہلی سنچری تھی۔ میچ کے بعد بلے باز نے کہا کہ میں کھیلنے کو لے کر ہمیشہ پرعزم رہتا ہوں۔بہت سے لوگوں کو لگتا ہے کہ کرس کو اب کافی کچھ ثابت کرنا ہے اور انہوں نے مجھے نیلامی میں بھی نہیں خریدا۔لیکن میں کہوں گا کہ سہواگ نے آخری وقت پر مجھے خرید کر آئی پی ایل کو بچا لیا۔ طویل عرصے تک وراٹ کوہلی کی کپتانی والی رائل چیلنجرز بنگلور کا حصہ رہے گیل کو 11 ویں ورژن کے لئے ان کی ٹیم نے نہ تو رٹین کیا اور نہ ہی نیلامی میں خریدا تھا۔انہوں نے کہا کہ مسلسل دوسری بار مین آف دی میچ بننا اچھی شروعات ہے ۔ ویسٹ انڈیز کے بلے باز نے ساتھ ہی کہا کہ سہواگ نے انہیں فٹنس پر توجہ دینے کے علاوہ یوگا اور مالشیے کے ساتھ خود پر کام کرنے کے لیے مشورہ دیا ہے ۔لیکن ساتھ ہی کھلاڑیوں کو کھل کر کھیلنے کے لیے بھی کہا ہے ۔گیل جہاں موجودہ ورژن میں پہلے سنچری میکر بنے وہیں ان کی ٹیم کے لوکیش راہل نے 14 گیندوں میں سب سے تیز رفتار 50 رن بنائے ۔ گیل نے کہا کہ سہواگ نے سب سے پہلی بات ہم سے کہی تھی کہ کھل کر کھیلیں۔ہمیں ٹیم میں مہم جوئی، آزادی اور کھل کر کھیلنے پر توجہ دینا ہے ۔ہم بلے باز ہیں جو میدان پر کھل کر کھیلتے ہیں ۔ طویل وقت تک آئی پی ایل میں مختلف فرنچائزیز کے لیے کھیل چکے ویسٹ انڈیز کے کھلاڑی نے کہا کہ میں آئی پی ایل میں کافی وقت سے کھیل رہا ہوں اور مختلف کنڈیشنز سے واقف ہوں۔ میں ٹیموں کی اسکیمیں جانتا ہوں اور اسی سے میرا کام آسان ہو جاتا ہے ۔میں اب حریف ٹیموں کو آسانی سے سمجھتا ہوں۔ گیل نے ساتھ ہی کمنٹیٹر کیون پیٹرسن کے انہیں زیادہ عمر کا کہے جانے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ میری عمر کافی ہو گئی ہے لیکن اس میچ کے بعد اب میرے پاس کچھ بھی ثابت کرنے کے لیے نہیں بچا ہے ۔آئی پی ایل میں اور دنیا بھر میں تمام لوگ آپ کے نام کا احترام کرتے ہیں۔انہوں نے مضحکہ خیز لہجے میں حریف ٹیموں کو محتاط کرتے ہوئے بھی کہا کہ سب اب ان کے نام کو یاد رکھیں اور ان کا احترام کریں۔