مرکزی حکومت غیرمقبول ہوگئی

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 06-October-2018

حیدرآباد۔(یواین آئی ) آندھرا پردیش کے وزیراعلی چندرا بابونائیڈو نے دعوی کیا ہے کہ مرکز کی موجودہ حکومت غیرمقبول ہوگئی ہے اور 2019میں عوام میں ایک متبادل طاقت ابھرے گی ۔ انہوں نے قومی سیاست پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ مرکز سے مایوس عوام اس کے متبادل کا انتخاب کرلیں گے۔ انہوں نے رفائل معاملت پر مرکزی حکومت پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ اس معاملت کی وجوہات بتانے کی ذمہ داری حکومت پر ہے ۔ اس سوال پر کہ آئندہ انتخابات میں ان کی پارٹی تلگودیشم کا کیا رول ہوگا تو انہوں نے کہا کہ ہمیں ملک کے مفاد میں کام کرنا ہوگا۔ انہوں نے ایندھن کی بڑھتی قیمتوں پر بھی مرکزی حکومت پر شدید نکتی چینی کی اور کہا کہ پٹرول کی قیمتوں پر قابو پانے کی مرکز کو کوئی پرواہ نہیں ہے۔ بینکوں سے عوام کا بھروسہ ختم ہوگیاہے۔ بینکوں کو دھوکہ دینے والے فرار ہوگئے ہیں۔ انہوں نے نوٹ بندی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس سے ملک کا ہر شہری متاثر ہوا۔مرکز کی جانب سے جی ایس ٹی پر بھی مناسب طور پر عمل نہیں کیا گیا۔ گزشتہ ساڑھے چار برسوں میں عام آدمی کو کوئی فائدہ نہیں پہنچایا گیا۔ انہوں نے اے پی تنظیم نو قانون کے وعدوں پر عمل نہ کرنے پر بھی این ڈی اے حکومت پر نکتہ چینی کی ۔ انہوں نے اے پی کو خصوصی درجہ کے مسئلہ پر کہا کہ مرکز نے اے پی کو خصوصی درجہ نہ دیتے ہوئے دھوکہ دیاہے۔ اس وقت کے وزیراعظم منموہن سنگھ نے اس وعدہ کیا تھا لیکن موجودہ حکومت نے اس وعدہ کو پورا نہیں کیا۔ انہوں نے اے پی کے نئے دارالحکومت کی تعمیر کے لئے فنڈس بھی نہ دینے پر مرکز کو نشانہ بنایا۔