ریاست

مرکز ی حکومت سیاہ قانون لاکر بے نقاب ہوچکی ہے:پردیپ یادو

Written by Taasir Newspaper

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 14-Jan-2020

سیوان :(راجیش کمار )سنودیدھان بچائو سنگھرش سمیتی کے زیر اہتمام سی اے اے ، این پی آر اور این آر سی کے خلاف سیوان کے دانشوران نے 8ویں دن دھرنا پر جمے رہے ۔ جو سیوان کے تاریخ میں پہلی دفعہ کیا جارہا ہے ۔ دھرنا سے خطاب کرتے ہوئے بایاں محاذ کے لیڈر پردیپ یادو نے کہا کہ یہ تانا شاہ مرکزی حکومت سیاہ قانون تو لائی ہےلیکن اس کے پیچھے این پی آر کے راستے این آر سی کرنے کی تیاری کر رہے ہیں ۔جس کا ایک ہی مقصد ہے کہ جو ان کے ووٹر نہیں ہیں ان کے ووٹ ڈالنے کے حقوق کوچھین لیناچاہتے ہیں ۔ کیونکہ این آر سی میں جو غریب اور پسماندہ طبقہ اپنے دستاویز جمع نہیں کرپائیں گے تو ان سے شہریت لے لی جائے گی ۔ ان کی نوکر ی لے لی جائے گی ۔ شہریت قانون کافائدہ صرف بھاجپا کے ووٹروں کو ہی دیا جائے گا ۔ پورا ملک اس سازش کو سمجھ چکا ہے ۔ اور یہ بے نقاب ہوچکے ہیں ۔ بھیم آر می کے ضلع صدر دیپک سمراٹ نے اپنے خطاب میں واضح طور پر کہا کہ اب حکومت ہل رہی ہے ۔ اور مظاہر ہ پورے ملک میں جاری ہے ۔ ہندوستان کے لوگوں نے اچھے دنوں کے چکر میں اس حکومت کو ووٹ ڈالا تھا لیکن یہ حکومت اس طرح کے دن دکھائے کہ ملک کے عوام کو انگریزوں کے وقت کا دن یاد آگیا ۔ اب ملک کی عوام ان سے نجات پانا چاہتی ہے ۔ ایڈوکیٹ شہزاد غنی نے دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جو بھی دستاویز عوام کے پاس دستیاب ہے ان کے درمیان اتنی غلطی ہےکہ دستاویز ہونے کے باوجود این آر سی میں ایک بہت بڑی آبادی جو کروڑوں میں ہوگی وہ اپنی شہریت ثابت نہیں کر پائے گی ۔ اور حکومت کو آسام سے سبق لینا چاہئے ۔ جہا ں پر یہ پورا پروگرام ناکام ہوچکا ہے ۔

About the author

Taasir Newspaper