شام کو ایس -300 میزائل نظام کی سپلائی سے خطے میں خطرات بڑھیں گے: نیتن یاہو

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 26-September-2018

مقبوضہ بیت المقدس/ماسکو،(پی ایس آئی)اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے روسی صدر ولادی میر پوتین سے کہا ہے کہ ہتھیاروں کے جد ید نظام کو ’’ غیر ذمے دار کھلاڑیوں‘‘ کے حوالے کرنے سے خطے میں خطرات میں اضافہ ہوگا۔ اسرا ئیلی وزیر اعظم کے دفتر کے مطابق نیتن یاہو نے روس کی جانب سے شام کو زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل نظام ایس 300 مہیا کرنے کے اعلان کے بعد سوموار کو صدر ولادی میر پوتین سے فون پر گفتگو کی ہے اور انھیں اپنے خدشات سے آگاہ کیا ہے۔ انھوں نے یہ بھی کہا ہے کہ اسرائیل اپنی سکیورٹی اور مفادات کا تحفظ جاری رکھے گا۔انھوں نے صدر پوتین کے ساتھ دونوں ملکوں کی مسلح افواج کے درمیان روابط جاری رکھنے سے بھی اتفاق کیا ہے۔روس نے شام میں اپنے ایک فوجی طیارے کی تباہی کے ایک ہفتے کے بعد اپنے اتحادی ملک کو میزا ئل نظام مہیا کرنے کا ا علان کیا ہے۔یہ رو سی طیارہ غلطی سے شامی فوج نے مار گرایا تھا لیکن روس نے اسرائیل کو اس طیارے کی تبا ہی کا بالواسطہ ذمے دار قرار دیا تھا کیونکہ اس وقت ایک اسرائیلی طیارہ بھی شامی علا قے پر حملے کیلئے فضائی علاقے میں مو جود تھا جبکہ اسرائیل نے شام کو مورد الزام ٹھہرایا تھا ۔ اسرائیل ایک عرصے سے روس پر یہ زور دے رہا ہے کہ وہ شام کو ایس 300 میزائل دفاعی نظام فروخت نہ کر ے ۔اس کو یہ خد شہ لاحق ہے کہ اس کی وجہ سے اسرائیلی فو ج شام میں ایران اور حزب اللہ کی فورسز کو ا پنے فضائی حملوں میں نشانہ نہیں بنا سکے گی ۔روسی وزیر دفاع سرگئی شوئیگو نے واضح کیا ہے کہ ماسکو ماضی میں شام کو یہ میز ائل دفاعی نظام فروخت نہ کرکے اسرائیل کو ممنون احسان کرتا رہا ہے مگر گذشتہ ہفتے طیارے کی تباہی میں پندرہ روسی فوجیوں کی ہلاکت کے بعد وہ اپنے فوجیوں کے تحفظ کیلئے منا سب جوابی اقدامات پر مجبور ہوگیا ہے۔