کھیل

انگلینڈاور بنگلہ دیش پر واپسی کا دباؤ

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 08-June-2019

کارڈف، (یو این آئی ) آئی سی سی ورلڈ کپ کی میزبان اور خطاب کی مضبوط دعویدار انگلینڈ اور ٹورنامنٹ میں بڑے الٹ پھیر کے ساتھ آغاز کرنے کے بعد چھپی رستم مانی جا رہی بنگلہ دیش اپنے پچھلے مقابلے ہار چکی ہیں اور ہفتہ کو آمنے سامنے ہوں گی جہاں دونوں کا مقصد واپسی کر ردھم حاصل کرنا ہوگی۔انگلینڈ کو اپنی مشکل پچوں کا ماہر مانا جا رہا ہے اور ٹورنامنٹ میں بھی وہ مضبوط دعویدار کے طور پر اتری ہیں، لیکن عالمی کپ سے پہلے مسلسل اپنے 11 ون ڈے مقابلے ہار چکی پاکستان جیسی کمزور ٹیم سے گزشتہ میچ میں 14 رن سے ہارنے کے بعد اس کی دعویداری پر سوال اٹھ رہے ہیں۔ آئی سی سی ون ڈے ورلڈ کپ کی تاریخ میں اپنے پہلے خطاب کے لئے لڑ رہی انگلش ٹیم پر آگے ٹورنامنٹ میں اپنی لے برقرار رکھنے کیلئے ہر حال میں جیت درج کرنے کا دباؤ رہے گا۔دوسری طرف جنوبی افریقہ جیسی مضبوط ٹیم کو گزشتہ میچ میں 21 رنز سے شکست دے کر سب کو چونکا نے والی بنگلہ دیشی ٹیم کو بھی گزشتہ میچ میں سخت جدوجہد کرنے کے باوجود نیوزی لینڈ سے دو وکٹوں سے شکست کھانی پڑی تھی اور اس کی بھی اپنی مہم کو آگے کامیابی سے بڑھانے کے کیلئے جیت درکار ہوگی۔ اگر وہ انگلینڈ جیسی مضبوط ٹیم کو شکست دے پاتی ہے تو سیمی فائنل کی راہ کچھ آسان ہو گی۔بنگلہ دیشی ٹیم کو اگرچہ اپنی غلطیوں کو بہتر بنانے کے ساتھ بہتر حکمت عملی سے اترنا ہوگا۔ اوپننگ بلے باز سومیہ سرکار ہر اننگز میں اچھی شروعات کے بعد جلد اپنا وکٹ گنوا دیتے ہیں جبکہ ان پر اور تمیم اقبال کی سلامی جوڑی پر اچھی شروعات دلانے کی ذمہ داری ہے۔ اگرچہ شکیب الحسن اچھی فارم میں ہیں اور بلے اور گیند سے مفید ثابت ہو رہے ہیں۔مڈل آرڈر میں شکیب ، مشفق الرحیم اور محموداللہ تجربہ کار کھلاڑی ہیں اور مشکل حالات میں تحمل کے ساتھ کھیلنے میں اہل ہیں ۔ انگلینڈ کو سال 2015 میں الٹ پھیر کر چکی بنگلہ دیشی ٹیم کی کوشش ایک بار پھر اسی کارکردگی کو دہرانے کی ہو گی۔ اگرچہ بلے بازوں کے لیے ضروری ہو گا کہ وہ بہتر اسکور کر مخالف ٹیم پر دباؤ بنائیں۔ گزشتہ میچ میں وہ مشکل سے 244 کے اسکور تک پہنچی تھی جس میں اکیلے شکیب ہی 64 رن کی نصف سنچری اننگز کھیل سکے تھے۔ گیند بازوں میں ٹیم ایک اضافی فاسٹ بولر کو اتار سکتی ہے۔ اس کے پاس ابو زید ، روبیل حسین جیسے اچھے فاسٹ بولر ہیں۔انگلش ٹیم نے پاکستان کے خلاف میچ میں خراب فیلڈنگ کی وجہ سے میچ گنوایا تھا، خاص طور پر جانی بيرسٹو نے کافی مایوس کیا۔ ٹیم کے گیند بازوں نے مہنگی گیند بازی کرتے ہوئے کافی رن لٹايے۔ تجربہ کار معین علی اور چوٹ کے بعد اس میچ میں شامل کئے گئے مارک ووڈ کفایتی گیند بازی کر کل پانچ وکٹ لے کر سب سے کامیاب رہے تھے لیکن عادل راشد پانچ اوورز میں 43 رن لٹار کافی مہنگے رہے۔جنوبی افریقہ کے خلاف عالمی کپ کے پہلے مقابلے میں ہر شعبہ میں حیرت انگیز کھیل دکھانے کے اور 104 رن کے بڑے فرق سے جیت درج کرنے کے بعد انگلینڈ اگلے میچ میں تال سے بھٹکی ہوئی لگی۔ اگرچہ بلے بازوں نے ضرور بڑے ہدف کا تعاقب کرنے کا جذبہ دکھایا اور جو روٹ 107 رنز اور جوس بٹلر 103 رنز کی سنچری اننگز کھیل کر کامیاب رہے۔ لیکن اس کی فیلڈنگ انتہائی خراب رہی اور بنگلہ دیش کے خلاف اسے اس شعبےمیں سب سے زیادہ سدھار کرنا ہوگا۔

About the author

Taasir Newspaper