سیاست سیاست

راجیو قتل معاملےکے قصورواروں کی رہائی کی تجویز مسترد

Profile photo of Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 11-July-2018

نئی دہلی، 10 اگست (یو این آئی) مرکز نے تمل ناڈو حکومت کی اس تجویز کی حمایت نہیں کی ہے جس میں سابق وزیر اعظم راجیو گاندھی قتل معاملےکے سات مجرموں کو رہا کرنے کی اپیل کی گئی تھی۔سپریم کورٹ کے جسٹس رنجن گگوئی، جسٹس نوین سنہا اور جسٹس کے ایم جوزف کی تین رکنی بینچ کے سامنے وزارت داخلہ کی جانب سے اس سے متعلق دستاویزات پیش کی گئی تھیں۔ بینچ نے جمعہ کو دستاویزات کاجائزہ لینے کے بعد سماعت ملتوی کر دی۔مرکزی حکومت کی جانب سے بینچ کو بتایا گیا ہے کہ وہ تمل ناڈو حکومت کی اس تجویز کی حمایت نہیں کرتی ہے جس میں راجیو گاندھی قتل کے سات مجرموں کو رہا کرنے کی اپیل کی گئی تھی۔ وزارت داخلہ کے دستاویزات میں کہا گیا ہے قتل کے قصورواروں کو معافی دیے جانے سےخطرناک روایت کا آغاز ہوگا اور اس سے ‘بین الاقوامی نتائج برآمد ہوں گے۔دستاویزات میں کہا گیا ہے کہ نچلی عدالت نے قصورواروں کو موت کی سزا دینے کے بارے میں ‘ٹھوس وجہ دیئے ہیں۔ اس میں کہا گیا ہے کہ عدالت عظمی نے بھی اس قتل کو ملکمیں ہوئے جرائم میں سب سے زیادہ نفرت انگیز قرار دیا تھا۔سابق وزیر اعظم کی 21 مئی 1991 کو تامل ناڈو کے شري پیرمبدور میں ایک خودکش دھماکے میں اس وقت قتل کر دیا گیا تھا جب وہ ایک انتخابی ریلی سے خطاب کرنے پہنچے تھے۔ خودکش دھماکہ ایک خاتون نے کیا تھا جس کی شناخت دھنوکے طور پر ہوئی تھی۔ اس حادثے میں دھنو کے علاوہ 14 دیگرافراد بھی مارے گئے تھے۔تمل ناڈو حکومت نے 2016 میں خط لکھا تھا۔سپریم کورٹ نے 23 جنوری کو مرکزی حکومت سے اس پر تین ماہ کے اندر فیصلہ کرنے کو کہا تھا۔اس قتل میں وی شري هرن عرف مروگن، ٹی ستیندرراجا عرف سنتھم، اے جی پیراریولن عرف اریوو، رابرٹ پایس پی روی چندرن، جےکمار اور نلینی جیل میں ہیں۔ سپریم کورٹ نے 18 فروری 2014 کو تین مجرموں مروگن، سنتھم اور پیراریولن کی رحم کی درخواستوں پر فیصلہ لینے میں تاخیر ہونے کی وجہ سے ان کی پھانسی کی سزا کو عمر قید میں تبدیل کر دیا تھا۔

About the author

Profile photo of Taasir Newspaper

Taasir Newspaper

Skip to toolbar