دنیا بھر سے

امریکہ نے فلسطینی مشن کے دفتر کی بندش کا فیصلہ کر لیا : صائب عریقات

Profile photo of Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 11-September-2018

واشنگٹن ،10ستمبر ( اے یوایس ) تنظیم آزادی فلسطین PLO کی مجلس عاملہ کے سکر یٹری جنر ل صائب عریقات نے واشنگٹن میں فلسطینی مشن کے دفتر کی بندش سے متعلق امریکی انتظا میہ کے فیصلے کی تصدیق کی ہے۔پیر کے روز ایک اخباری بیان میں عریقات نے اسے قابض اسرائیلی نظام اور اس کے جرائم کو بچانے کے واسطے ایک دانستہ اقدام اور سوچی سمجھی جارحیت قرار دیا جس کے بھیانک سیاسی نتائج ہوں گے ۔فلسطین کی سرکاری خبر رساں ایجنسی WAFA کے مطابق عریقات نے بتایا کہ ’ہمیں سرکاری طور پر اس بات سے آگاہ کر دیا گیا ہے کہ امریکی انتظامیہ واشنگٹن میں ہمارے سفارت خانے کو بند کر دے گی۔ یہ کارروائی ہمارے بین الاقوامی جرائم کی عدالت کے ساتھ مل کر اسرائیل کے جنگی جرائم کے خلاف کام کرنے کے سبب کی جا رہی ہے۔ واشنگٹن میں فلسطینی پرچم کو اْتار دیا جا ئے گا۔ یہ امن اور انصاف کے خلاف ٹرمپ انتظامیہ کا ایک نیا دھچکا ہو گا۔ یہاں تک ہی نہیں بلکہ امریکی انتظامیہ بین الاقوامی جرائم کی عدا لت کو بلیک میل بھی کر رہی ہے اور بین الاقوامی سطح پر انصاف کو یقینی بنانے والے اس فورم کو بھی دھمکا رہی ہے‘۔عریقات نے واضح کیا کہ فلسطینی اتھارٹی امریکہ میں رہنے والے فلسطینیوں کی قونصل خانے کی خدمات تک رسائی محفوظ بنانے کے لیے مطلوبہ اقدامات کرے گی”۔امریکی اخبار “وال اسٹریٹ جرنل’نے بتایا تھا کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ پیر کے روز واشنگٹن میں پی ایل او کے مشن کا دفتر بند کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ اخبار کے مطابق اس حوالے سے فیصلے کا اعلان امریکی قومی سلامتی کے مشیر جان بولٹن کر یں گے۔ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ ’امریکا ہمیشہ اپنے دوست اور حلیف اسرائیل کے ساتھ کھڑا رہے گا اور (پی ایل او کا) یہ دفتر اْس وقت تک بند رہے گا جب تک فلسطینیوں کی جانب سے اسرائیل کے ساتھ براہ راست مذاکرات شروع کرنے سے انکار کیا جاتا رہے گا‘۔اس کے مقابل امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ نے پیر کے روز بتایا ہے کہ امریکی اقدام اْن اقدامات کی کڑی ہے جن کا اعلان جان بولٹن کی جانب سے کیا جائے گا۔ بولٹن کا یہ اعلان اْن تنظیموں اور ممالک کے خلاف ہو گا جو جرائم کی بین الاقوامی عدالت میں اس دعوے کے ساتھ امریکا کے خلاف قانونی کارروائی کرنا چاہتے ہیں کہ اْس نے افغانستان میں جرائم کا ارتکاب کیا۔ٹرمپ انتظامیہ نے نومبر 2017ء میں واشنگٹن میں پی ایل او کے مشن کے دفاتر کی بندش کے فیصلے کا اعلان کیا تھا۔ یہ پیش رفت فلسطینی صدر کی جانب سے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں خطاب کے دوران کیے گئے اْس مطالبے کے بعد سامنے آئی جس میں محمود عباس کا کہنا تھا کہ اسرائیل کے خلاف فوجداری تحقیق کا آغاز کیا جائے۔

About the author

Profile photo of Taasir Newspaper

Taasir Newspaper

Skip to toolbar