کالے قانون کے خلاف چندنباڑہ سے ہزاروں خواتین نے ڈھاکہ پہنچ کراحتجاج کیا

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 12-Feb-2020

موتیہاری(نمائندہ)قومی شہریت ترمیمی قانون کے خلاف ہفتوں سے ضلع کے مختلف مقامات پرچل رہے احتجاج اوردھرنے میں روربروزشدت آرہی ہے۔ڈھاکہ میں پرانے پڑول پمپ کے نزدیک جاری احتجاج اوردھرنے میں چندنبارہ پنچایت کے ہزاروں مردوخواتین نے شرکت کرکالے قانون کی مخالفت کی۔اس دوران سبھی خواتین اپنے ہاتھ میں پلے کارڈلے رکھیں تھیں۔جس پہ لکھاتھانواین آرسی،نوسی اے اے اورنواین پی آرہواتھا۔اس غیرمعینہ مدت دھرنے کے احتجاج کا آغاز قومی ترانہ کے ساتھ کیاگیاجسے لڑکیوں نے پیش کیا اور آئین کی تجویز پڑھی گئی ۔انقلابی نعرے بھی لگائے گئے ۔آج کے دھرنے کی صدارت ریٹائرڈ استاد نیازاور راجیش کمار رام نے کی۔ھرنا سے خطاب کرتے ہوئے بی ایچ یو کی طالبہ کلیان سوارپ نے کہا کہ آج بی جے پی حکومت کی آڑ میں آر ایس ایس آئین کو تبدیل کرنے کی پوری کوشش کر رہی ہے ، لیکن ہم آئین سے محبت کرنے والوں کے ساتھ ایسا نہیں ہونے دیں گے اور اپنے آئین کو بچانے کے لئے قطرہ قربان کردے گا۔ دھرنے کی صدارت کرنے والے نیاز صاحب نے کہا کہ آج حکومت لوگوں کو دھوکہ دے رہی ہے کہ سی اے اے شہریت دینے کا قانون ہے لیکن ہمیں سی آر اے کو این آر سی سے جوڑ کر دیکھنے کی ضرورت ہے کیونکہ بی جے پی کے منشور میں لکھا ہے کہ وہ پورے ملک میں این آر سی لائیں گے اور امت شاہ پارلیمنٹ میں یہ باتیں کررہے ہیں ، آج نئے کالم نے این پی آر میں شامل کیا ہے۔ ہم سی اے اے کی واپسی کے تک دھرنا دیں گے۔ جبکہ ڈھاکہ جامع مسجد کے امام نذرالمبین نے ، ہندو مسلم اتحاد ، گنگا جمنی اور ملک میں باہمی بھائی چارہ پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ آج حکومت ملک کوبربادکے دہانے پرکھڑاکردیاہے،ایسے میں امن پسندطبقہ کے اوپرذمہ داری زیادہ عائد ہوجاتی ہے کہ وہ خواب غفلت سے بیدارہوکرآئین کوبچانے کے لئے نکلے اورسی اے اے ،این آرسی اوراین پی آرکوواپس لینے کے لئے دبائوڈالاجائے۔وہیں مولاناشمعون مدنی نے کہاکہ ہماراملک پوری دنیاکے اندراپنی ایک الگ تہذیب ثقافت اورمختلف دھرموںکے لئے جاناجاتاہے۔موجودہ سرکارنے جس طرح آئین میں ترمیم کرکے مسلمانوں کوباہرکیاہے وہ سیکولرملک کے مزاج کے لئے خلاف ہے۔وہیں مولاناابوالحیات سلفی نے کہاملک کی آزادمی میں سبھی مذہب کے لوگوں نے آپس میں متحدہوکرانگریزوںسے آزادی دلائی،تب جاکرملک آزادہوا،اس وقت بھی آرایس ایس کے لئے انگریزوںکی وفاداری کررہے تھے ۔ان کے علاوہ موقع سے این آرسی اورموجودہ حالات پرشاعرچمپارن ظفرحبیبی نے نعت پیش کیا، عالیہ صحب ، عافیہ اظہار ، شگفتہ کلیم ، سنبھل مظہری ،تبسم فیاض، سعدیہ اخلاق ،سمیہ فیاض،مریم شکیل،مہاشکیل وغیرہ شامل ہیں۔موقع پرہزاروں خواتین اورمردحضرات موجودتھے۔