کھیل

جوالاگٹاکا ذہنی اذیت پہنچانے کا الزام

Profile photo of Taasir Newspaper
Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 11-October-2018

نئی دہلی، (یواین آئی) دنیا بھر میں چل رہے ‘ہیش ٹیگ می ٹو موومنٹ کا اثر ہندوستان میں بھی زور پکڑنے لگا ہے اور ٹی وی میں کام کرنے والی کئی معروف خواتین اور صحافیوں نے ذہنی اذیت دینے کی بات کھل کر بتائی ہے وہیں بیڈمنٹن کھلاڑی جوالا گٹا نے بھی ذہنی اذیت کی بات کہہ کر اپنے تلخ تجربے کا ذکر کیا ہے۔ بیڈمنٹن کھلاڑی جوالا نے ہمیشہ ہی عوامی طور پر اپنی بات کو بے خوف ہو کر سامنے رکھا ہے اور اب انہوں نے سلیکشن کے عمل پر ذہنی دباؤ کی بات کہی ہے۔خواتین کے ڈبلز کی کھلاڑی جوالا نے ٹوئٹر کے ذریعہ ذہنی اذیت پہنچانے کی کہانی بتاتے ہوئے کہا، “سال 2006 سے جب وہ شخص چیف بنا تو اس نے مجھے قومی چیمپئن ہونے کے باوجود قومی ٹیم سے باہر پھینک دیا۔”جوالا نے لکھا، “حال ہی کی بات ہے جب میں آر آئی او سے واپس آئی، اورمجھے دوبارہ قومی ٹیم سے باہر کر دیا گیا۔ یہ ایک بڑی وجہ ہے کہ میں نے کھیلنا بند کر دیا۔ “حیدرآباد کی جوالا گٹا کا کوچ پلیلا گوپی چند کے ساتھ بھی کافی تنازعہ رہا ہے اور انہوں نے عوامی طور پر گوپی چند پر امتیازی سلوک کا الزام عائد کیاتھا۔انہوں کہا تھا کہ گوپی چند ڈبلز کھلاڑیوں کے مقابلے سنگلز کے کھلاڑیوں پرزیادہ توجہ دیتے ہیں۔اس سے پہلے جوالا نے انہیں قومی ٹیم میں نظر انداز کئے جانے کا بھی الزام عائد کیا تاہم بیڈمنٹن کھلاڑی نے اپنے ٹویٹ میں گوپی چند کا نام نہیں لیا ہے۔گوپی چند قومی بیڈمنٹن کوچ ہیں اور سائنا نہوال، پی وی سندھو، كدامبي سری کانت اور پروپلي کشیپ جیسے کھلاڑیوں کی کامیابی میں ان کا اہم کردار تصور کیا جاتا ہے۔حالانکہ کچھ سال پہلے سائنا نہوال نے بھی گوپی چند پر کچھ کھلاڑیوں پر زیادہ توجہ دینے کا الزام عائد کرتے ہوئے ومل کمار کو اپنا نجی کوچ مقرر کر لیا تھا۔ اگرچہ سائنا نے گوپی چند کے ساتھ دوبارہ تعلقات بہتر کر لیے اور ان سے ٹریننگ لینی بھی شروع کردی تھی۔

About the author

Profile photo of Taasir Newspaper

Taasir Newspaper

Skip to toolbar