کھیل

انضام الحق پر بیٹے کو جونئیر ٹیم میں منتخب کرانے کے لیے اثر و رسوخ کے استعمال کا الزام

Profile photo of Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 14-September-2018

لاہور ، ( یو این آئی )پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیف سلیکٹر انضام الحق پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ انہوں نے اپنے بیٹے کو جونئیر ٹیم منتخب کرانے کے لیے اپنا اثر و رسوخ استعمال کیا، تاہم ان کی جانب سے اس الزام کی تردید کردی گئی ہے۔سابق چیف سلیکٹر عبدالقادر نے تنازع کو اٹھاتے ہوئے الزام عائد کیا ہے کہ مجھے باسط علی نے بتایا کہ انہیں انضمام الحق نے اپنے بیٹے ابتسام الحق کو قومی جونیئر ٹیم میں شامل کرنے کی درخواست کی تھی۔تاہم انضام الحق اور باسط علی کی جانب سے عبدالقادر کے الزامات کی تردید کی گئی جبکہ انضام الحق کے درینہ دوست محمد یوسف نے بھی ان کی حمایت میں بات کی۔جونئیر سلیکشن کمیٹی کے چیئرمین باسط علی کا کہنا ہے کہ انضمام الحق نے اپنے بیٹے کی سلیکشن کے حوالے سے انہیں فون نہیں کیا، جبکہ انضمام کا کہنا ہےکہ بیٹے کی سفارش کا مطلب ہے کہ میں عہدے سے انصاف نہیں کر رہا۔اپنے ایک ویڈیو پیغام میں انضمام الحق نے چیئرمین پی سی بی احسانی مانی سے مطالبہ کیا کہ وہ اس معاملے کی تحقیقات کروائیں اور اگر وہ اس میں قصوروار ہوتے ہیں تو انہیں سزا دی جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ میں یہ ریکارڈ کے لیے بتادوں کہ میں نے جونئیر سلیکشن کمیٹی کے کسی بھی رکن سے رابطہ نہیں کیا۔چیف سلیکٹر جونیئر ٹیم باسط علی نے بھی ملے جلے ردِ عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ چیئرمین پی سی بی سے درخواست کریں گے کہ جھوٹی خبریں پھیلانے والوں کی سزا کو یقینی بنانے کے لیے اس معاملے کی تحقیقات کی جائے۔ریکارڈ ساز ٹیسٹ بلے باز محمد یوسف نے بھی الزامات کی انکوائری کرانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ تحقیقات ثابت کردے گی کہ انضمام الحق ٹھیک بول رہے تھے۔

About the author

Profile photo of Taasir Newspaper

Taasir Newspaper

Skip to toolbar