ریاست

بیس لاکھ کا مطالبہ پورا نہ کر نے پر دوست نے ہی کیا دوست کا قتل

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 11-October-2018

قصبہ بیور ،مین پوری (حافظ محمد ذاکر )منگل کی رات کو قصبہ بیور کے درجہ ؍کے طا لب علم کو اغوا کر نے کے بعد قتل کر دیا گیا ،مکا ن ما لک اور دوست نے ہی اپنے دوست کا قتل اسوقت کردیا جب بیس لاکھ روپیہ کا مطالبہ پورا نہیں کیا گیا ،اس المناک حادثہ کے بعد قصبہ بیور میں کشیدگی بر قرار ہے ،اطلاعات کے مطابق قصبہ بیور کے شیو نگر کالونی کے باشندے سرب جیت کے مکان میں سر ویش یادو کرائے پر رہتے تھے،سرویش یادو بیورروڈ ویز ڈپو میں نیم سرکا ری ڈرائیور ہیں ،سرویش یادو کا ۱۲؍ سالہ بیٹا ابھشیک مین پوری میں واقع سینٹ تھامس اسکو ل میں درجہ ۷؍ کا طالب علم ہے ، ابھشیک کی دو ستی مکان مالک سربجیت کے بیٹے در جہ ۱۲؍ کے طالب علم ۱۸؍ سالہ شیو پرتاپ سے تھی ، منگل کی شام ۴؍ بجے ابھشیک ٹیوشن پڑ ھنے کیلئے قصبہ میں چلا گیا ،پھر دیر رات تک وہ واپس نہیں آیا ، شام سات بجے کے بعد اغوا کاروں نے ابھیشیک کے موبائل سے ہی ابھیشیک کے والد کو اغوا کئے جا نے کی اطلاع دی ،ساتھ ہی ساتھ ۲۰؍ لاکھ روپیہ کا مطالبہ بھی کیا،فون پر کہا کہ آپ کا بیٹا میرے قبضہ میں ہے ،آپ فوراً بیس لاکھ رو پیہ کا انتظام کریں ،اس ناگہانی خبر سن کر ابھیشیک کے والد نے پولس کو حالات سے آگاہ کرایا ،وا قعہ سے خوفزدہ، سریش یادو معہ اپنے اہلِ خانہ کے نے 9 بجے تھانے پہنچے اور سارے حالات سے پولس آگاہ کیا ،پولس نے اعلیٰ افسران کو مطلع کیا ، ایس پی اجے شنکر رائے نے کرائم برانچ کی ٹیم اور علاقائی پولس افسر پریانک جین کو موقع پر بھیج دیا ۔جب موبائل نمبر کو سرویلانس پر لگایا گیا تو لوکیشن کا علم ہوا ،سربجیت کے بیٹے نے ہی اپنے گھر سے فون کر کے روپیوں کا مطالبہ کیا تھا ، پولس نے سربجیت کو بیٹے کو حراست میں لیا اور سخت پونچھ تانچ کے بعد سچائی سامنے آگئی ،ملزم نے بتایا کہ وہ ابھیشیک کو بہا نے سے زیر تعمیر ایک مکان میں لے گیا۔

About the author

Taasir Newspaper