قانون فیکلٹی کے زیر اہتمام تحقیق کے طریقہ ہائے کار پر تین روزہ ورکشاپ کا آغاز

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 05-March-2020

علی گڑھ، (پریس ریلیز) علی گڑھ مسلم یونیورسٹی (اے ایم یو) کی قانون فیکلٹی کے زیر اہتمام تحقیق کے طریق ہائے کار پر بدھ کو تین روزہ ورکشاپ کا آغاز ہوا۔قانون فیکلٹی کے موٹ کورٹ ہال میں افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے جواہر لعل نہرو میڈیکل کالج کے شعبۂ امراض خواتین کی سربراہ پروفیسر تمکین ربّانی نے طب اور قانون کے رشتوں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہاکہ گھریلو تشدد، جنسی تشدد اور مصنوعی زچگی ٹکنالوجی وغیرہ کے معاملے ڈاکٹروں کے سامنے آتے رہتے ہیں اور انھیں اس کی میڈیکو لیگل رپورٹ تیار کرنی ہوتی ہے جو عدالت میں زیر سماعت مقدما ت میں کافی اہم ہوتی ہے۔ انھوں نے کہاکہ ریسرچ میتھڈولوجی ، طبی تعلیم و تحقیق کا بھی ایک حصہ ہے اور انڈرگر یجو یٹ سطح پر اس کی تدریس ہوتی ہے۔ پروفیسر تمکین ربانی نے کہاکہ تحقیق اوریجنل ہونی چاہئے کیونکہ اس کا مقصد حقائق کی تلاش، نئے علم میں اضافہ کرنا اور انسانیت کو فائدہ پہنچانا ہے۔ انھوں نے فیکلٹی کی لائبریری اور دیگر سہولیات کی ستائش کی۔ تہذیب الاخلاق کے ایڈیٹر اور سنی دینیات کے سینئر استاد پروفیسر سعود عالم قاسمی نے کہاکہ عدالتوں کا دنیا میں اعلیٰ مقام ہے۔ انھوں نے کہاکہ کسی بھی شعبہ میں تحقیق کی بہت اہمیت ہوتی ہے اور سماج کی ترقی بھی اسی سے ہوتی ہے کیو نکہ اعداد و شمار اور تحقیقی نتائج پالیسی سازی میں کام آتے ہیں۔ ورکشاپ کے ڈائرکٹر اور قانون فیکلٹی کے ڈین پروفیسر شکیل صمدانی نے کہاکہ کسی بھی اعلیٰ تعلیمی ادارے کی شنا خت وہاں ہونے والی اعلیٰ معیاری تحقیق سے قائم ہوتی ہے۔ انھوں نے کہاکہ اے ایم یو میں گزشتہ کئی برسوں سے تحقیق پر بہت توجہ دی جارہی ہے اور قانون فیکلٹی میں پہلی بار ایل ایل ایم اور پی ایچ ڈی طلبہ کی درخواست پر یہ ورکشاپ منعقد ہورہی ہے جس میں اترپردیش سمیت تین ریاستوں سے شرکاء حصہ لے رہے ہیں ۔ افتتاحی اجلا س کی صدارت کرتے ہوئے منگلایتن یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر کے وی ایس ایم کرشنا نے کہاکہ تحقیق با مقصد ہونی چاہئے۔ انھوں نے کہاکہ تحقیق سے برآمد ہونے والے نتائج انسانی بہبود کیلئے ہوتے ہیں ، چنانچہ تحقیق کرنے والوں کی ذمہ داری اور بھی بڑھ جاتی ہے۔ کورس کوآرڈنیٹر پروفیسر ظفر محمود نعمانی نے ور کشا پ کا اجمالی خاکہ پیش کیا، جب کہ پروفیسر ظہیرالدین نے اظہار تشکر کیا۔ افتتا حی اجلاس کے بعد شعبۂ سیاسیات کے پروفیسر محب الحق اور الیکٹر یکل انجینئرنگ شعبہ کے ڈاکٹر محمد ریحا ن نے خطبہ دیا۔ افتتاحی اجلا س میں پرو فیسر آئی اے خاں، پروفیسر حشمت علی خاں، پروفیسر بدر عالم، اسسٹنٹ کورس کوآرڈنیٹر ڈاکٹر تبسم چودھری، ڈاکٹر علی نواز زیدی، ڈاکٹر زیبا عظمت، لاء سوسائٹی کے سکریٹری عبداللہ صمدانی، موٹ کورٹ سکریٹری کا شف سلطان وغیرہ موجود تھے۔