گرمی اور ملمین کو قابو کر جوکووچ سیمی فائنل میں

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 07-September-2018

نیویارک، (یو این آئی ) ومبلڈن چمپئن سربیا کے نوواک جوکووچ نے 20 بار کے گرینڈ سلیم چمپئن راجر فیڈرر کو شکست دینے والے آسٹریلیا کے جان ملمین کو تیز گرمی میں 6-3 6-4 6-4 سے قابو کر سال کے آخری گرینڈ سلیم یو ایس اوپن ٹینس ٹورنامنٹ کے سیمی فائنل میں داخلہ حاصل کر لیا۔جوکووچ کا سیمی فائنل میں جاپان کے کیئی نشیکوری سے مقابلہ ہوگا جنہوں نے کروشیا کے مارن سلچ کو 2-6 6-4 7-6 4-6-6-4 سے شکست دے کر ان سے 2014 کے فائنل میں شکست کا بدلہ چکا لیا۔یو ایس اوپن میں دو بار چمپئن رہ چکے جوکووچ کو آرتھر ایش اسٹیڈیم میں گرمی سے جدوجہد کی لیکن انہوں نے صبرو تحمل بنائے رکھتے ہوئے ملمین کو ایک اور الٹ پھیر کرنے کا موقع نہیں دیا۔ جوکووچ کو پہلے سیٹ میں ایک بریک پوائنٹس کا سامنا کرنا پڑا لیکن انہوں نے یہ سیٹ ایک گھنٹے میں جیت کر ملمین پر دباؤ بنا دیا۔جوکووچ نے میچ جیتنے کے بعد کہاکہ حالات بہت مشکل تھے۔ آدھی رات میں تقریبا تین گھنٹے تک کھیلنا قطعی آسان نہیں ہے۔ جان کو کریڈٹ جاتا ہے کہ انہوں نے جدوجہد کرنے کا جذبہ دکھایا۔ملمین اپنے آبائی مقام برسبین کی گرمی کے عادی ہیں لیکن دوسرے سیٹ میں 2-2 کے اسکور پر ان کے کپڑے تبدیل کرنے کے لئے باہر جانا پڑا۔ انہوں نے امپائر کو بتایا کہ انہیں جیب میں گیند کو رکھنے میں پریشانی ہو رہی ہے کیونکہ ان کا شارٹس پسینے سے بری طرح بھیگ چکا ہے۔امریکی ٹینس یونین نے بھی ایک بیان جاری کر کہا کہ ملمین اتنا پسینہ بہا رہے تھے کہ کورٹ پر مسلسل گرتے پسینے کے قطرے سے کورٹ پر پھسلن ہو رہی تھی اور کورٹ خطرناک ہو رہا تھا۔ لیکن یہ صورت حال دونوں کھلاڑیوں کے لئے ایک جیسی تھی۔ملمین نے گزشتہ میچ میں سوئٹزرلینڈ کے راجر فیڈرر کو شکست دے کر تہلکہ مچایا تھا۔ لیکن ان کے پاس سربیا کے کھلاڑی کی سروس کا کوئی جواب نہیں تھا۔ میچ میں لمبی ریلیاں چلیں اور 57 ریلیاں تو نو شاٹ سے زیادہ کی تھیں۔ جوکووچ نے دو گھنٹے 48 منٹ میں یہ مقابلہ جیتا۔اس دوران جاپان کے نشیکوری نے سلچ سے چار سال پہلے یہاں فائنل میں شکست کا بدلہ پانچ سیٹ کے جدوجہد میں جیت کے ساتھ چکایا۔ جاپان کے لئے یہ دن تاریخی رہا کیونکہ جاپان کی ناومی اوساکا نے یوکرائن کی لیسيا سرینکو کو 6-1 6-1 سے شکست دے کر سیمی فائنل میں جگہ بنا لی ہے۔ یہ پہلا موقع ہے جب جاپان کے مرد اور خاتون کھلاڑی نے ایک ہی گرینڈ سلیم کے سیمی فائنل میں جگہ بنائی ہے۔نشیکوری نے کہاکہ یہ دیکھنا خوشگوار ہے کہ جاپان کے مرد اورخاتون کھلاڑی ایک ہی گرینڈ سلیم کے سیمی فائنل میں پہنچے ہیں۔ اوساکا کے لئے یہ بڑا موقع ہے اور مجھے لگتا ہے کہ وہ اب خطاب بھی جیت سکتی ہے۔اوساکا کا سیمی فائنل میں 14 ویں سیڈ امریکہ کی میڈیسن کیز سے مقابلہ ہوگا جنہوں نے دیگر کوارٹر فائنل میں 30 ویں سیڈ کارلا سواریز نوارو کو مسلسل سیٹوں میں 6-4 6-3 سے شکست دی۔ کیز گزشتہ سال فائنل میں ہم وطن سلوین اسٹیفنز سے ہار گئی تھیں۔ کیز کا اوساکا کے خلاف 3-0 کا کریئر ریکارڈ ہے۔ اوساکا 1996 کے بعد سے کسی گرینڈ سلیم کے سیمی فائنل میں پہنچنے والے پہلے جاپانی کھلاڑی بنی ہیں۔