ملک کے نوجوانوں کو اچھی تعلیم اور روزگار کے مواقع فراہم کیے جائیں: للت کمار سنگھ

Taasir Urdu News Network | Uploaded on 06-March-2020

مدھوبنی،(شرف الدین تیمی)سی اے اے، این آر سی اور این پی آر کی مخالفت میں بھارتیہ مِتر پارٹی کے کارکنان نے مدھوبنی کلکٹریٹ میں مظاہر کر حکومت سے اس کالے قانون کی واپسی کی مانگ کی۔نمائندہ سے بات کرتے ہوئے بھارتیہ متر پارٹی کے بہار صدر للت کمار سنگھ نے کہا کہ ایسی حکومت ہم نے ملک میں پہلی بار دیکھا ہے جس نے مذہب کی بنیاد پر قانون لا کر پورے ملک میں نفرت کو عروج بخشا ہے اور محبت وبھائ چارہ کی فضا کو مکدر کر کے رکھ دیا ہے۔مزید انہوں نے یہ بات بھی کہی کہ یہ لڑائ اس وقت تک جاری رہے گی جب تک کہ ہٹلر شاہی صفت کے مالک حکمراں اس قانون کی واپسی کا اعلان نہ کر دیں۔ طلبہ یونین کے ضلع صدر عبدالعلام نے کہا کہ بھارتیہ مِتر پارٹی کے اس احتجاج کا بنیادی مقصد سرکار کے ذریعہ لائے گیے کالے قانون کی مخالفت اور ملک و صوبے میں بڑھتی ہوئ بے روزگاری کے خاتمے سرکاری اسکولوں میں تعلیم کے گرتے میعار کو بلند کرنے اور کسان کی دبتی ہوئ آواز کو حکومت تک پہونچانا ہے۔مزید انہوں نے کہا ہے کہ ہماری پارٹی کے قومی صدر دھنیشور مہتو کی منشا یہی ہے کہ ہمارے ملک اور صوبے میں روزگار کے مواقع فراہم کیے جائیں، تعلیمی معیار کو بلند کیا جائے کیوں کہ کوئ بھی ملک یا صوبہ اچھی تعلیم کے بغیر ترقی نہیں کر سکتا۔مزید یہ بات بھی کہی کہ ملک میں جب سے یہ سرکار آئ ہے ہر سو نفرت کا بول بالا ہے، یہی وجہ ہے کہ آئے دن دنگے ہو رہے ہیں اور اس دنگے کا شکار بے چارے معصوم اور غریب طبقے کے لوگ ہو رہے ہیں، ضرورت اس بات کی ہے کہ پورا ملک متحد ہو کر نفرت کے ان پجاریوں کے خلاف آواز بلند کریں اور ملک کی گنگا جمنی تہذیب کو پروان چڑھانے اور اس کی شاخ کو بچانے میں ایک دوسرے کا تعاون کریں۔