ہندستان ہندوستان

شہیدوں کے گائوں کو ترقی یافتہ بنائیںگے:رگھورداس

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 05-November-2018

رانچی،(معیزالدین خان) پورے ریاست کی غریبی ہمیں دور کرنا ہے۔ گاؤں چوپال کے ذریعہ سے آپ کی سوچ کو مثبت رخ میں تبدیل کرنا چاہتا ہوں۔ وقت کے ساتھ اس میں تبدیلی لازمی ہے نہیں تو ہم پیچھے چھوٹ جائیں گے۔ سوچ بدلنے سے ہی جھارکھنڈ بدلے گا۔نو جوان اپنے گاؤں کوبیدار کرنے تک جواب دیہی سنبھالیں۔ ایسا کام کریں تاکہ شہید بدھو بھگت کی طرح ہمیشہ لوگ آپ کویاد رکھیں۔ مذکورہ باتیں وزیر اعلیٰ رگھوورداس نے کہی۔ انہوں نے چاہوں کے سلاگائی میں منعقد گرام چوپال پروگرام سے خطاب کررہے تھے۔ رگھورداس نے کہا کہ آپ کی بیداری ہی آپ کے گاؤں کو صاف، صحت منداور نشہ سے پاک گاؤن بناسکتی ہے۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ آزادی کے بعد ملک کی بدعنوانی کے خلاف آواز بلند کرنے والے شہیدوں کو کسی نے یاد نہین کیا۔ لیکن موجودہ حکومت نے شہیدوں کے لئے ان کے گاؤں کو ترقی یافتہ بنانے کے لئے عہد کیا ہے۔ویر بدھو بھگت کے گاؤں آکر مجھے خوشی کے ساتھ میں فخر بھی محسوس کر رہا کہ آج آدرش گرام کے تحت پینے کاپانی فراہم منصوبہ کاافتتاح کررہا ہوں۔ یہ تو پہلے دور کا منصوبہ ہے۔ ایسے چار دیگر منصوبوں کا افتتاح جلد ہوگا۔ 49 کروڑ 30 لاکھ کی لاگت سے ویر بدھو بھگت کے گاؤں کو ترقی کے راہ میں لاکر آدرش گرام بنایاجائے گا۔ جہاں گاؤں کاایک ایک باشندہ بنیادی سہولتوں سے لیس ہوگا۔ رگھورداس نے بتایا کہ وزیر اعظم کی پہل پر رانچی واقع پرانے جیل کو 25 کروڑ کی لاگت سے موڈلائزڈ کیا جائے گا۔ جہاں برسا منڈا کامجسمہ قائم کی جائے گی۔ ساتھ ہی ملک کے لئے جان کے قربانی دینے والے شہیدوں سے متعلق جانکاری ملے گی تاکہ آنے والی نسل ان سے سبق حاصل کر ملک اور ریاست کی تعمیر میں اپناتعاون دے سکیں۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ بدھو بھگت کے گاؤں سمیت پورا جھارکھنڈ تعلیم یافتہ ہو اس کے لئے 15 نومبر کو 10 ہزار ٹیچرس کی بحالی نامہ سپرد کی جائے گی۔ تاکہ بچوں کو صحیح تعلیم دی جاسکے۔ اسکول جارہے بچوں کو دودھ مہیا کرائی جا سکے جس سے و ہ نقص تغذیہ سے پاک ہوسکے۔ وزیر اعلیٰ نے بتایا کہ خواتین قوت کواہمیں مضبوط کرنا ہے۔ آنے والے دنوں میں اسکولی بچوں کے لئے ڈریس مہیا کرائے گی۔ ہر سال 80 لاکھ ڈریس حکومت بچوں کو دیتی ہے۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ پالٹری فیڈریشن کی تشکیل سے پورے ریاست میں خواتین کو جوڑا جائے گا۔ ان کے خودمختاری کا راہ ہموار کی جائے گی۔ آدیباسی ترقی سمیتی میں بھی خواتین کو ترجیح دیتے ہوئے گاؤں کے ترقی کی ذمہ داری دی جائے گی۔

About the author

Taasir Newspaper