دنیا بھر سے

ہنگری اور پولینڈ سونا کیوں جمع کر رہے ہیں؟

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 06-November-2018

لندن،(پی ایس آئی)دو یورپی ممالک ہنگری اور پولینڈ اپنے سونے کے ذخائر میں اضافہ کر رہے ہیں۔ لیکن سوال یہ ہے کہ کیوں؟ کیا ڈالر زوال پذیر ہونے والا ہے، کوئی معاشی بحران سر اٹھا رہا ہے یا پھر سونا سستا ہے، اس لیے؟یورپی ملک پولینڈ نے گزشتہ دو عشروں کے دوران پہلی مرتبہ رواں برس گرمیوں میں اپنے سونے کے ذخائر میں اضافہ کیا۔ اس کی پیروی کرتے ہوئے ہنگری کے مرکزی بینک (ایم این بی) نے بھی اکتوبر میں سونا خریدتے ہوئے اپنے سونے کے ذخائر میں ایک ہزار فیصد کا اضافہ کیا۔ پہلے اس مشرقی یورپی ملک کے پاس تین اعشاریہ ایک ٹن سونا تھا، جو اب اکتیس اعشاریہ پانچ ٹن ہو گیا ہے۔کیا ہنگری اور پولینڈ اپنے ہاں معاشی صورتحال کے بارے میں پریشان ہیں؟ کیا وہ ڈالر کا استعمال کم کرنا چاہتے ہیں یا انہیں ممکنہ یورپی پابندیوں کا خدشہ ہے؟ ستمبر میں جرمنی کے مالیاتی ماکیویری گروپ کے مرکزی اسٹریٹیجسٹ نے لکھا تھا، ’’یہ سونے کی بہت بڑی مقدار نہیں ہے لیکن عمومی طور پر یورپ کے مرکزی بینک سونا بیچتے ہیں، خریدتے نہیں۔‘‘ہنگری کے سینٹرل بینک کا کہنا تھا کہ یہ سونا ’قومی دولت کی سکیورٹی میں اضافے کے لیے خریدا گیا ہے۔‘‘ پولینڈ کے نیشنل بینک نے دو ٹن سونا جولائی اور سات ٹن اگست میں خریدا تھا۔ اس طرح ایک سو سترہ ٹن سونے کے ساتھ گزشتہ پینتیس برسوں میں اس کے ذخائر اپنی بلند ترین سطح پر ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper