سیاست سیاست

دہلی اسمبلی انتخابات2020:کجریوال کے سامنے گزشتہ جیت کی تاریخ دہرانے کا چیلنج

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 13-Jan-2020

نئی دہلی،(یواین آئی) اگلے ماہ ہونے والے دہلی اسمبلی انتخابات میں عام آدمی پارٹی (آپ) کے قومی کنوینر اور وزیر اعلی اروند کجریوال کے سامنے اپنا سب سے مضبوط قلعہ بچانے کا چیلنج ہے۔گزشتہ اسمبلی انتخابات میں دہلی اسمبلی کی 70 میں سے 67 نشستیں جیتنے والے مسٹر کجریوال کا جادو اس وقت چلے گا یا نہیں اس پر پورے ملک کی نگاہیں ہیں۔ مسٹر کجریوال اپنے پانچ سال کی مدت کے دوران خاص طور سے صحت اور تعلیم کے شعبوں میں کئے گئے کاموں کو گناتے ہوئے اس بار بھی پورے اعتماد میں ہیں جبکہ سیاسی پنڈتوں کا بھی خیال ہے کہ گزشتہ کرشمہ کی طرح بھی اس سال وہ بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرسکتے ہیں۔سال 2013 کے دہلی اسمبلی انتخابات سے کچھ وقت پہلے ہی ’آپ‘ کی تشکیل ہوئی تھی اور اس انتخابات میں دہلی میں پہلی بار سہ رخی مقابلہ ہواجس میں 15 سال سے اقتدار پر قابض کانگریس 70 میں سے صرف آٹھ سیٹیں جیت پائی جبکہ بھارتیہ جنتا پارٹی ( بی جے پی) حکومت بنانے سے صرف چار قدم دور یعنی 32 سیٹوں پر پھنس گئی۔’آپ‘کو 28 سیٹیں ملیں اور باقی دو دیگر کے کھاتے میں گئیں۔بی جے پی کو اقتدار سے دور رکھنے کی کوشش میں کانگریس نے ’آپ‘ کو حمایت دی اور مسٹر کجریوال نے حکومت بنائی۔لوک پال کو لے کر دونوں پارٹیوں کے درمیان ٹھن گئی اور مسٹر کجریوال نے 49 دن پرانی حکومت سے استعفی دے دیا۔ اس کے بعد دہلی میں صدر راج لگا اور فروری 2015 میں ’آپ‘نے تمام سیاسی پنڈتوں کے اندازوں کو جھٹلاتے ہوئے 70 میں سے 67 سیٹیں جیتیں۔ بی جے پی تین پر سمٹ گئی جبکہ کانگریس کی جھولی مکمل طور خالی رہ گئی۔دہلی میں 2015 میں ’آپ کو ملی زبردست کامیابی کے وقت مسٹر کجریوال کے ساتھ کئی بڑے لیڈر تھے مگر اقتدار میں آنے کے بعد وہ ایک ایک کرکے کنارے کر دئیے گئے۔ ان میں یوگیندر یادو، پرشانت بھوشن اور آنند کمار سب سے اہم تھے۔

About the author

Taasir Newspaper