اپنی ذمہ داری بحسن و خوبی انجام دینا عبادت: ڈاکٹر محمد اسلم پرویز

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 05-Feb-2020

حیدرآباد (پریس نوٹ) مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کے دو غیر تدریسی اراکین محترمہ سیدہ شہناز رضوی( سینئر ریسرچ اسسٹنٹ) اور محترمہ ملکہ (او اے ) کی وداعی تقریب جمعہ کو سی پی ڈی یو ایم ٹی آڈیٹوریم میں منعقد کی گئی۔ اس کا اہتمام مانو ایمپلائز ویلفیئر اسوسی ایشن (میوا) کے زیر اہتمام کیا گیا ۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وائس چا نسلر ڈاکٹر محمد اسلم پرویز نے کہا کہ ہم سب سرو س میں ہیں اور سروس کے معنی خدمت کے ہیں ۔ یعنی ہمیں لوگوں کی خدمت کرنی ہے۔ ہما ر ے ذمہ جو کام ہو اسے بحسن و خوبی ادا کرنا عباد ت ہے۔ اللہ کے ہر حکم کی تکمیل عبادت ہے اور لوگوں کی خدمت کرنا بھی اللہ کے احکامات میں شامل ہے۔ انہوں نے سبکدو ش ہو رہی دونوں اراکین کے مستقبل کیلئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ محترمہ سیدہ شہناز رضوی نے اپنے خطاب میں میوا کے اراکین کا شکریہ ادا کیا اور اپنی تعلیم اور کیریئر کے متعلق بتایا۔ محترمہ ملکہ نے بھی سب کا شکریہ ادا کیا۔ پروفیسر ایس ایم رحمت اللہ، رجسٹرارانچارج نے دونوں کی خدمات کی ستائش کی۔ پروفیسر پی فضل الرحمن، ڈائرکٹر ایچ آر ڈی سی نے بتایا کہ محترمہ ملکہ یونیورسٹی کی پہلی خاتون ملازم ہیں اور انہوں نے انتہائی محنت و لگن سے اپنی ذمہ داریاں نبھائیں۔ صدر میوا ، شیخ محی الدین نے سبکدوش ہورہیں اراکین سے نیک خواہشا ت کا اظہار کیا۔ جناب شیخ احمد، یو ڈی سی نے پروفیسر ایچ خدیجہ بیگم،سابق صدر شعبۂ تعلیم و تربیت اور دیگر اسٹاف اراکین اور طلبہ کے پیامات جو خصو صی طور پر محترمہ ملکہ کیلئے روانہ کیے گئے تھے پڑھ کر سنائے۔ ڈاکٹر محمد مبشر احمد، اسسٹنٹ رجسٹرار، ای آر II، عبدالرشید شیخ، اسسٹنٹ رجسٹرار، تمیم الدین خواجہ، جنرل سکریٹری ، میوا، سید یوسف رضوی، آرگنائزنگ سکریٹری میوا نے بھی مخاطب کیا۔ اس موقع پر ایم جی گنا شیکھرن ، فینانس آفیسر نے سبکدوش ملازمین کو گر یچوٹی کے چیک حوا لے کیے۔ وائس چا نسلر ڈاکٹر محمد داسلم پرویز اور میوا کی جانب سے دونوں ملازمین کی گلپوشی، شال پوشی اور یادگاری تحائف بھی پیش کیے گئے۔ محمد اعجاز کی قرأت کلام پاک و ترجمہ سے پروگرام کا آغاز ہوا۔ اس موقع پر شہہ نشین پر میوا کے اراکین محمد امتیا ز، نائب صدر ایم اے نواز، جوائنٹ سکر یٹر ی؛محمد سلیم، سکریٹری رزاق شریف، خازن؛ محمد فخرِعالم، رکن اور جناب محمد مجیب خان، رکن موجود تھے۔