ہندوستان اور بنگلہ دیش کے مابین فائنل مقابلہ آج

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 28-September-2018

دبئی،(آئی این ایس انڈیا) اب تک ٹورنامنٹ میں ناقابل تسخیر رہی ہے ہندوستانی کرکٹ ٹیم جمعہ کو یہاں ہونے والے ایشیا کپ فائنل میں کچھ اہم کھلاڑیوں کے زخمی ہونے سے کمزور ہوئی بنگلہ دیش کی ٹیم کو شکست دے کراپنی بادشاہت قائم رکھنے کی کوشش کرے گی۔بنگلہ دیش کو بھی کسی بھی سطح پر کم ترنہیں سمجھا جا سکتا ہے کیونکہ بدھ کو اس نے کچھ اہم کھلاڑیوں کی عدم موجودگی کے باوجود پاکستانی ٹیم کو شکست دے کر ہندوستان اور پاکستان کے درمیان خطابی مقابلے کا امکان ختم کر دیا تھا۔کاغذوں پر ہندوستان اب بھی ریکارڈ ساتویں بار ٹائٹل جیتنے کا مضبوط دعویدار ہے جبکہ بنگلہ دیش کو امید ہوگی کہ خطابی مقابلے میں تیسری بار قسمت اس کا ساتھ دے گا۔اوپنر تمیم اقبال ہاتھ میں فریکچر کی وجہ سے پہلے ہی باہر ہو گئے تھے اور اب آل راؤنڈر شکیب الحسن بھی انگلی کی چوٹ کی وجہ سے فائنل میں نہیں کھیل پائیں گے۔انہیں آپریشن کروانا پڑ سکتا ہے جس سے وہ زمبابوے کے خلاف 30 ستمبر سے ہونے والی گھریلو سیریز میں بھی نہیں کھیل پائیں گے۔ ہندوستان کے لیے حالانکہ یہ دوسرے طریقے کا امتحان ہے۔ اپنے بہترین بلے باز اور کپتان وراٹ کوہلی کے بغیر ایشیا کپ جیتنا اگلے سال ہونے والے ورلڈ کپ سے پہلے بڑی کامیابی ہوگی۔یہی نہیں اس سے ٹیم کا انگلینڈ کے ہاتھوں ٹیسٹ سیریز میں1-4سے ملی شکست کا درد بھی کم ہوگا۔افغانستان کے خلاف ٹائی پر ختم ہوئے سپر چار مقابلے میں پانچ کھلاڑیوں کو آرام دینے کے بعد ہندوستانی ٹیم فائنل میں مضبوط ٹیم کے ساتھ اترے گی۔کپتان روہت شرما اور شکھر دھون کی کامیاب سلامی جوڑی ٹاپ آرڈر میں واپسی کرے گی۔ تو جسپریت بمراہ، بھونیشور کمار اور چہل بولنگ کو مضبوطی فراہم کریںگے۔ اچھی شروعات پر کافی کچھ منحصر ہے اور روہت (269 رنز) اور دھون (327 رن) نے ٹورنامنٹ میں اب تک اپنا کردار اچھی طرح سے ادا کیا ہے۔ مڈل آرڈر ہندوستان کیلئے تھوڑا تشویشناک ہے۔امباتی رائیڈو نے تمام میچوں میں اچھی شروعات کی لیکن وہ لمبی اننگز نہیں کھیل پائے جبکہ کیدار جادھو اور مہندر سنگھ دھونی کو درمیان کے اوورز میں جدوجہد کرناپڑا۔دھونی کی بلے بازی میں جدوجہد سب سے بڑی تشویش ہے کیونکہ بعد میں بلے بازی کرنے پر سست وکٹ پر 240 سے زیادہ کا اسکور مشکل ہو سکتا ہے۔ ہندوستانی مڈل آرڈر کا امتحان صرف افغانستان کے خلاف میچ میں ہوا جس میں وہ نہیں چل پائے جبکہ کے ایل راہل اور رائیڈو نے پہلے وکٹ کے لئے سنچری شراکت کی تھی۔ دھونی سے دوبارہ بلے بازی میں اہم شراکت کی توقع ہے۔