دنیا بھر سے

ایران کو جوہری ہتھیاروں کا حامل نہیں دیکھنا چاہتے

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 21-May-2019

واشنگٹن ( آئی این ایس انڈیا ) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ ہم یہ نہیں چاہتے کہ ایران جوہری ہتھیار حاصل کرے۔ امریکی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہ کہ ایران ایک طویل عرصے سے مسئلہ بنا ہوا ہے اور اوباما کا تہران کے ساتھ کیا جانے والا جوہری معاہدہ بھیانک تھا۔ٹرمپ نے اپنے بیان میں کہا کہ میں ایران کے ساتھ جنگ نہیں چاہتا مگر میں جوہری ایران یا ہمیں دھمکیاں دینے والا ایران بھی نہیں چاہتا۔ امریکی پابندیوں نے ایرانی معیشت پر تباہ کن اثرات مرتب کیے ہیں۔اس سے قبل امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اتوار کے روز خبردار کیا کہ اگرایران نے جنگ کا فیصلہ کیا تو یہ جنگ ایران کے باضابطہ اختتام کا ذریعہ ثابت ہوگی۔ انہوں نے ایران کو خبردار کیا کہ وہ دھمکیوں سے باز آئے اور دوبارہ امریکا کو نہ دھمکائے ورنہ اسے اس کی بھاری قیمت چکانا پڑے گی۔ ٹوئٹر پر پوسٹ کردہ ٹویٹ میں صدر ٹرمپ نے کہا کہ جنگ کا فیصلہ ایران کو کرنا ہے۔ اگر وہ جنگ کا آپشن اختیار کرتا ہے تو یہ آخری جنگ ہوگی جو ایرانی حکمراں نظام کے باضابطہ خاتمے کا ذریعہ بنے گی۔امریکی صدر کی طرف سے یہ دھمکی آمیز بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری جانب کل اتوار کو عراق کے دارالحکومت بغداد کے گرین زون میں ’کاتیوشا‘ میزائل سے حملہ کیا گیا۔ذرائع کے مطابق بغداد میں گرین زون میں امریکی سفارت خانے کے قریب میزائل گرنے کے بعد خطرے کے سائرن بجائے گئے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ گرین زون میں کاتیوشا میزائل کا ہدف وہاں پرموجود امریکی سفارت خانہ ہو سکتا ہے۔عراق میں امریکی سفارت خانے کے قریب میزائل حملے کا واقعہ ایک ایسے وقت میں پیش آیا ہے جب دوسری جانب امریکا اور ایران ایک دوسرے کے خلاف جنگ کے دہانے پر کھڑے ہیں۔ دونوں ملک ایک دوسرے سے دھمکی آمیز لہجے میں بات کرتے ہوئے ’سبق سکھانے‘ کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔ایران کی طرف سے امریکا کو دھمکانے کے بعد امریکی فوج کی بڑی تعداد، جنگی بحری بیڑہ اور لڑاکا طیارے بھی خلیجی ملکوں میں تعینات کردیے گئے ہیں۔ امریکی حکام کا کہنا ہے کہ جنگی تیاریوں کا مقصد ایران خطے میں اس کی حامی ملیشیاؤں اور پاسداران انقلاب کی جانب سے خطرات کا مقابلہ کرنا ہے۔

About the author

Taasir Newspaper