سیاست سیاست

پولیس خالی نہیں کراسکی تیجسوی یادوکا بنگلہ

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 06-November-2018

پٹنہ (یو این آئی) بہار اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر تیجسوی پرساد یادو کے راجدھانی پٹنہ کے سرکاری مکان کو آج خالی کرانے گئی پولیس کو اپنے مقصد میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔ یہاں پانچ دیش رتن مارگ پر واقع راشٹریہ جنتادل (آرجے ڈی) کے سنیئر لیڈر مسٹر یادو کی سرکاری رہائش گاہ کو خالی کرانے کیلئے کثیر تعداد میں پولیس کے ساتھ ہی جنرل ایڈمنسٹریشن کے افسران پہنچے۔ اپوزیشن لیڈر کے پٹنہ میں نہیں ہونے کی اطلاع کے بعد رہائش خالی کرائے جانے کی مخالفت میں پارٹی کے ممبران اسمبلی، ممبران کونسل اور کارکنان مسٹر یادو کی رہائش کے باہر دھرنا پر بیٹھ گئے۔ اس دوران حکومت مخالف نعرے بازی بھی کی گئی۔ رہائش خالی کرانے آئے افسران نے دھرنا پر بیٹھے آر جے ڈی کے ممبران اسمبلی کو حکومت کی جانب سے رہائش خالی کرائے جانے کا نوٹس دکھایا۔ انتظامی افسران کے نوٹس دکھائے جانے کے باوجود آر جے ڈی کے ممبران اسمبلی اپنے حامیوں کے ساتھ اپوزیشن لیڈر کے سرکاری مکان کے باہر دھرنا پر بیٹھے رہے۔ دن بھر کی گہماگہمی کے بعد مسٹر یادو کے وکیل نے انتظامی افسران کو رہائش سے متعلق میں پٹنہ ہائی کورٹ میں دائر کی گئی ایف آئی آرکو دکھایا۔ اسکے بعد ضلع انتظامیہ کے افسران نے رہائش خالی کرانے کی کاروائی روک دی۔آرجے ڈی کے ترجمان نے کہاکہ پارٹی کے ممبران اسمبلی اورممبران کونسل اپوزیشن لیڈر کے سرکاری مکان پانچ دیش رتن مارگ کو خالی کرانے کی مخالفت کر رہے ہیں۔ مکان سے متعلق معاملہ پٹنہ ہائی کورٹ میں چل رہاہے۔ انہوں نے کہاکہ ریاستی حکومت مکان کو خالی کرانے کی جلد بازی میں کیوں ہے۔ یہ سمجھ سے بعید ہے۔ واضح رہے کہ مسٹر یادو کو پانچ دیش رتن مارگ واقع سرکاری بنگلہ مہا گٹھ بندھن کی حکومت میں نائب وزیراعلیٰ بننے پر ریاستی حکومت کی جانب سے الاٹ کی گئی تھی۔ بعد میں جنتا دل یونائٹیڈ (جے ڈی یو) نے عظیم اتحاد سے الگ ہوکر بی جے پیسے ہاتھ ملاکر حکومت بنالی تھی۔ مسٹر یادو نائب وزیراعلیٰ کے عہدہ سے الگ ہونے کے بعد اس سرکاری مکان میں رہ رہے ہیں۔ جے ڈی یو اور بی جے پی اتحاد کی حکومت بننے کے بعد نائب وزیراعلیٰ سشیل کمار مودی کو یہ رہائش الاٹ کی گئی ہے۔ ریاستی حکومت نے اپوزیشن لیڈر کے لئے ایک پولو روڈ واقع سرکاری مکان الاٹ کی ہے جس میں مسٹر مودی رہ رہے ہیں۔

About the author

Taasir Newspaper