این آر سی سی، اے اے ہمارا حق رائے دہندگی چھیننے کا ذریعہ: کنہیا کمار

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 17-Jan-2020

مشرقی چمپارن ( عاقب چشتی)ملک کی باگ ڈور ایسے افراد کے ہاتھ میں ہے ڈور جو آئین اور جمہوریت کے پرانے دشمن ہیں اور ملک نہایت خطرناک دور سے گزر رہا ہے ملک کی امن و سلامتی خطرے میں ہے ملک کی اقتصادی،معاشی،بے روزگاری گزشتہ 45 سالوں میں سب سے بدتر ہو گئی ہے سرکاری ملکیت دھڑلے سے فروخت کی جارہی ہے سرکاری شعبے ختم کیے جارہے ہیں روزگار کے مواقع ختم ہوگئے ہیں تعلیمی ادارے،سی بی آئی عدالت عظمیٰ کا وجود مٹانے کی کوشش میں مرکزی حکومت مصروف ہے ملک کی سب سے معتبر یونیورسٹی آر ایس ایس کے غنڈوں کے نشانے پر ہے این آر سیسی اے اے ایک معمہ ہے اور کسان مزدور،دلت مہادلت،اقلیت سے حق رائے دہندگی چھیننے کا ذریعہ ہے آج آسام این آر سی کی وجہ سے سلگ رہا ہے اور اسی راستے سے ملک کو دوبارہ غلامی کی طرف لے جانے کا خواب مرکزی حکومت دیکھ رہی جس کو ہم کبھی شرمندۃ تعبیر ہونے نہیں دینگے مذکورہ باتیں کیسریا مڈل اسکول میں منعقدہ کامریڈ پتامبر سنگھ کی 97 ویں یوم ولادت تقریب سے خطاب کرتے ہوئے نوجوانوں کے ہردلعزیز لیڈر کنہیا کمار نے کہی اور مزید بتایا کہ نوٹ بندی کے ذریعے ملک کی دولت کو دوسرے ممالک میں ٹرانسفر کیا گیا اور مودی کے پارٹنر کئی ہزار کروڑ روپے غبن کرکے لندن پہنچ گئے دفعہ 370 ہٹاکر ملک میں آتنکواد کو بڑھاوا دیا گیا رام مندر بابری مسجد کا فیصلہ کراکے عدالت کی آبرو لوٹی گئی زعفرانی دہشت گردی کو آزادی دی گئی اور اب این آر سی سی اے اے کا ہوا کھڑا کرکے مذہبی تفریق پیدا کرکے ہمارے وجود کو تباہی کے دہانے پر لا کھڑا کیا ہے مرکزی حکومت اپنی ناکامیوں کو چھپانے اور ہماری قوت گویائی چھیننے کے لیے دھرم مذہب کی سیاست کررہی ہے ملک کی عوام دنیا کے سب سے بڑے جھوٹے وزیر اعظم کے من کی بات سن کر اوب گئی ہے اور ان کے اندر بیداری آگئی ہے اب ان کو گمراہ کرنا نہایت مشکل ترین امر ہے کوئی بھی شعبہ رشوت خوری سے پاک نہیں ہے ہرجگہ نذرانے کی ضرورت ہے ایک طرف حکومت خواتین کی تعلیم و ترقی کی بات کرتی ہے تو دوسری طرف جو لوگ عصمت سے کھلواڑ کرتے ہیں انہیں رکن اسمبلی بنادیا جاتا ہے اور یہی وجہ ہے بی جے پی میں سب سے زیادہ مجرم افراد لیڈر بنے ہوئے ہیں اور دو بہروپیے کے حوالے پورا ملک ہے جس کشمیر کی سلامتی کا حوالہ دیکر وہاں سے دفعہ 370 ہٹایا گیا اس کشمیر کی حالت یہ ہے کہ اب ڈی سی پی اپنی گاڑی سے 12 لاکھ روپے کے عوض دہشتگردوں کو دہلی پہنچا رہا ہے کسان مزدور بے روگار نوجوان پریشان ہیں پورا ملک اب سڑکوں پر اتر آیا ہے مودی کی چالبازی اب کام نہیں آئے گی کیونکہ ہمارے آباء و اجداد لڑے تھے گوروں سے اور ہم لڑرہے ہیں چوروں سے اس ملک میں دھرم مذہب کی سیاست ہم نہیں چلنے دینگے آج سبھی سرکاری اسکولوں کی تعلیمی حالت اس قدر خراب کر دیا گیا ہے کہ غریب مزدور کسان کے بچے تعلیم حاصل نہیں کرسکیں اور جب سرکاری اسکولوں کی حالت سدھر جائیگی تو پرائیویٹ اسکول کا بزنس کیسے چلے گا اور سرکاری اسپتالوں کا نظام درست ہوجائے گا تو پرائیویٹ نرسنگ ہوم کیسے غریبوں کو لوٹینگے اور کامریڈ پتامبر سنگھ کی زندگی پر تفصیلی روشنی ڈالی۔ان کے علاوہ بھارتیہ کمیونسٹ پارٹی،اے آئی ایس ایف،بھیم آرمی کے لیڈران نے خطاب کیا ۔اس موقع سے راجندر سنگھ،محمد ادریس،منصور عالم،لال بابو،کنو سنگھ،شالنی مشرا،ستیندر مشرا سمیت ہزاروں افراد موجود تھے۔