داڑھی کی وجہ سے بیرون ملک شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑتا ہے:علیم ڈار

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 03-September-2018

لاہور، 02 ستمبر (یو این آئی ) پاکستانی کرکٹ امپائر علیم ڈار کا کہنا ہے کہ مجھے داڑھی کی وجہ سے بیرون ملک شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑتا ہے، امیگریشن پر روک کر میری تلاشی لی جاتی ہے۔آئی سی سی پینل میں شامل پاکستانی امپائر علیم ڈار نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےکہا کہ تلاشی کے دوران جب امیگریشن عملے کو کچھ نہیں ملتا تو انہیں شرمندگی ہوتی ہوگی، فخر ہے کہ داڑھی کی وجہ سے پاکستان کا سفیر بن گیا ہوں۔یاد رہے کہ اس سے قبل ایک سوال کے جواب میں انہوں نے داڑھی رکھنے کے راز سے پردہ اٹھاتے ہوئے کہا تھا کہ جنوبی افریقہ کے بلے باز ہاشم آملہ نے داڑھی رکھنے کی درخواست کی اور اس کی اہمیت کو اجاگر کیا، ہاشم آملہ نے مجھے داڑھی رکھنے کی طرف مائل کرتے ہوئے گزارش کی کہ داڑھی رکھ لیں، افریقی بلے باز کی اس بات نے بہت متاثر کیا جس کے بعد میں نے داڑھی رکھنے کا فیصلہ کیا۔علیم ڈار نے پسندیدہ امپائر کے حوالے سے پوچھے جانے والے سوال کے جواب میں کہا کہ ویسٹ انڈیز سے تعلق رکھنے والے امپائرا سٹیو بکنر کی امپائرنگ نے ہمیشہ متاثر کیا بلکہ وہی میرے پسندیدہ ترین امپائر ہیں۔پاکستانی امپائر علیم ڈار نے اب تک تقریباً 400 بین الاقوامی میچوں میں امپا ئرنگ کے فرائض انجام دیئے ہیں۔علیم ڈار نے اپنے امپائر نگ کیریئر کا انٹرنیشنل ڈیبیو 2000 میں پاکستان اور سری لنکا کے درمیا ن میچ سے کیا اور 18 سالہ کیریئر میں وہ لگاتار تین سال 2009، 2010 اور 2011 میں آئی سی سی کے بہترین امپائر قرار پائے تھے ۔پاکستانی امپائر کے علاوہ جنوبی افریقہ کے روڈی کرٹزن 331، ویسٹ انڈیز کے اسٹیو بکنر اور نیوزی لینڈ کے بلی باؤڈن 309 ۔309 انٹرنیشنل میچوں میں امپائرنگ کا اعزاز رکھتے ہیں۔