دنیا بھر سے

شمالی کوریا-امریکہ کے بیچ ہوا سمجھوتہ، ٹرمپ بولے، کم کو بلائیں گے وائٹ ہاؤس

Profile photo of Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 12-June-2018

شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان اور امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے درمیان تاریخی بات چیت ختم ہوگئی ہے۔  میٹنگ کے بعد دونوں رہنماوں نے کچھ اہم سمجھوتوں پر دستخط کیے۔ کن مدعوں پر سمجھوتہ کیا گیا اس کی اطلاع بعد میں دی جائے گی۔ اس موقع پر ٹرمپ نے کہا کہ، “مجھے لگتا ہے کہ شمالی کوریا اور کوریائی جزیرہ نما کے ساتھ ہمارے تعلقات بدلنے والے ہیں۔ یہ پرانے جیسے نہیں رہیں گے۔”

ٹرمپ نے نیوکلیائی ہتھیاروں کے ختم کرنے  پر کم جونگ ان کے ساتھ  سمجھوتہ پر دستخط کرنے کو لے کر بھی اشارہ دیا ہے۔  انہوں نے کہا، “جن دستاویزات پر دستخط کئے گئے ہیں اس سے دنیا کی خطرناک چیزوں سے لوگوں کو نجات ملے گی۔

اہم معاہدے پر دستخط کرنے کے بعد جب امریکی صدر ٹرمپ سے پوچھا گیا کہ کیا وہ شمالی کوریائی رہنما کم جونگ ان کو وائٹ  ہاؤس بلائیں گے؟ اس کے جواب میں ٹرمپ نے کہا کہ وہ انہیں ضرور بلائیں گے۔

اس سے پہلے ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ نے منگل کو سنگاپور کے سینٹوسہ جزائر میں واقع کیپیلا ہوٹل میں تاریخی سربراہی اجلاس کی شروعات کی تھی۔ دونوں رہنماؤں نے یہاں سینٹوسہ جزیرے کے كیپیلا ہوٹل میں مسکرا کر اور آپس میں ہاتھ ملا کر اس تاریخی ملاقات کا آغاز کیا۔ کم جونگ نے ٹرمپ سے ہاتھ ملاتے ہوئے کہا، “آپ سے مل کر اچھا لگا مسٹر صدر‘‘۔ مسٹر ٹرمپ نے بھی مسکرا کر کم جونگ ان کو سلام کیا۔ امریکی صدر نے کہا، “میں بہت اچھا محسوس کر رہا ہوں، ہمارے درمیان شاندار بات چیت ہونے والی ہے اور مجھے امید ہے کہ یہ ملاقات کافی کامیاب رہے گی۔ میرے لئے یہ بہت اعزاز کی بات ہے اور مجھے اس میں کوئی شک نہیں کہ ہمارے درمیان بہترین تعلقات قائم ہوں گے‘‘۔

About the author

Profile photo of Taasir Newspaper

Taasir Newspaper

Skip to toolbar