اردو | हिन्दी | English
163 Views
Indian

GSAT۔9 کامیابی سے لانچ، ساؤتھ ایشیا کے ممالک کو ملا مودی کا ’آسمانی گفٹ‘

mo
Written by Taasir Newspaper

نئی دہلی، 5 مئی.(پی ایس آئی)بھارتی خلائی تحقیق تنظیم (اسرو) نے جمعہ کو شریہرکوٹا سے پی ایم نریندر مودی کے ساؤتھ ایشیا کے 7 پڑوسی ممالک کو ‘آسمانی گفٹ’ مواصلاتی مصنوعی سیارہ GSAT۔9 کو کامیابی سے لانچ کیا. مئی 2014 میں اقتدار میں آنے کے بعد پی ایم مودی نے اسرو کے سائنسدانوں سے سارک سیٹلائٹ بنانے کی اپیل کی تھی جو پڑوسی ممالک کو ‘بھارت کی جانب سے تحفہ’ کے طور پر دیا جا سکے. پی ایم نریندر مودی نے سیٹلائٹ کے کامیاب لانچ کے لئے سائنسدانوں کو مبارک باد دی ہے. اس سیٹلائٹ سے بھارت کے سات ہمسایہ ممالک نیپال، بھوٹان، افغانستان، بنگلہ دیش، مالدیپ، سری لنکا کو مواصلات اور ڈیزاسٹر مینجمنٹ میں بڑی مدد ملے گی. یہ سیٹلائٹ ساؤتھ ایشیا میں اپنا غلبہ قائم کرنے کی ہندوستان کی سفارت کاری کے طور پر بھی دیکھا جا رہا ہے.450 کروڑ روپے کی لاگت سے مواصلاتی مصنوعی سیارہ GSAT۔9 کو اسرو نے پونے تین سال کی محنت کے بعد تیار کیا ہے. پی ایم مودی نے 30 اپریل کو ‘من کی بات’ پروگرام میں اعلان کیا تھا کہ جنوبی ایشیا سیٹلائٹ اپنے پڑوسی ممالک کو ہندوستان کی طرف سے ‘قیمتی تحفہ’ گے. سیٹلائٹ کو اسرو کے جی ایس ایل وی۔ایف 09 راکٹ سے پروجیکشن کیا گیا. GSAT۔9 بھارت کے پڑوسی ممالک کے درمیان بات چیت میں مددگار ثابت ہو گی. اس سیٹلائٹ کی قیمت 235 کروڑ روپے ہے، جبکہ پورے منصوبے پر 450 کروڑ روپے خرچ ہوئے ہیں.یہ مصنوعی سیارہ 12 سال تک کی اطلاعات فراہم کرے گا۔آٹھ سارک ممالک میں سے سات ملک اس منصوبے کا حصہ ہیں. سارک ملک میں بھارت، پاکستان، بنگلہ دیش، سری لنکا، نیپال، مالدیپ اور بھوٹان شامل ہیں. بتا دیں کہ پاکستان نے یہ کہتے ہوئے اس سے باہر رہنے کا فیصلہ کیا کہ اس کا اپنا خلائی پروگرام ہے. یہ مصنوعی سیارہ خلاء کی بنیاد پر ٹیکنولاجی کے بہتر استعمال میں مدد کرے گا .وزارت خارجہ کے ترجمان گوپال باگلے نے کچھ دن پہلے بتایا تھا کہ بھارت اپنے پڑوسیوں کے لئے اپنا دل کھول رہا ہے. اس منصوبہ میں کسی دیگر پڑوسی ملک کا کوئی بھی خرچہ نہیں ہوگا. اس مواصلاتی مصنوعی سیارہ کے ‘تحفہ’ کا خلائی دنیا میں کوئی اور سانی نہیں ہے. فی الحال جتنے بھی علاقائی یونین ہیں، وہ پیشیور ہیں، اور ان کا مقصد منافع کمانا ہے.

About the author

Taasir Newspaper