پولس افسر و بیو پار منڈل کے کارکنوں کے درمیان تنازع ختم

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 09-October-2018

بھوگائوں ،مین پوری (حافظ محمد ذاکر ) نوجوان علاقائی پولس افسرپریانک جین و بیو پار منڈل کے درمیان غلط فہمیوں کو لیکر چل رہا تنازع اب ختم ہوگیا ۔واضح رہے گزشتہ کئی ماہ سے بیو پار منڈل و پولس افسر کے درمان تنازع چل رہا تھا ،پولس افسر پریانک جین نے ایک موبائل کی دوکان پر لوٹ کی واردات کو لیکر دکان پر لگے سی،سی،ٹی،وی فٹیج دیکھ نے کے دوران دوکان پر بیٹھے ایک سیل مین کے اوپر ہاتھ اٹھا دیا تھا ،سی،سی،ٹی،وی میں پولس افسر کا ہاتھ اٹھا قید ہو گیا تھا ،اس کے بعد دوکاندار نے اس سی،سی ، ٹی،وی ،فٹیج کو شوشل میڈیا واٹس ایپ و فیس بک پر اپلوڈ کر دیا تھا ،جس کی وجہ سے معاملہ طول پکڑ گیا تھا ،یہ بھی بتاتا چلوں دو ماہ قبل نا معلوم چورو ں نے کوتوالی بھوگائوں سے محض سو قدم کی دوری پر ،نگر پنچایت دفتر کے بالکل قریب ایک موبائل کی دوکان میں نقب لگا کر لاکھو روپیہ کی چوری کی واردات کو انجام دیا تھا ،اسی دوکان پر پیٹھے ایک سیلس مین کے ساتھ علاقائی پولس افسر نے بدا خلاقی کا مظاہرہ کیا تھا ،جس ویڈیووائرل ہو گیا تھا ،ابھی کچھ روز قبل بیو پار منڈل نے ایک محضر نامہ وزیر اعلیٰ کے نام نائب ضلع مجسٹریٹ کو پیش بھی کیا تھا،جس میں بیو پار منڈل نے واضح طور پر کہا تھا کہ اگر پولس افسر کے خلاف کار روا ئی نہ ہوئی تو دھرنا ومظاہرہ کریں گے ،محضر نامہ کے بعد آج تنازع ختم ہوگیا ۔آج تنازع اسو قت ختم ہوا جب بیو پار منڈل کے عہدیدار و دوکا ن مالک سر جیت راج پوت ،و انکے بھائی سنیل راج پوت کے ساتھ ایک خفیہ مقام پر گفتگو ہوئی ،تقریباً نصف گھنٹہ تک چلی گفتگو میں غلط فہمیوں کو در کیا گیا ،جس کی وجہ سے دوکاندار و پولس افسر کے ما بین تنازع پیدا ہو گیا تھا ،تنازع و غلط فہمیاں دور ہو نے کے بعد بیو پاریوں نے سی او پریانک جین کا شکریہ ادا کیا ،ساتھ ہی پولس افسر پریانک جین نے بھی بیو پاریوں کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے ہر طرح کی ممکنہ مدد کا بھروسہ دلا یا ۔